منریگا سکیم کے تحت سرینگر امتیازی رویے کا شکار

سرینگر//مرکزی اسکیم نریگا کے تحت گزشتہ مالی سال کے دوران سرینگر کے ساتھ امتیازی سلوک کا اندازہ اس بات سے لگایا جاسکتا ہے کہ نہ صرف جموں ضلع میں40کروڑ کے برعکس سرینگر کیلئے صرف66  لاکھ روپے کی رقم واگزار کی گئی بلکہ ریاست کے تمام اضلاع میں سرینگر اس فہرست میں آخری نمبر پر ہے۔ دیہی ترقی کیلئے مرکزی حکومت کی اسکیم میں جہاں جموں کو2016کے دوراان326کروڑ روپے کی رقم واگذار کی گئی وہی وادی کے حصے میں صرف193کروڑ35لاکھ روپے کی رقم آئی۔اسی پر بس نہیں ہوا بلکہ گرمائی دارالحکومت یعنی ضلع جموں کو بھی سرمائی دارالحکومت سرینگرپر ترجیح دی گئی۔دستیاب اعداد شمار کے مطابق جموں ضلع کو ایم جی نریگا میں2016کے دوران39کروڑ95لاکھ62ہزار روپے کی رقم واگذار کی گئی جبکہ ضلع سرینگر اس اسکیم کے تحت ملنے والے فنڈس میں کوسوں دور نظر آتا ہے۔سرینگر ضلع کو67لاکھ32ہزار کی رقم ہی فراہم کی گئی۔ اعداد شمار کے مطابق ضلع اننت ناگ کو ایم جی نریگا کے تحت34کروڑ78لاکھ32ہزار جبکہ جنوبی کشمیر کے ضلع کولگام کو22کروڑ 88لاکھ54ہزار اور ضلع پلوامہ کو5کروڑ69 لاکھ اور ضلع شوپیاں کو10کروڑ 25لاکھ10ہزار روپے کی رقم واگزار کی گئی۔ شمالی کشمیر کے سرحدی ضلع کپوارہ کو اس مرکزی اسکیم کے تحت سال2016کے دوران51 کروڑ33لاکھ60ہزار جبکہ ضلع بانڈی پورہ کو23کروڑ 46لاکھ17ہزار اور ضلع بارہمولہ کے حصے میں 18کروڑ30لاکھ61ہزار روپے کی رقم واگذار کی گئی۔ وسطی ضلع بڈگام کے5اسمبلی انتخابی حلقوں میں14کروڑ17لاکھ60ہزار جبکہ ضلع گاندربل میں11کروڑ 60لاکھ92ہزار روپے کی رقم واگذار کی گئی۔ جموں صوبے کے ریاسی ضلع میں23کروڑ70لاکھ63ہزار جبکہ ادھمپور ضلع میں15کروڑ 8لاکھ24ہزار اور کھٹوعہ ضلع میں15کروڑ43 لاکھ47ہزار روپے کے علاوہ ضلع سامبا میںمرکزی اسکیم ایم جی نریگا کے تحت سال2016کے دوران 7 کروڑ 43 لاکھ 1800 کی رقم واگذار کی گئی۔ ضلع پونچھ میں35کروڑ91لاکھ7ہزار جبکہ کشتواڑ میں64کروڑ46 لاکھ36ہزار اور ڈوڈہ ضلع میں77کروڑ 29لاکھ84 ہزار کی رقم واگزار کی گئی۔ان اعداد شمار میں مزید بتایا گیا ہے کہ ضلع راجوری میں34کروڑ83لاکھ5ہزار جبکہ ضلع رام بن میں12کروڑ51لاکھ4ہزار روپے کی رقم سال گزشتہ واگزار کی گئی۔سر کاری اعداد شمار کے مطابق ضلع لہہ میں13کروڑ71لاکھ 48ہزار جبکہ ضلع کرگل میں10کروڑ66 لاکھ3ہزار روپے کی رقم اس مدت میں واگزار کی گئی۔