ملک کا تعلیمی منظر نامہ تبدیلی تعلیمی اداروں اور صنعتوں کے درمیان ہم آہنگی کی ضرورت:ایل جی

 عظمیٰ نیوز سروس

سرینگر// لیفٹیننٹ گورنر منوج سنہا نے جمعہ کو تعلیمی اداروں پر زور دیا کہ وہ ایک خصوصی افرادی قوت تیار کریں جو صنعت کی ضروریات پورا کرے اور مقامی چیلنجوں کو حل کرنے کے قابل بھی ہو۔نیشنل انسٹی ٹیوٹ آف ٹیکنالوجی( این آئی ٹی) میں لڑکیوں کے نئے ہاسٹل کا افتتاح کرنے کے بعد ایک تقریب سے خطاب کرتے ہوئے، سنہا نے کہا کہ یہ سہولت ہماری بیٹیوں کے لیے وقف ہے جو سائنس، ٹیکنالوجی، انجینئرنگ اور ریاضی کی تعلیم میں رکاوٹوں کو توڑ رہی ہیں اور جو جدت اور کاروباری ماحولیاتی نظام کی تشکیل کے لیے تیار ہے۔سنہا نے کہا”این آئی ٹی جیسے اداروں کی سب سے بڑی ذمہ داری اب اختراع کرنے والوں کی نئی نسل تیار کرنا ہے، ہمیں ملک میں اختراعی ماحولیاتی نظام کو مضبوط کرنے کے لیے امرت کال میں اختراع پر مبنی معیشت تیار کرنے پر توجہ مرکوز کرنی چاہیے۔ایل جی نے فیکلٹی ممبران پر زور دیا کہ وہ طلبا کی مستقبل پر مبنی صلاحیتوں کی تعمیر اور تعلیمی اداروں اور صنعتوں کے درمیان ہم آہنگی کو مضبوط بنانے کے لیے سازگار ماحول پیدا کریں۔سنہا نے کہا، “ہمیں STEM کورسز میں خواتین کی بڑھتی ہوئی شرکت کو بھی یقینی بنانا چاہیے۔سنہا نے وزیر اعظم نریندر مودی کی قیادت میں ملک کے “تعلیمی منظر نامے میں تبدیلی” کے بارے میں بات کی۔انہوں نے کہا”آج ہمارے تعلیمی ادارے جدید تعلیمی پروگراموں کے مراکز کے طور پر ابھر رہے ہیں، مختلف شعبوں میں ہمارے باصلاحیت نوجوانوں کو فراہم کیے جانے والے نئے مواقع کے ساتھ، ہم مستقبل میں عالمی علمی معیشت پر صحیح معنوں میں غلبہ حاصل کر سکتے ہیں” ۔