منشیات کی لعنت پر قابو پانے کی ناکام کوششیں! انتظامیہ ،معاشرہ اور اساتذہ کو مِل جُل کر میدان عمل میں کودنےکی اشد ضرورت

محمد شبیر کھٹانہ
ہمارے نوجوان ہمارے ملک اور معاشرے کا مستقبل ہیں۔ اگر ہم منشیات کے عادی نوجوانوں کے ملوث ہونے کا مشاہدہ کریں گے تو کسی بھی حساس ذہن کے حامل شخص کے لیے اپنے جذبات پر قابو پانا بہت ہی مشکل ہوگا۔ منشیات کی لعنت میں نوجوانوں کے ملوث ہونے سے والدین کو شدید مشکلات کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے اور ان کے دماغ میں شدید درد ہے۔ اور ساتھ ہی قومی نقصان بھی ہے ۔
سائنس کے ماہرین کا ایک اہم قول ہے کہ ہمیں زندہ رہنے کے لیے کھانا چاہیے لیکن کھانے کے لیے زندہ نہیں رہنا چاہیے۔ اب زندگی گزارنے کے لیے ضروری ہے کہ انسان کو وہ غذا کھانی چاہیے جو صحت مند غذا کی ترکیب کو مدنظر رکھتے ہوئے کھانی چاہیے اور روزانہ چار لیٹر سے زیادہ پانی پینا چاہیے۔ اس طرح کی خوراک کو رو ٹیشن میں لینا چاہیے تاکہ صحت مند غذا کی تمام اہم ترکیبیں ہمارے جسم کو ضرورت اور ضرورت کے مطابق حاصل ہو سکیں تاکہ سائنسی اصولوں کے مطابق صحت مند رہیں۔ اب بچوں کو صحیح علم دینے کے لیے کہ دینی اصولوں کے مطابق کیا کھایا جا سکتا ہے اور کیا جائز نہیں یا ان کی اچھی صحت کے لیے کیا مضر ہے، اس کے لیے بچوں کو مذہبی کے ساتھ ساتھ سائنسی علم بھی دینا چاہیے۔جہاں تک مذہبی علم کا تعلق ہے تو ہر بستی یا گاؤں میں مذہبی علم کی فراہمی کا انتظام ہونا چاہیے جہاں تمام بچوں کو مذہبی اصولوں سے آگاہ کیا جائے جس میں اس حقیقت کا علم بھی ہو کہ مذہب کے اصول کے مطابق کیا کھانا پینا جائز نہیں ہے۔ اور اگر کوئی شخص اپنے مذہب کے رہنما اصولوں پر عمل نہیں کرے گا تو طویل مدت کے لئے  اس کا کیا نقصان ہوگا۔اس کے ساتھ ساتھ بچوں کو یہ بھی سکھایا جائے کہ اپنے والدین کے رشتہ داروں اور معاشرے کے بزرگوں کا احترام کیوں ضروری ہے۔ بچوں کو ان کے والدین کی نصیحتوں کی اہمیت سکھائی جائے۔جیسے ہی کوئی بچہ اپنے پہلے استاد سے یعنی اپنی ماں سے سیکھنا شروع کرتا ہے تو سب سے پہلی چیز جو بچوں کو سکھائی جاتی ہے وہ ہے والدین کی عزت اور پیار کی اہمیت۔ والدین کا احترام سکھانے کا صحیح طریقہ یہ ہے کہ جب بچے کو کوئی خلاف یا غلط کام کرنے سے منع کیا جائے اور باپ بچے سے بات کرے تو باپ بچے سے کہے کہ ایسا نہ کرو ورنہ تمہاری ماں آپ سے ناراض ہو جائے گی۔ اسی طرح جب ماں بچے سے بات کرے گی تو اسے چاہیے کہ بچے کو یہ کہہ کر کہ تم ایسا کرو گے  تو تمہارے والد تم سے ناراض ہو جائیں گے۔ بچوں کو والدین اور خاندان کے دیگر افراد کی اہمیت سکھانے کے لیے خاندان کے دیگر تمام افراد اسی طرح بات کر سکتے ہیں اور برتاؤ کر سکتے ہیں۔ اس طرح جب بچوں کو والدین کے احترام کی اہمیت اور پیار کا درس دیا جائے گا تو وہ اپنے والدین اور خاندان کے دیگر افراد کی ہر قسم کی نصیحت اور نصیحت کو قبول کریں گے اور بچوں کے ذہن میں یہ پختہ تصور پیدا ہوگا کہ اگر وہ والدین کی خواہش یا نصیحت کے خلاف کام کریں تو والدین ان سے ناراض ہو جائیں گے۔مذہبی اصول کا پہلا علم جو بچوں پر مسلط کرنے کے لیے ضروری ہے اس میں والدین کا احترام، کیا کھانا پینا حرام ہے اور بچوں کے جسم کے لیے حرام  یا منع چیزیں کھانے پینے کا نقصان شامل ہونا چاہیے۔
جب والدین کے ساتھ ساتھ مذہبی تعلیم کے مراکز کو بھی مطلوبہ علم فراہم کرنا چاہیے جیسا کہ یہاں اوپر بتایا گیا ہے تو اس طرح کے علم کا بچوں کے ذہن پر بہت گہرا اثر پڑے گا اور وہ اپنے والدین یا اپنے معاشرے کے بزرگوں کی خواہش اور نصیحت کے خلاف یا اس کے برعکس کام نہیں کریں گے۔ اب ٹیچنگ کمیونٹی کی باری آتی ہے کہ وہ بچوں کو معاشرے کی خدمت کے لیے ایک بہت ہی ذہین مقصد یا عہدہ حاصل کرنے کے لیے ایک خاص ہدایت دیں۔ بچے. پرائمری اسکول کے استاد یا پرائمری کلاسوں میں طلباء کو پڑھانے والے اساتذہ کو ہنر مند اور ذہین طلباء کو منتشر کرنے میں بہت اہم کردار ادا کرنا ہوتا ہے۔ اس مقصد کے لیے ضروری ہے کہ حروف تہجی یا ہندسوں کی تمام پہچان بچوں کو گہری دلچسپی کے ساتھ سکھائی جائے تاکہ بچوں کو ایسے حروف تہجی اور ہندسوں کی پہچان کے حوالے سے مکمل مہارت اور اعتماد حاصل ہو اور وہ تمام حروف تہجی یا ہندسوں کو  مخلف طریقوں سے پہچان سکیں۔ کسی بھی طریقے سے اس کے بعد بچوں کو الفاظ کی تشکیل یا سو تک کے اعداد کی تشکیل کے لیے حروف تہجی کے امتزاج سکھانے کی باری آتی ہے۔ یہاں پھر لفظ کی تشکیل کے لیے حروف تہجی کے امتزاج کے صحیح طریقے سے سیکھنے کے لیے استاد کی محنت اخلاص اور لگن کی ضرورت ہوگی۔ جب بچوں کو الفاظ کی تشکیل کے لیے حروف تہجی کے امتزاج کے مناسب طریقہ پر مکمل حکم حاصل کر کے الفاظ پڑھنا شروع کریں تو استاد کو ایسے الفاظ کو بچوں کی روزمرہ کی زندگی سے جوڑنا چاہیے تاکہ ان میں سیکھنے کی دلچسپی پیدا ہو۔ ایک بار جب بچے ایسے الفاظ پڑھنے اور لکھنے سننے میں مکمل اعتماد حاصل کر لیں گے تو ان کی دلچسپی اور سیکھنے کی خواہش روز بروز بڑھتی جائے گی۔جب بچے ہندسوں کے امتزاج کے ساتھ سو تک گنتی اور نمبر بنانے کا طریقہ سیکھیں گے تو بچوں کو مختلف دلچسپ تکنیکوں یا طریقوں کو استعمال کرتے ہوئے مرحلہ وار پہاڑے یعنی ٹیبلس حفظ کرنے کا مشورہ دیا جانا چاہیے۔ اس کے بعد اساتذہ کو ایک ہندسوں کی جمع، گھٹاؤ، ضرب اور تقسیم پڑھانا شروع کر دینا چاہیے پھر مرحلہ وار انداز میں دو سے پانچ ہندسوںپر مشتمل سوالات پڑھانا چاہیے۔ جب طلباء کو جمع کرنے پر سبقت حاصل ہو جائے گی تو پھر گھٹاؤ سکھایا جانا چاہیے۔ اس طرح بچے کو ایک کے بعد ایک آپریشن کا اضافہ، ذیلی ضرب اور تقسیم سکھایا جانا چاہیے جب تمام طلبا کو ریاضی کے بنیادی عملیات پر پوری مہارت حاصل ہو جائے گی اتنی مہارت جنتی کے ان ہی کی کلاس کے سب سے ذہین اور قابل بچے کو ہو گی تو پھر ہر ایک بچے کو پڑھائی اپنے لئے مشکل محسوس نہیں ہو گی اور پھر ہر ایک بچہ قابل اور لائق بن سکے گا ۔اس کے علاوہ تمام اسکولوں میں طلباء کو اساتذہ اور والدین کے کنٹرول اور کمانڈ میں رکھنے کے لیے درج ذیل اقدامات کا استعمال کیا جانا چاہیے:
۱۔ کلاس میں گروپ مقابلہ:طلباء کو گروپوں میں تقسیم کیا جانا چاہیے اور ہر گروپ کے مانیٹر کے طور پر ایک قابل ترین طالب علم کو منتخب کیا جانا چاہیے تاکہ ہر گروپ کا مانیٹر اپنے گروپ کو ہر قسم کی سرگرمیوں/مقابلوں بشمول کلاس ٹیسٹ میں پہلے نمبر پر لانے کی کوشش کرے۔
۲۔ اسکول میں House مقابلہ:طلباء کو چار Housec میں تقسیم کیا جانا چاہئے تاکہ ایک گروپ کے تمام طلباء ایک ہی House میں ہوں۔ ہر  House کا ایک ہاؤس ماسٹر ہونا چاہیے اور ہر ہاؤس کے ماسٹر کو اپنے House کو کلاس ٹیسٹ سمیت ہر طرح کی سرگرمیوں میں پہلے نمبر پر لانے کی کوشش کرنی چاہیے۔
۳۔ ہر طالب علم کے لیے زندگی میں چار سمارٹ مقاصد طے کرنا اور طالب علم کو زندگی میں ایسے ہی سمارٹ  مقاصد میں سے ایک کو حاصل کرنے کے لیے رہنمائی اور مشاورت فراہم کرنا۔ جب ایک طالب علم کے سامنے زندگی میں سمارٹ مقصد ہوگا تو وہ زندگی میں اس طرح کے سمارٹ  مقصد کے حصول کے لیے اتنی ہی ذہین  اور شاندار محنت اور کوششیں کرے گا۔ وہ اپنی پڑھائی پر قائم رہے گا اور کبھی کسی برے یا غلط کام میں ملوث نہیں ہوگا۔ طالب علم کے لیے زندگی میں ایک بہت ہی ذہین مقصد طے کرنا ایک خواب کی طرح ہوگا جو اسے اس وقت تک سونے نہیں دے گا جب تک کہ وہ زندگی میں ایسا سمارٹ مقصد حاصل نہیں کر لے گا اور ایسے حالات میں طالب علم بھی اپنے مطالعے سے بھرپور لطف اندوز ہو گا۔
۴۔ طلباء کو چار گروپوں میں تقسیم کرنا۔ A, B, C اور D جو کہ کلاس ٹیسٹ کے بعد کیا جا سکتا ہے اور پھر طلباء کو ان کے حاصل کردہ نمبروں کی فیصد کی بنیاد پر چار گروپوں میں تقسیم کیا جا سکتا ہے۔
اس کے بعد اساتذہ کو نچلے گروپ سے اعلیٰ تک سیکھنے کی سطح کو بڑھانے کے لیے اضافی پیریڈز کا بندوبست کرنا چاہیے۔
۵۔ ہر ہفتے یا کم از کم ہر پندرہ دن میں کلاس ٹیسٹ کا انعقاد۔
