مہاکنڈمیں بنیادی سہولیات بہم فراہم کی جائیں

گول//گول کی دور دراز پنچایت مہاکنڈ کے نوجوانوں نے مرکزی و یو ٹی جموںو کشمیر سرکار سے اپیل کی ہے کہ ا ن کے ساتھ کب انصاف کیا جائے گا ۔ اکیسویںصدی میں بھی یہاں کی عوام بنیادی سہولیات سے محروم ہیں اور ہر آنے والے الیکشن میں یہاں کی عوام سے ووٹ حاصل کرنے کے لئے سیاسی لیڈران بڑے بڑے وعدے کئے جاتے ہیں لیکن بعد میں و ہ نظر نہیں آتے ۔ مقامی لوگوں نے ہاتھوں میں پلے کارڈ اُٹھا کر احتجاج کرتے ہوئے کہا کہ یہاں پر پی ایم جی ایس وائی کا ایک روڈ جو بولنی ٹاپ سے مہا کنڈ کے لئے 16برسوںسے تعمیر ہو رہا ہے لیکن ابھی تک مکمل نہیں ہے جس وجہ سے یہاں کی عوام کافی پریشان ہیں ۔ ان کا کہنا ہے کہ سڑک کی مکمل تعمیر کے لئے یہاں پر انتظامیہ نے بھی دورہ کیا تھا مقامی سیاسی لیڈران نے بھی دورہ کیا تھا لیکن کوئی نتیجہ بر آمد نہیں ہو رہا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ اسی طرح سے ہیلتھ سب سینٹر کی عمار پر بھی تیرہ برس قبل تعمیری کام شروع کیا تھا لیکن تب ہی اس پر تعمیری کام ٹھپ ہو ا تھا اُس کے بعد اس کی طرف کسی نے نظر تک نہیں دی ۔ اس طرح سے ہائی سکول کی عمارت پر8سال تعمیری کام شروع ہوا ، پنچایت گھر پر نو سال تعمیری کام شروع ہوا لیکن تمام منصوبوں پر تعمیری کام ٹھپ پڑا ہوا ہے جس وجہ سے علاقے کے لوگ بالخصوص نوجوان طبقہ کافی پریشان ہے ۔انہوں نے اے سی بی سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ تمام منصوبوں کی جانچ کر کے متعلقہ محکمہ جات کے خلاف قانونی کاروائی کریں تا کہ اس طرح سے عوامی املا ک و عوامی جذبات کے ساتھ کوئی دوسراکھلواڑ نہ کر سکے اور مقامی لوگوں کو جلد از جلد انصاف دیا جائے ۔