مسئلہ کشمیر کو دبانے کیلئے حریت لیڈران کی گرفتاری ہوئی

راجوری //نیشنل کانفرنس کے معاون جنرل سیکریٹری ڈاکٹر مصطفےٰ کمال نے راجوری دورے کے دوران میڈیاسے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ حریت لیڈروں کی گرفتاری مسئلہ کشمیر کو دبانے کے لئے کی جارہی ہے جبکہ ہندوستان کی مین سٹریم جماعتیں ہی علیحدگی پسندوںکو پیسہ دےتی آئی ہیں جس کا خلاصہ راکے سابقہ آفیسر نے اپنی کتاب میں کیا ہے ۔ انہوں نے بتایا کہ پاکستان کی طرف سے پیسہ بھیجا جارہا ہے یا نہیں اس کا ثبوت مرکز کے پاس نہیں ہے ،اگر کوئی ثبوت ملاہے تو وہ یہ ہے مرکزہمیشہ سے علیحدگی پسندوںلیڈروں کو پیسہ دیتی ہے تاکہ جموں کشمیر میںنیشنل کانفرنس کو دفن کیا جاسکے اور یہی وجہ ہے کہ مرحوم مفتی محمد سعید کو مرکزی سرکار نے چند روزکے لئے وزیر داخلہ بناکر جگ موہن کو کشمیر بھیج کر خون کی ہولی کھیلنے اور بعد میں یک بعد دیگر ریاست کی خصوصی پوزیشن کو نقصان پہنچانے کا سلسلہ شروع کیا گےا ۔ انہوں نے بتایا کہ کشمیر کی موجودہ صورتحال کی ذمہ داری برائے راست سابقہ وزیر اعلی مرحوم مفتی محمد سعید پر عائد ہوتی ہے جنہوں نے شدت پسند جماعت کو کشمیر میں وارد کر کے حالات پیداکئے ہیں ۔مصطفی کمال نے بتایا کہ اقوام متحدہ کے جنرل سیکریٹری اور صدر امریکہ نے بھی مسئلہ کشمیر کو حل کرنے کا تعاون دینے کی یقین دہانی کرائی تاہم وزیر اعلی محبوبہ مفتی نے لوک سبھا ممبر فاروق عبداللہ کے بیان کو توڑ مروڑ کر پیش کیا ہے ۔ انہوں نے بتایا کہ مسئلہ کشمیر ایک سیاسی مسئلہ ہے جس کا حل وقت کی اشدت ضرورت ہے جو دونوں ممالک کے لئے فائدہ کا سودہ ہوگا ۔