میجر گگوئی کا کورٹ مارشل، سزا برابر ملے گی

 نئی دہلی //فوجی سر براہ جنرل بپن راوت نے کہا ہے کہ میجر لتل گگوئی کو اسکے جرم کے مطابق سزا ملے گی۔فوجی سربراہ کا کہنا تھا کہ اگر میجر گگوئی کورپشن اور اخلاقی گراوٹ کا کوئی بھی کیس ہو ، وہ سخت ترین سزا کا حقدار ہوگا۔نئی دہلی میں نامہ نگاروں سے بات چیت کرتے ہوئے فوجی سربراہ نے کہا’’میں نے صاف طور پر کہا ہے کہ اخلاقی گراوٹ اور کورپشن کا کوئی بھی کیس ہو،سختی کیساتھ نمٹا جائیگا‘‘۔انکا کہنا تھا ’’ کورٹ آف انکوائری کے احکامات دیئے گئے تھے، وہ (میجر)جس کسی چیز میں مجرم پایا گیا ہے، کیلئے فوج کو کورٹ مارشل کی سفارش کی گئی ہے‘‘۔انہوں نے کہا ’’ میجر کو اسکے جرم کے مطابق سزا دی جائیگی‘‘۔جنرل راوت نے مزید کہا’’ کورٹ مارشل کے دوران جو کچھ سامنے آتا ہے، اسی کے مطابق کارروائی ہوگی،اگر یہ براہ راست اخلاقی گراوٹ کا معاملہ ہو تو اسی کے مطابق کارروائی ہوگی‘‘۔ فوجی سربراہ نے کہا ’’ اگر یہ کچھ اور ہوگا تو تادیبی کارروائی اسکے جرم کے صحت کے مطابق ہی عمل میں لائی جائے گی‘‘۔کورٹ آف انکوائری  کے دوران یہ بات سامنے آئی ہے کہ میجر گگوئی کے معاملہ میں ثبوت و شواہد اور زمینی صورتحال اسکے خلاف ہے۔کورٹ آف انکوائری نے میجر کیخلاف قواعد و ضوابط میں نظم شکنی کا مرتکب ٹھہرا کر اسکے خلاف کورٹ مارشل کی سفارش کی ہے۔کورٹ آف انکوائری نے اسے ڈیوٹی کے دوران آفیشل آرمی پالیسی کا انحراف کرنے کا مرتکب ٹھہرایا ہے۔انکوائری میں کہا گیا ہے کہ میجر گگوئی نے فوجی پالیسی کیخلاف ایک مقامی خاتون سے مراسم بڑھائے اور وہ آپریشنل علاقہ میںتعیناتی کی جگہ سے غیر حاضر تھے۔