ملی ٹینسی مخالف کارروائیاں ۔500سے زائد املاک ضبط، مزید 4200کی نشاندہی

 عظمیٰ نیوز سروس

سرینگر//جموں اور کشمیر میں مختلف سرکاری ایجنسیوں کی طرف سے 500 سے زیادہ جائیدادوں کو ضبط کرنے کے ساتھ، سیکورٹی فورسز نے ملی ٹینٹ تنظیموں، انکے نیٹ ورکس اور ملی ٹینسی کی مالی معاونت کے خلاف جنگ جاری رکھی ہوئی ہے۔ حکومت ہند کا کہنا ہے کہ اگر ملی ٹینسی کے ماحولیاتی نظام کو کچل دیا جائے تو وادی میں دہشت گردی ختم ہو جائے گی۔جموں و کشمیر حکومت کے مطابق، ملی ٹینٹوں، ان کے ہمدردوں اور او جی ڈبلیوز کی 500 سے زیادہ جائیدادوں کو مختلف ایجنسیوں، نیشنل انویسٹی گیٹو ایجنسی(این آئی اے)، ریاستی تحقیقاتی ایجنسی(ایس آئی اے)، ریاستی تحقیقاتی یونٹ(ایس آئی یو)، انفورسمنٹ ڈائریکٹوریٹ اور جموں و کشمیر پولیس کی کرائم برانچ نے ضبط کیا ہے۔ اسی دوران جموں و کشمیر کے مختلف اضلاع میں کروڑوں روپے کی دیگر جائیدادیں بھی ضبط کی گئی ہیں۔ جموں و کشمیر حکومت کے مطابق، تقریباً 4,200 ملی ٹینٹ، جو پاکستان اور پاکستان کے زیر قبضہ کشمیر(پی او کے) میں رہ رہے ہیں، حکومت ہند کی طرف سے “اعلان کردہ مجرموں” میں شامل ہیں اور ان کی جائیدادیں ضبط کی جا رہی ہیں۔

رجسٹریشن اور ریونیو کے انسپکٹر جنرل کو پہلے ہی 4,200 افراد کی فہرست موصول ہوئی ہے جو گزشتہ تین دہائیوں سے پی او کے میں رہائش پذیر ہیں۔ ریونیو ڈیپارٹمنٹ ممکنہ طور پر جائیدادوں کو ضبط کرے گا اور اس بات کو یقینی بنائے گا کہ یہ جائیدادیں نہ تو کسی نے بیچی ہیں اور نہ ہی خریدی ہیں۔جموں و کشمیر پولیس نے حال ہی میں ملی ٹینٹوں کو جان بوجھ کر پناہ دینے کے قصوروار پائے جانے والوں کی جائیدادیں بھی ضبط کی ہیں۔ ڈی جی پی آر آر سوین نے کہا “وہ لوگ جو دہشت گردی کی سرگرمیوں میں ملوث ہیں، اور جو دہشت گردی کے ماحولیاتی نظام کا حصہ ہیں، وہ لوگ جو عالیشان گھر بناتے ہیں، بھاری رقم جمع کرتے ہیں، اور دبئی، لندن اور دہلی میں جائیدادیں خریدتے ہیں۔ ان کے خلاف کارروائی کرنی ہوگی۔ جن لوگوں نے دہشت گردی کو کاروبار بنا رکھا ہے ان کے ساتھ سختی سے نمٹا جائے گا اور ان کی جائیدادیں ضبط کی جائیں گی”۔ سرکاری ایجنسیوں نے حریت کے دفتر کو ضبط کرنے کے ساتھ علیحدگی پسند رہنمائوں سید علی شاہ گیلانی، شبیر شاہ اور آسیہ اندرابی کی جائیدادیں ضبط کر لی ہیں۔ متحدہ جہاد کونسل کے سربراہ سید صلاح الدین اور ان کے بیٹے کی جائیداد بھی قبضے میں لے لی گئی۔ IC-814 کے مسافروں کے بدلے رہا ہونے والے مشتاق زرگر کا گھر بھی قبضے میں لے لیا گیا ہے۔