نروال تا پانامہ چوک سڑک کی ناگفتہ بہہ حالت

جموں//شہرکے وسط میں واقع متعددمقامات کی سڑکوںپر ہوئے گڈھوںاوران میں بھرے کیچڑ کی وجہ سے لوگوں کا جو حال ہوتا ہے اسکا تو خدا ہی نگہبان ہے۔متعلقہ انتظامیہ خاموش تماشائی بنی ہوئی ہے جس کے سبب جہاں ایک طرف عام لوگوں کوسخت پریشانیوں کاسامناکرناپڑتاہے وہیں دوسری طرف محکمہ تعمیرات عامہ کی کارکردگی پربھی کئی طریقہ کے سوالا ت کھڑے ہوتے ہیں۔ تفصیلات کے مطابق جموں نروال منڈی جو کہ شہر کے بیچ ہے اس کی حالت بہت ہی خستہ ہے جس کے سبب وہاں سے گذرنے والے عام لوگوں اور گاڑیوں کومشکلات کاسامناکرناپڑتاہے۔اس سڑک سے کافی موٹر سائیکل ، سکوٹر،ٹرک ،بس اور دیگر گاڑیوںکا بھی گذر ہوتا ہے یہاں تک کہ نروال چوک سے پانامہ چوک آنے والی سڑک کی بھی حالت بہت خستہ ہو گئی ہے۔کشمیرعظمیٰ سے بات کرتے ہوئے یہاں سے گذرنے والے متعددلوگوں نے بتایاکہ یہاں سے لوگوں کا نکلنا تو دور گاڑیوں کا نکلنا بھی بے حد مشکل ہو گیا ہے۔سڑک پر اتنے گڈھے بھرے پڑے ہیں کہ کہنے کی بات نہیں۔یہاں سے گذرنے والے لوگوں کے کپڑے بھی خراب ہو جاتے ہیں۔وہیں دوسری طرف گاڑیوں کو نکلنے میں پریشانی بھی ہوتی ہے۔کئی بار لوگوں کی راستہ خراب ہونے کی وجہ سے گاڑی پھسل جاتی ہے اور کئی لوگ چوٹ کھا بیٹھتے ہیں۔لوگوں نے مزیدکہاکہ یہاں سڑک پر بے شمار گاڑیاں تو آتی ہیں ساتھ ساتھ یہاں پر آئے دن جام بھی لگا رہتے ہے جس کے سبب لوگوں کو ان مشکلات سے نکلنا مشکل ہو گیا ہے۔ایسا نہیں کہ یہ بات کسی کو معلوم نہیں ہے بلکہ وہاں کے لوگ اس بات کو بخوبی جانتے ہیں۔ایک مسافر نے کہا کہ پہلے سے ہی سڑک پر گڈھے ہیں جس کی وجہ سے انہیں یہاں سے نکلنے میں ہر روز پریشانی ہوتی ہے ۔نہ جانے کب یہ گڈھے بھرے جائیں گے اور لوگوں کے اچھے دن آئیں گے۔جام میں پھنسنے سے سامنے یا پیچھے سے آنے والی گاڑیاںہارن بجاتی ہیں اور سینکڑوں ہارن کی آوازوں سے صوتی آلودگی کی وجہ سے عام آدمی تنگ ہو جاتا ہے ۔یہ روز کی بات ہے یہ کوئی نئی بات نہیں کہ جس کے بارے میں کسی کو معلوم نہ ہو۔حیرت کی بات یہ ہے کہ متعلقہ محکمے اپنی ذمہ داریاں نبھانے سے قاصرہے اورغفلت کامظاہرہ کررہی ہے ۔مقامی دکانداروں اورعام لوگوں نے متعلقہ حکام سے اپیل ہے کہ جلد سے جلد کوئی سخت اقدامات اٹھائے جائیں تاکہ لوگوں کو ان روز مراہ کی پریشانیوں سے نجات مل سکے۔