مودی روس روانہ، پوتن سے کریں گے غیررسمی مذاکرات

 نئی دہلی //وزیر اعظم نریندر مودی روسی صدر ولادیمیر پوتن کے ساتھ غیر رسمی سربراہ کانفرنس کے لئے آج روس روانہ ہو گئے ۔ چین کے صدر شی جن پنگ کے ساتھ گزشتہ ماہ غیر رسمی اجلاس کے بعد مسٹر مودی کی روسی صدر کے ساتھ ہونے والی اس کانفرنس کو کافی اہم مانا جا رہا ہے ۔ روس کے سوچی شہر میں آج دونوں رہنما¶ں کے درمیان میٹنگ ہوگی۔ وزیر اعظم نے کل ایک بیان میں کہا تھا کہ ان کے اس دورے سے دونوں ممالک کے درمیان خصوصی اسٹریٹیجک پارٹنرشپ نئی بلندیوں پر پہنچے گی۔ انہوں نے کہا ''مجھے یقین ہے کہ صدر پوتن کے ساتھ مذاکرات سے ہند و روس کے درمیان خصوصی اسٹریٹجک ساجھیداری مزید مستحکم اور نئے طول و عرض حاصل کرے گی''۔ سرکاری ذرائع کے مطابق میٹنگ کا کوئی ایجنڈا نہیں رکھا گیا ہے ۔ دونوں رہنما دن میں چار سے چھ گھنٹے ایک دوسرے کے ساتھ رہیں گے اور اس میں زیادہ تر وقت وہ تنہائی میں بات چیت کریں گے ۔مسٹر پوتین مسٹر مودی کے اعزاز میں ظہرانہ کا اہتمام کریں گے ۔ دونوں رہنما¶ں کی اس ملاقات کے لئے کوئی پروٹوکول نہیں ہوگا اور نہ کوئی گارڈ آف آنر ، نہ کوئی رسمی اور نہ ہی مشترکہ بیان جاری کیا جائے گا۔ اجلاس میں بین الاقوامی اور علاقائی امور پر تبادلہ خیال ہوگا۔تیزی سے بدلتے عالمی حالات، معیشتوں میں کمی، سرمایہ کاری اور کاروبار میں اضافہ، دنیا کے مختلف حصوں میں تصادم وغیرہ موضوعات پر خاص طور پر بحث ہو گی۔امریکہ کی طرف سے روس پر پابندی لگائے جانے ، جزیرہ نما کوریا کی سرگرمیاں اور ایران کے نیوکلیائی پروگراموں کے تیئں متحدہ منصوبہ سے امریکہ کے ہٹنے کے فیصلے پر بھی تبادلہ خیال متوقع ہے ۔ وزیر اعظم اس اجلاس کے بعد شام کو ہی وطن واپس لوٹ آئیں گے ۔یو این آئی