مشاورت کا سلسلہ جاری رہیگا:مشترکہ قیادت

 
سرینگر //مشترکہ مزاحمتی قیادت سید علی گیلانی، میرواعظ عمر فاروق اور محمد یاسین ملک نے کہا ہے کہ عوام اور قیادت پشتینی اسٹیٹ سبجیکٹ قانون پر آگاہی حاصل کرتی رہے گی اور قانون کی حفاظت کے ضمن میںمشاورت کے بعد آئندہ لائحہ عمل عنقریب ترتیب دیا جائیگا۔ انہوں نے کہا کہ عوام کی جانب سے اسٹیٹ سبجیکٹ قانون کے دفاع اور تحفظ کے حوالے سے پُر امن اور مثالی احتجاج نے بھارت کی سپریم کورٹ کو اس معاملے پر شنوائی کو موخر کرنے پر مجبور کیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ مختلف شعبہ فکر ہائی بشمول ٹریڈرس، طلبا، ٹرانسپوٹرس، سیول سوسائٹی، ملازمین، وکلاء ، صحافیوں کی جانب سے معاملے پر ا تحاد و یکجہتی نے یہ ثابت کردیا کہ کشمیری عوام کسی بھی ایسی ہتھکنڈے کے خلاف بھرپور مزاحمت کے لئے تیار ہے جس سے کشمیرمسئلہ کے حل تک اس کی متنازعی حیثیت کو زک پہنچانے کا اندیشہ ہو۔ قیادت نے کہا کہ جموں کشمیر کے عوام بشمول پیر پنچال، ڈودہ، کشٹوار، پونچھ، سرحدی علاقے ٹنگڈار، گریزاور وادی کشمیر نے ہمت اور یکجہتی کا مظاہرہ کرکے نئی دلی کو یہ واضح کردیا کہ طاقت اور تشدد کے بل پر کشمیری عوام کو ان کی پشتینی شناخت کو مسخ کرنے کی اجازت نہیں دی جاسکتی ہے۔ انہوں نے کہا کشمیری عوام اپنے مستقبل کا خود تعین کرنے کی بھر پور صلاحیت رکھتے ہیں۔