مسلم پرسنل لا ء بورڈ کی ایک اہم نشست 15 جولائی کو

 لکھنو//ایودھیا میں رام مندر کی تعمیر کے لئے ہندو لیڈروں اور سنتوں کے دباو والی کوششوں کے پیش نظر آل انڈیا مسلم پرسنل لا بورڈ نے 15 جولائی کو ندوۃ میں مجلس عاملہ کی ایک میٹنگ طلب کر لی ہے جس میں ایودھیا اور خواتین کے امور سمیت متعلقہ معاملات زیر غور آئیں گے ۔ ہر چند کہ اس میٹنگ میں ایودھیا کے معاملے پر سپریم کورٹ کے فیصلے کی پابندی کے پرانے موقف کی تائید متوقع ہے لیکن اس نشست میں 2019 کے عام انتخابات کے پیش نظر سیاسی اور معاشرتی ماحول ار ان کے تقاضوں پر بھی غور کیا جا سکتا ہے ۔ بورڈ کے رکن مولانا خالد رشید فرنگی محلی نے بتایا کہ بورڈ کی مجلس عاملہ کی میٹنگ 15 جولائی کو ہوگی۔  انہوں نے کہا کہ یہ میٹنگ معمول کا حصہ ہے اور وقتا فوقتا ہوت رہتی ہے ۔ اس بار بھی س میں کئی امور زیر غور آئیں گے جن میں ایودھیا کا معاملہ بھی شامل ہو گا۔ خواتین کے امور میں طلاق ثلاثہ بھی زیر غور رہے گا  کہا جا رہا ہے اس میٹنگ میں مولانا سید سلمان ندوی کو بورڈ بدر کرنے کے فیصلے کو واپس لیا جا سکتا ہے ۔ بورڈ کے کسی ذمہ دار نے بہر حال اس کی تصدیق نہیں کی۔ واضح رہے کہ مولانا ندوی کو اسی سال فروری میں بورڈ کے حیدر آباد اجلاس میں اس لئے بورڈ بدر کر دیا گیا تھا کہ وہ ایودھیا تنازعہ کو ماورائے عدالت ختم کرنے کی کھل کر تائید کرنے لگے تھے اور اس محاذ پر وہ شری شری روی شنکر کے ساتھ بھی چل پڑے تھے ۔ یو این آئی