معیشی ترقی کیلئے نوجوانوں کی بااِختیاری لازمی

سرینگر//لیفٹیننٹ گورنر منوج سِنہا نے کہا ہے کہ بہتر کل کیلئے نوجوانوں کی بااِختیاری لازمی ہے ۔نوجوانوں کو بااِختیار بنا کر معاشی و معاشرتی تبدیلی لانا وقت کا اہم تقاضا ہے جس کیلئے تمام متعلقین کی اِجتماعی کوششیں لازمی ہیں ۔ لیفٹیننٹ گورنر نے اِن خیالات کا اِظہار نوجوانوں کو بااِختیار بنانے کے پروگرام کی بہتر عمل آوری کیلئے طریقۂ کار پر غور و خوض کرنے کیلئے منعقدہ میٹنگ کی صدارت کرتے ہوئے کیا جو یوٹی حکومت نے نوجوانوں کیلئے روز گار کی فراہمی سے متعلق مرتب کر رہی ہے۔لیفٹیننٹ گورنر نے کہا کہ یوٹی کے نوجوان کافی باصلاحیت ہیں اور مجوزہ پروگرام اُن کو معاونت فراہم کرنے کیلئے ایک اِدارہ جاتی نظام ثابت ہوگا ۔ اُنہوں نے متعلقہ اَفسران کو نوجوانوں کی بااِختیاری کے لئے بہترین عالمی طریقۂ کار اِختیار کرنے کے لئے کہا اور اِس کے ساتھ ہی بزنس سکولوں کو سٹیڈ یز میں شامل کرنے کے لئے کہا۔اُنہوں نے کہا کہ ہمیں خطے میں نوجوانوں میں اعتماد اور اثبات کا ماحول قائم کرنا ہوگا او رنوجوانوں کے مسائل اور ضروریات کی جانب توجہ دینی ہوگی۔ لیفٹیننٹ گورنر نے ہر ضلع میں ڈسٹرکٹ یوتھ سینٹر قائم کرنے کی تجویز بھی پیش کی۔ اُنہو ں نے نوجوانوں کے لئے مواقع سِکل ڈیولپمنٹ ، تعلیم ، کھیل کود ، سیاحت ، زراعت اور ان سے منسلک شعبوں کے ذریعے قائم کرنے کے لئے کہا۔ اُنہوں نے کہا جموںوکشمیر یوٹی میں 65فیصد آبادی 37برس کے کم عمر کے نوجوانوں پر مشتمل ہے اور حکومت نوجوانوں کو کھیل کود ، روزگار ، تفریح ،تعلیم ،کونسلنگ پروگراموں میں شامل کرنا چاہتی ہے تاکہ اُن کے مستقبل کی تعمیر اُن کی آرزئوں اور اُمنگوں کے مطابق کی جاسکے۔