ZEO/HM/پرنسپلز یا اعلیٰ حکام کی تصدیق کے لیے اساتذہ کو ایسے تمام کلاس ٹیسٹوں کا ریکارڈ رکھنا چاہیے۔
۶۔ اساتذہ کو خود شناسی کی مدد سے اپنی کارکردگی کو بہتر بنانا چاہیے۔ طلباء کو مطالعے کی صحیح راہ پر گامزن رکھنے کے لیے اساتذہ اکرام کی بہترین کارکردگی بھی ضروری ہے۔
۷۔ اساتذہ کے درمیان ان کی تدریسی صلاحیتوں کو بڑھانے کے لیے بحث ہونی چاہیے۔ تجربہ کار اساتذہ کو دوسرے اساتذہ کو نئی مہارتیں سکھانی چاہئیں یا تمام اساتذہ کو ایک دوسرے سے سیکھنا چاہیے۔
۸۔ اساتذہ کو خود سے مقابلہ کرنا چاہیے: ہر استاد کی کارکردگی کی سطح کے تدریسی تجربے اور تدریسی صلاحیتوں کو ہر پچھلے دن کی نسبت ہر روز بڑھنا چاہیے تاکہ سروس کی لمبائی میں اضافے کے ساتھ ہر استاد کو غیر معمولی موثر، ذہین، تجربہ کار، ہنر مند اور تدریس میں ماہر ہو جائے۔
۹۔ رہنمائی اور مشاورتی کمیٹی کی تشکیل: پہلے سے تشکیل دی گئی رہنمائی اور مشاورتی کمیٹیوں کو مکمل طور پر فعال بنایا جانا چاہیے تاکہ یہ کمیٹیاں کمزور طلباء کی رہنمائی اور ان کی تعلیم کے لیول کو بڑھانے کے لیے ان کی مشاورت کے لیے اپنا مناسب کردار ادا کریں۔
۱۰۔ اکیڈمک کمیٹی: سماگرا شکشا کے تحت تشکیل شدہ اکیڈمک کمیٹی کے اصولوں کے مطابق طلباء کی تعلیمی سطح کو بہتر بنانے کے لیے تعلیمی پہلو کی نگرانی میں ہیڈ ماسٹرز اور پرنسپل کی مدد کے لیے اپنا مناسب کردار ادا کرے گی۔
۱۱۔ ضلعی سطح کی رہنمائی اور مشاورتی کمیٹی تمام اساتذہ کی تدریس کے عظیم پیشے کی اہمیت کو صحیح طور پر سمجھنے میں مدد کے لیے اپنا کردار ادا کرے گی تاکہ تمام اساتذہ اکرام اس اہمیت کو مدنظر رکھتے ہوئے کام کریں۔ کمیٹی اس بات کو یقینی بنائے گی کہ تدریس کے عظیم پیشہ کے لیے جتنا اہم ہے تمام اساتذہ اکرام کو اتنا ہی سمارٹ کام کرنا چاہیے۔
اساتذہ کے زونل سطح کے 12گروپ بنائے جائیں گے تاکہ اساتذہ کو ایک دوسرے سے تدریسی ہنر اور اختراعی خیالات سیکھنے کے لیے بحث کا اہتمام کرنا چاہیے۔ ایسا خوشگوار ماحول بنایا جائے گا جس میں ہر ماہر اساتذہ اپنے اختراعی خیالات کو دوسرے اساتذہ کے ساتھ شیئر کریں گے اور ہر استاد اپنی تدریسی صلاحیتوں کو بڑھانے کے لیے تجربہ کار اساتذہ سے سیکھے گا۔اساتذہ کو چاہیے کہ وہ اپنے افسران کی طرف سے معیاری تعلیم کی فراہمی کے منظر نامے میں مطلوبہ تبدیلی لانے کے لیے درج بالا تمام اقدامات کو عملی جامہ پہنانے کے لیے ان کی حوصلہ افزائی کریں۔جب معاشرہ اور تدریسی طبقہ انتظامیہ کی نگرانی میں اپنا مشترکہ کردار ادا کرے گا تو نوجوان منشیات کی لعنت میں مبتلا نہیں ہوں گے۔
(مضمون نگار چیف ایجوکیشن آفیسر شوپیان تعینات ہیں)