مڈل سکول ہڑمولہ کی عمارت2015سے مرمت کی منتظر

کشتواڑ// ضلع کشتواڑ میںتعلیمی نظام کی خستہ حالی گزشتہ کئی دہائیوں سے عوام کیلئے دردسر بنی ہوئی ہے اور انتظامیہ کی جانب سے بلند و بانگ دعوئوں کے برعکس زمینی سطح پر حالات آج تک نہ بدل سکے ہیں۔تعلیمی زون اندروال کے اندر بیشتر سرکاری سکولی عمارتوں کی حالت انتہائی خستہ ہے ۔علاقہ کچھال میں قایم مڈل سکول ہڑمولہ کی عمارت تعمیر ہونے کے چند سال بھی ہی 2015میں سیلاب کے باعث خستہ حال ہوئی۔اس عمارت میں دراڑیں پڑچکی ہیں جبکہ اسکی کھڑکیاں تک ٹوٹ چکی ہیں اور بچے دو کمروں کے اندر تعلیم حاصل کرنے پر مجبور ہیں۔محض نو سال کے اندر ہی اس نو تعمیر شدہ عمارت کی حالت خستہ ہوئی۔ اگرچہ مقامی لوگوں نے انتظامیہ و متعلقہ محکمہ کو اس عمارت کی تعمیر کرنے کیلئے متعدد مرتبہ کہا لیکن آج تک کوئی اقدام نہ ہواجسکے سبب بچے مجبور ہوکر اس خستہ حال عمارت میں تعلیم حاصل کررہے ہیں۔سکول کے ملازمین نے بتایا کہ سال2015 میں بارشوں کے سبب سکول کی عمارت کو نقصان پہنچا جسکے بعد انہوںنے کئی مرتبہ زونل ایجوکیشن آفیسر اور چیف ایجوکیشن افسر کے دفاتر کو اسکی مرمت کیلئے کہالیکن مرمت نہیںہوپائی۔انہوںنے کہا کہ اس وقت محض دو کمروں کے اندر آٹھ کلاسوں کو پڑھایا جارہا ہے جبکہ بچوں کو باہر گرائونڈ میں پڑھایاجارہا ہے ۔مقامی لوگوں نے انتظامیہ سے سکول کی جلد از جلد مرمت کرنے کی مانگ کی تاکہ بچوں کا مستقبل مخدوش ہونے سے بچایا جاسکے۔