مغربی ہوائیں جموں کشمیر میں داخل

 
سرینگر // محکمہ موسمیات کا کہنا ہے کہ جمعہ کی شب سے سنیچر کی شب تک کشمیر کے میدانی علاقوں میں 2سے 3انچ برف باری ہونے کا امکان ہے جبکہ بالائی علاقوں میں درمیانہ درجہ کی برف باری ہو سکتی ہے اور اتوار سے موسم بہتر ہونے کی توقع ہے۔جمعرات کو وادی میں مطلع ابرالود رہنے کے بیچ اگرچہ شبانہ درجہ حرارت میں قدرے بہتری آئی تاہم اس کے باوجود بھی یہاں سردی کی شدت برقرار ہے۔ شدید ٹھنڈ کا سلسلہ جاری رہنے کے باعث جھیل ڈل اوردیگرآبی ذخائر کی منجمد سطح  میں او اضافہ دیکھنے کو نہیں ملا۔محکمہ موسمیات کے ڈائریکٹر سونم لوٹس نے کشمیر عظمیٰ سے بات کرتے ہوئے کہا کہ مغربی ہوائیں جموں کشمیر میں داخل ہوگئی ہیں اور موسمیاتی سسٹم  اس بات کی نشاندہی کررہا ہے کہ کشمیر کے میدانی علاقوں 2سے3انچ برف پڑنے کا امکان ہے جبکہ کشمیر کے پہاڑی اور بالائی علاقوں سمیت لداخ کے زانسکار ، دراس ، کرگل ، منی مرگ میں درمیانہ درجہ کی برف باری ہوگی اور24 جنوری سے موسم ٹھیک ہونا شروع ہو جائے گا۔ انہوں نے مزید کہا کہ 23 اور24 جنوری کی رات کے درجہ حرات میں بہتری آگئی تاہم دن کے درجہ حرارت میں گراوٹ آنے کا امکان ہے ۔انہوں نے کہا کہ 24جنوری کے بعد کم سے کم درجہ حرات کے منفی 3سے4 رہنے کا امکان ہے ۔جمعہ کی صبح شہر سرینگر وادی کے تمام اضلاع میں موسم ابرالود رہا ۔ بادل رہنے کی وجہ سے شبانہ درجہ حرارت میں بہتری دیکھنے کو ملی اور جمعرات او ر جمعہ کی درمیانی رات کم سے کم درجہ حرات منفی 6.1ڈگری رہ گیا ۔،قاضی گنڈ میں منفی 6.2، پہلگام میں 7.0 ، کپوارہ میں منفی 4.8 ، کوکرناگ میں منفی 6.5 ، سیاحتی مقام گلمرگ میں منفی 6 ، اونتی پورہ میں منفی 8.0  ، شوپیاں میں منفی 8.5 ،اننت ناگ میں منفی 6.2 ، پلوامہ میں منفی 5.7 ، کولگام میں منفی 5.9 ، بانڈی پورہ میں منفی 3.6 اور،بڈگام میں منفی 5.5ڈگری ریکارڈ کیا گیا ۔
 

 دوسری بار ممکنہ برفباری کیلئے تیاریاں

محکمہ بجلی کے افسران کی مشیر کیساتھ بیٹھک

نیوز ڈیسک
 
سرینگر//لیفٹیننٹ گورنر کے مشیربصیر احمد خان نے کشمیر پاور ڈیولپمنٹ کارپوریشن لمٹیڈ کی جائزہ میٹنگ طلب کی۔اس دوران وادی میںدوسری بار ممکنہ برفباری کیلئے تیاریوں کا جائزہ لیا۔میٹنگ میں ایم ڈی کے پی ڈی سی ایل اعجاز اسد ، چیف انجینئر پاور ڈسٹربیوشن اعجاز احمد اور چیف انجینئر ٹرانسمیشن حشمت قاضی نے شرکت کی۔اس موقعہ پرمشیربصیر احمدخان نے بجلی ٹرانسفارمروں اور تاروں وغیر ہ کی دستیابی ، عملے کی تعیناتی کے بارے میں تفصیل طلب کی اور اَفسروں کو شہری علاقوں میںچوبیس گھنٹے اور دیہی علاقوں میں 48گھنٹوں کے اندر بجلی سپلائی بحال کرنے کا عبوری منصوبہ مرتب کرنے کی ہدایت دی۔ایم ڈی  کے پی ڈی سی ایل نے مشیر کو جانکاری دی کہ محکمہ کسی بھی صورتحال سے نمٹنے کے لئے تیار ہے ۔اُنہوں نے کہا کہ محکمہ ناکارہ بجلی کھمبوں کی تنصیب، ان کا متبادل نصب کرنے ، سپلائی لائینوں اور ٹرانسفارمروں کی مرمت اور دیکھ ریکھ کے لئے تمام اِنتظامات کئے ہیں۔اُنہوں نے کہا کہ محکمہ نے پہلی بھاری برفباری کے بعد معین  مدت کے اندر بجلی سپلائی بحال کی تھی۔مشیر کو مزید بتایا گیا کہ بجلی ٹرانسفارمروں، کھمبوںاور تاروں کا وافر مقدار میں ذخیرہ دستیاب ہے تاکہ بجلی کی ترسیل سے متعلق تمام مسائل کا ازالہ کیا جاسکے۔انہوں نے مزید کہا کہ عملہ او رمشینری تیاری کی حالت میں رکھے گئے ہیں ۔گرڈ سٹیشن دلنہ میں ٹرانسفارمروں کی تنصیب اور توسیع جاری کام کی پیش رفت کاجائزہ لینے کے دوران مشیر کو بتایا گیاکہ تمام کام مکمل کئے گئے ہیں تاہم ٹرانسفارمر ابھی تک موصول نہیں ہوئے ہیں ۔اُنہوں نے کہا کہ گرڈ سٹیشن کی بروقت تکمیل کے لئے تین ٹرانسفارمر جی ایس ایس بڈگام سے منتقل کئے جارہے ہیں جن میں ایک موصول ہوا ہے جبکہ دو ابھی موصول ہونے باقی ہے۔220کے وی  ڈی / س  ونپوہ ۔ میر بازار ترسیلی لائن کی تنصیب سے متعلق مشیر کو بتایا گیا کہ منصوبے پر کام جاری ہے اور فروری کے پہلے ہفتے تک پایہ تکمیل پہنچے گا۔