منیہال۔ درہ 10 کلومیٹر سڑک 9 برسوں سے تشنہ تکمیل

تھنہ منڈی // سب ڈویژن تھنہ منڈی کے علاقے منیہال تا درہ رابطہ سڑک10کلو میٹر رابطہ سڑک گزشتہ 9برسوں سے مکمل ہی نہیں ہوسکی جس جس کی وجہ سے عام لوگوں کو شدید مشکلات کا سامنا کرنا پڑرہا ہے ۔مقامی لوگوں نے مقامی انتظامیہ و متعلقہ محکمہ پی ایم جی ایس وائی کیخلاف شدید احتجاج کرتے ہوئے الزام عائد کیا کہ ان کو بنیادی سہولیات فراہم کرنے کی جانب کوئی دھیان ہی نہیں دیا جارہا ہے ۔مقامی لوگوں نے بتایا کہ اس سڑک پر گزشتہ 9سالوں سے تعمیری کام جاری ہے لیکن تا ہنوز سڑک کی تعمیر تشنہ تکمیل ہے جو کہ انتہائی افسوس ناک بات ہے۔ عوام کا کہنا ہے کہ سڑک پر بلیک ٹاپنگ ایک اچھا اور اہم قدم ہے لیکن یہ ایک بے فائدہ اور غیر ضروری کام بھی ہے کیونکہ سڑک پر دور دور تک آب نکاسی کا کوئی معقول انتظام نہیں ہے۔ علاوہ ازیں سڑک پر حفاظتی دیواریں ،نالی، ڈنگوں اور پلیوں کی تعمیر نہ کے برابر ہے۔اتنا ہی نہیں اکثر جگہوں پر کٹائی کا ملبہ آج بھی سڑک پر پڑا ہوا ہے جس پر برائے نام بلیک ٹاپنگ کا کام جاری ہے۔ کشمیر عظمیٰ سے بات کرتے ہوئے مظاہرین نے بتایا کہ سڑک نکالنے کے دوران متعدد زمینداروں کی زمین اور کچھ درخت بھی اس سڑک میں زد میں آ گئے ہیں جس کی وجہ سے اراضی مالکان کو ابھی تک معاوضہ نہیں دیا گیاجس کے نتیجے میں لوگوں کو مشکلات کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے، واضح رہے اس سڑک کی دیکھ ریکھ کا کام محکمہ پی ایم جی ایس وائی کو دیا گیا ہے۔ لوگوں کے مطابق چند ماہ قبل انتظامیہ نے اس حوالے سے متعلقہ محکمہ کو فوری طور پر سڑک کا کام کرنے اور معاوضہ کی فراہمی کو یقینی بنانے کی ہدایات جاری کیں، تاہم اس سلسلے میں تادم تحریر کوئی پیشرفت نہیں ہوئی ہے۔ مقامی لوگوں نے ضلع انتظامیہ اور گورنر انتظامیہ سے اپیل کی ہے کہ محکمہ پی ایم جی ایس وائی کے خلاف سخت سے سخت کاروائی کی جائے نیز اس سڑک پر کی جانے والی بلیک ٹاپنگ کی جانچ کی جائے تاکہ سرکار اور عوام کے فضول خرچ ہونے والے پیسہ کو بچایا جا سکے۔ انھوں نے مانگ کی کہ سڑک پر صحیح طرح سے بلیک ٹاپنگ کی جائے تاکہ عوام کو کسی بھی قسم کی  پریشانی کا سامنا نہ کرنا پڑے۔