مسافر کرایہ میں اضافہ

 بانہال// ضلع رام بن کے متعدد روٹوں اور جواہر ٹنل کے آر پار چلنے والی مسافر گاڑی نے مسافروں کی ناک میں دم کر دیا ہے اور من مرضی سے مسافر کرایہ کو بڑھا کر مسافروں کےلئے پریشانیاں پیدا کی ہیں ۔ منگت سے بانہال تک 35 کلومیٹر کی مسافت پر 2سو روپے ، بانہالی سے کھنہ بل تک 50 کلومیٹر کی مسافت پر اڑھائی سو ، بانہال سے رام بن تک 35 کلومیٹر کی مسافت پر اڑھائی سو روپئے ، مہو سے بانہال تک دو سو روپئے شخ اور راجگڑھ سے چندر کوٹ تک 17 کلومیٹر کیلئے ایک سو روپئے کی رقم بطور کرایہ وصولی جاتی ہے۔ یہاں سرکار کی طرف سے مسافر کرایہ کیلئے جاری ریٹ لسٹ پر کوئی عمل نہیں ہورہا ہے اور عملے کی شدید قلت سے دوچار محکمہ موٹر وہیکلز ڈیپارٹمنٹ روزانہ لوگوں کی شکایتوں اور ڈرائیوروں کے خلاف کاروائیوں کے باوجود مسافر کرایہ کے من مانے اضافے پر کوئی خاص قابو نہیں پاسکا ہے۔منگت سے بانہال تک دو سو روپئے کرایہ وصولنے کے خلاف مقامی پنچایت نے ایک ریزولیشن پاس کیا ہے جس میں حکام پر زور دیا گیا ہے کہ وہ مسافر گاڑیوں کے کرایہ میںکمی لائیں اور من مرضی سے اضافی کرایہ وصولنے والے ڈرائیوروں اور ایجنٹوں کے خلاف کارروائی کی جانی چاہئے۔ سب ڈویژن بانہال کے مہو علاقے میں سیر پر آئے رامسو کے کئی نوجوانوں نے بتایا کہ یہاں سومو سروس برائے نام ہے اور سومو ڈرائیوروں نے مہو سے کھڑی اور بانہال تک مسافر کرایہ کے نام پر لوٹ مچا رکھی ہے۔ شگن رامسو سے تعلق رکھنے والے ان مقامی نوجوان سیاحوں نے کشمیر عظمیٰ کو بتایا کہ مہو بس سٹینڈ سے کھڑی تک فی مسافر سے ایک سو روپے کرایہ مانگا اور لیا جاتا ہے جبکہ فی مسافر پچاس روپئے سے بھی کم کا کرایہ بنتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ مقامی لوگوں کو چار پانچ کلومیٹر کی مسافت کے عوض بھی پورے روٹ کا کرایہ مانگا جاتا ہے۔ اے آر ٹی او رام بن سے اس تعلق سے بات کرنے کی کوشش کی گئی لیکن ان سے رابطہ نہیں ہو سکا ۔واضح رہے کہ ضلع رام بن میں موٹر وہیکلز ڈیپارٹمنٹ ملازمین کی شدید قلت سے دوچارہے اور نیشنل ہائے وے پر ناشری ٹنل سے جواہر ٹنل تک کے حصے کے علاو¿ہ ضلع رام بن کے چار سب ڈویڑنوں کا ٹریفک سنبھلتے نہیں سنبھلتا ہے اور ٹریفک قوانین کی خلاف ورزی میں ملوث افراد کے خلاف کاروائیوں کے باوجود اس لوٹ میں کوئی کمی واقع نہیں ہوئی ہے۔