مینڈھر شیئر مارکیٹ معاملہ

مینڈھر//مینڈھر میں شیئر مارکیٹ کے نام پر جعلی طریقہ سے انتظامیہ کے سامنے غریبوں کو لوٹے جانے کی شدید الفاظ میں مذمت کرتے ہوئے نیشنل کانفرنس سنیئر لیڈر چوہدری والی داد اور ہیومن رائٹس واچ کے صوبائی صدر محمد رفیق ٹھکر نے کہا ہے کہ انتظامیہ کی آنکھوں کے سامنے غریبوں کو لوٹا جاتا رہاہے تاہم تمام ایجنسیوں نے اس طرف کوئی توجہ نہیں دی ۔نیشنل کا نفرنس لیڈر نے کہاکہ مینڈھر میں جعلی دھندہ چلتا رہا تاہم انتظامیہ خاموش تماشائی بنی رہی ۔انہوں نے کہاکہ سات سو کروڑ روپے کسی بینک کے ذریعہ باہر نہیں بھیجے جاسکتے جبکہ انتظامیہ کو چاہیے کہ وہ گرفتار شدہ افراد کے دیگر ساتھیوں کو بھی جلداز جلد گرفتار کرئے تاکہ پورا معاملہ سامنے آسکے ۔انہوں نے کہاکہ اس جعلسازی کے دوران کچھ ایسے افراد کو لوٹا گیا ہے جو نہایت ہی غریب ہیں اور اب ان کے پاس اپنے بچوں کی پڑھائی ودیگر لورزامات پوری کرنے کیلئے پیسے ہی موجود نہیں ہیں ۔انہوں نے کہاکہ جعلی دھندے میں ملوث افراد ک رشتہ داروں کو بھی گرفتار کیا جائے ۔اپنے بیان میں ہیو من رائٹس واچ کے صوبائی صدر محمد رفیق ٹھکر نے پولیس انتظامیہ کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہاکہ اس وقت مینڈھر میں افطار پارٹیاں کروائی جارہی ہیں تاہم جعلسازوں کیخلاف کوئی کارروائی عمل میں نہیں لائی گئی ۔انہوں نے کہاکہ پولیس کی آنکھوں کے سامنے ایک جعلی دھندہ چلتا رہا جس کی وجہ سے اس وقت لوگوں کے پاس عید منانے اور بچوں کی پڑھائی کیلئے پیسے ہی موجود نہیں ہیں ۔موصوف نے کہاکہ ایک برس تک مینڈھر میں جعلی کاروبار چلتا رہا لیکن اس دوران پولیس نے کسی بھی فرد کو پوچھا تک نہیں ۔انہوں نے مطالبہ کرتے ہوئے کہاکہ انتظامیہ کو چاہیے کہ وہ جلداز جلد عوام کو ان کا پیسہ واپس دلانے کیلئے کارروائی کرئے۔