ملہ کھاہ کی زبوں حالی پر ڈاون ٹاون کارڈی نیشن کمیٹی کا اظہار تشویش

 سرینگر// ڈاون ٹاون کارڈی نیشن کمیٹی کے ایک اجلاس میں سرینگر کے تاریخی قبرستان ملہ کھاہ کی زبوں حالی اور اوقاف اسلامیہ اور ریاستی انتظامیہ کا اس کے انتظام و انتصرام سے متعلق ان کے تساہل پر سخت تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ اس تاریخی ورثہ جسے حضرت امیر کبیر میر سید علی ہمدانی کے فرزند ارجمند میر محمد ہمدانی ؒ نے16ویں صدی میں مسلمانوں کے وقف کیا۔ اس بات کو شدت سے محسوس کیا جارہا ہے کہ اس کو بچانے اور اس کے تزئین اور اسے تحفظ پہنچانے سے متعلق کوتاہ روی کا رویہ رکھا جارہا ہے ،اس سلسلے میں سینٹر فار یوتھ ڈیولپمنٹ کے چیرمین امتیاز رشید چستی نے  بلائے گئے ڈاون ٹاون کے مندوبین ،متوسلین و معززین  سے مخاطب ہوئے کہا کہ اس تاریخی ورثہ کو بچانے کے لئے ہنگامی  بنیادوں پر شروعات کرنے کی ضرورت شدت سے محسوس کی جارہی ہے ۔بیان کے مطابق اگرچہ حکومتی سطح پر اس کی آرائیش و تزین کاری سے متعلق کچھ اقدامات اٹھانے کا اعلان کیا گیا تاہم اولین بنیادوں پر اس قبرستان کو بچانے کے لئے اور اس پر کھڑی ناجائز تجاوزات کو ہٹانے کی ضرورت ہے ۔کمیٹی نے کہا کہ ہم پر زور مطالبہ دہراتے ہوئے متعلقہ ذمہ داروں پر واضح کرنا چاہتے ہیں کہ  سیاسی مقاصد کے لئے اس قومی اثاثہ کو کسی بھی صورت میں استعمال نہ کیا جائے اوراگر اس کی طرف فوری توجہ نہ دی گئی تو ڈاون ٹاون کے سبھی باشندے اس قومی ورثے کو بچانے کے لئے سڑکوں پر بھی آسکتے ہیں۔ اس سلسلے میں ہم یہ امید رکھتے ہیں کہ متعلقہ ادارے اس قبرستان کو ناجائز قبضے سے آزاد کرانے کے لئے ہنگامی نویت کے اقدامات اٹھائیں گے ۔