منشیات کے خلاف جنگ کشمیر میں 45روز کے دوران982 کنال پر بھنگ تباہ، 18 کیس درج

نیوز ڈیسک

 

سرینگر//بڑھتی ہوئی بھنگ اور پوست کو روکنے کی کوشش میں، کشمیر میں حکام نے کامیابی سے پوست کی پیداوار سے وسیع و عریض زمین کو صاف کر دیا ہے۔ یکم اپریل سے 17 مئی کے درمیان 986 کنال اراضی، جو کہ 2022 میں 662 کنال تھی، کو پوست کی کاشت سے پاک کیا گیا۔ ایکسائز، ریونیو اور پولیس ایجنسیوں کی مشترکہ کوششوں کے نتیجے میں 1,000 کنال (122 ایکڑ یا 50 ہیکٹر) اراضی واگزار کرائی گئی، جس سے پوست کی افزائش کا خاتمہ ہوا، جو افیون اور ہیروئن کا ذریعہ ہیں۔گزشتہ سال اسی عرصے کے دوران 662 کنال اراضی واگزار کروائی گئی تھی جب کہ اس سال متاثر کن اضافہ 982 کنال تک پہنچ گیا۔

 

 

 

جموں و کشمیر کے ایکسائز کمشنر پنکج کمار شرما نے کارروائیوں پر روشنی ڈالتے ہوئے کہا، “نارکوٹک ڈرگس اینڈ سائیکوٹرپک مادہ (این ڈی پی ایس)ایکٹ کے نفاذ میں بھنگ اور پوست کا خاتمہ شامل ہے۔ پوست کی بوائی کا سیزن عام طور پر اکتوبر سے مارچ تک ہوتا ہے، نمونے لینے کا عمل مارچ میں ہوتا ہے، اس کے بعد اپریل اور مئی میں نتیجہ خیز مرحلہ آتا ہے۔مزید برآں، شرما نے پوست کی کاشت سے نمٹنے کے لیے مربوط کوششوں پر زور دیتے ہوئے کہا، “ہم نے ریونیو اور پولیس محکموں کے تعاون سے کشمیر کے 10 اضلاع میں زیادہ سے زیادہ 1,094 کنال اراضی کو کامیابی کے ساتھ واگزار کرایا ہے۔ مزید برآںملوث افراد کے خلاف 18 ایف آئی آر درج کرائی ہیں۔ جن اضلاع کو کلیئر کیا گیا ان میں کولگام بھی شامل ہے جہاں پہلے 506 کنال اراضی پوست کے بیج کی کاشت کے لیے استعمال کی جاتی تھی۔

 

 

 

ایمس کے نیشنل ڈرگ ڈیپنڈنس ٹریٹمنٹ سینٹر کی ایک حالیہ رپورٹ میں انکشاف کیا گیا ہے کہ خطے میں منشیات کے استعمال کرنے والوں میں سے 95 فیصد تشویشناک حد تک مہلک منشیات ہیروئن کے عادی ہیں۔ پریشان کن بات یہ ہے کہ ان عادی افراد میں سے 90 فیصد 17 سے 33 سال کی عمر کے گروپ میں آتے ہیں، جو اس خطے کے لیے ایک اہم چیلنج کی نشاندہی کرتا ہے۔ خیال کیا جاتا ہے کہ جموں و کشمیر ملک میں افیون کے استعمال کی سب سے زیادہ شرحوں میں سے ایک ہے۔ اننت ناگ میں کل 3 کنال اور 10 مرلہ غیر مجاز کھیتی کو تیزی سے تباہ کر دیا گیا، جب کہ کولگام اور شوپیاں اضلاع کے کئی دیگر دیہاتوں میں بھی اسی طرح کی کارروائیاں کی گئیں۔