مہاجرین وغیر منظم کارکنوں کیلئے راشن کارڈوں کی اجرائی عدالت عظمیٰ کے حکم پرعمل آوری شروع، ’ای شرم‘ پورٹل پر رجسٹر کرنے کا حکم

 اشفاق سعید

سرینگر //مہاجرین وغیر منظم کارکنوں کو راشن کارڈ فراہم کرنے کے سپریم کورٹ کے فیصلے پر یو ٹی حکومت نے تعمیل شروع کر دی ہے اور اس سلسلے میں ایک نگران کمیٹی بھی تشکیل دی گئی ہے ۔ معلوم رہے کہ سپریم کورٹ نے20اپریل 2023کو ریاستی اور یو ٹی حکومتوں کو ہدایت دی تھی کہ وہ مہاجرین یا غیر منظم کارکنوں کو راشن کارڈ فراہم کریں، جن کے پاس راشن کارڈ نہیں ہیں اور تین ماہ کے اندر اندر ان کے راشن کارڈ ’ای شرم‘ پورٹل پر رجسٹرڈ کریں ۔جسٹس ایم آر شاہ کی سربراہی والی بنچ نے یہ حکم دیا تھا ۔حکم کی تعمیل کرتے ہوئے محکمہ جنرل ایڈمنسٹریشن نے ایک آڈر جاری کرتے ہوئے کام شروع کر دیا ہے اور اس تعلق سے 6اعلیٰ افسران کی ایک کمیٹی بھی تشکیل دی گئی ہے۔ حکم نامہ میں کہا گیا ہے کہ ’ای شرم‘ پورٹل پر رجسٹر ان افراد کی نشاندہی لیبر اینڈ ایمپلائمنٹ ڈیپارٹمنٹ کریگا جن کو محکمہ امور صارفین و تقسیم کاری راشن کارڈ جاری کرے گا۔ اس سہولت کی وسیع تر تشہیر کو یقینی بنانے کے علاوہ راشن کارڈ جاری کرنے کیلئے متعلقہ اضلاع کے اسسٹنٹ ڈائریکٹرز کو ایسے افرادکے آدھار نمبر سمیت ضروری تفصیلات فراہم کرنے کیلئے لیبر اینڈ ایمپلائمنٹ ڈیپارٹمنٹ کو نوڈل ڈیپارٹمنٹ کے طور پر نامزد کیا گیاہے ۔ پورے عمل کی نگرانی کیلئے افسران کی ایک ٹیم کی تشکیل دی گئی ہے، تاکہ سپریم کورٹ کی ہدایات پر تیزی سے عمل کیا جا سکے۔کمیٹی میںلیبر کمشنرچیئرمین ہوں گے جبکہ ڈائریکٹر محکمہ امور صارفین جموں اور سرینگر ممبران اورمتعلقہ ضلع ترقیاتی کمشنر نمائندہ رکن ہوں گے ۔اس کے علاوہ نگرانی کیلئے سٹیٹ انفارمیشن افسر کریں گے ،جبکہ متعلقہ اضلاع کے اسٹنٹ لیبر کمشنر اور اسٹنٹ ڈائریکٹر فوڈ اینڈ سپلائز ممبران ہوں گے۔ عمومی انتظامی محکمہ کے کمشنر سیکریٹری سنجیو ورما کی جانب سے جاری آڈر میں افسران کو ہدایت دی گئی ہے کہ اگر کسی بھی ضلع میں امور صارفین کی طرف سے مقرر شدہ ہدف سے زیادہ کیس سامنے آتے ہیں تو اس کو فوری طور پر محکمہ امور صارفین و عوامی تقسیم کاری کے محکمہ کو مطلع کیا جائے تاکہ اس کو متعلقہ وزارت سے اٹھایا جائے تاکہ ضروریات کے مطابق اس ضلع میں طے شدہ ہدف کا جائزہ لیا جاسکے۔