مزید خبریں

مینڈھر میں فوج نے طبی سہولیات شروع کیں 

جاوید اقبال 
مینڈھر //مینڈھر سب ڈویژن میں فو ج کی جانب سے مکینوں کیلئے طبی سروس شروع کی گئی ہے تاکہ اس مشکل وقت میں غریب لوگوں کو ان کے گھروں میں ہی معیاری طبی سہولیات فراہم کی جاسکیں ۔’موبائل میڈیکل ایڈ ‘کے عنوان سے شروع کر دہ اس مہم کے دوران سب ڈویژن کے دیہات میں مکینوں کو طبی سہولیات فراہم کی جارہی ہیں ۔فوج نے بتایا کہ مذکورہ پروگرام شروع کر نے کا اصل مقصد عوام کو اس مشکل دور میں ہر طرح کی سہولیات فراہم کرنا ہے ۔فوجی آفیسران نے کہاکہ اس سے قبل بھی فوج کی جانب سے مشکل وقت میں عوام کو معیاری سہولیات فراہم کر نے کیلئے کئی طرح کے اقدامات اٹھائے ہیں ۔اس مہم کے دوران 75سیول افراد کو طبی سہولیات فراہم کی گئی ہیں ۔مقامی لوگوں نے فوج کی جانب سے شروع کر دہ سروس کی تعریف کرتے ہوئے امید ظاہر کی کہ آئندہ بھی مذکورہ سروس کو جاری رکھا جائے گا۔
 
 
 
 

پٹواری نے نیابت کو ماڈل آفس کے طور تبدیل کیا 

راجوری //سرحدی ضلع راجوری کی دور دراز تحصیل خواص میں ایک پٹواری نے نیابت دفتر کو ایک ماڈل آفس کے طورپر تبدیل کرنے کا عمل شروع کیا ہے ۔نائب تحصیلدار کی زیر سرپرستی والی مذکورہ نیابت تحصیل خواص کے پسماندہ گائوں نارلہ میں قائم کی گئی ہے ۔مقامی لوگوں نے بتایا کہ مذکورہ نیابت کے زیر تحت علاقہ کے پوری طرح سے پسماندہ 7گائوں آرہے ہیں ۔مذکورہ دفتر میں دو ماہ قبل پٹواری عابد مغل کی تعیناتی ہوئی جس کے بعد مذکورہ ملازم نے دفتر کو جدید طرز کے طورپر قائم کرنے کا عمل شروع کیا جبکہ مقامی لوگوں نے پٹواری کے اس عمل کی تعریف کی ۔محمد منظور نامی ایک مقامی شخص نے بتایا کہ مذکورہ ملازم کی جانب سے اٹھائے گئے قدم سے قبل مذکورہ دفتر ایک عام سرکاری دفتر کے طورپر قائم تھا تاہم اس وقت نیابت ایک نیا منظر نامہ پیش کررہا ہے ۔دانس سنگھ نامی ایک مقامی شخص نے بتایا کہ اب دفتر میں عام لوگوں کیلئے بیٹھنے کیلئے بھی معقول جگہ بنائی گئی ہے ۔انہوں نے بتایا کہ دفتر میں شجر کاری مہم کو بھی شروع کیا گیا ہے ۔کشمیر عظمیٰ سے بات کرتے ہوئے پٹواری عابد مغل نے بتایا کہ نیابت میں آفیسران کیساتھ ساتھ عام لوگ بڑی تعداد میں آتے ہیں تاہم مذکورہ مقام پر معیاری فضا ء قائم کرنا اشد ضروری تھا ۔
 
 
 

بدھل میں چھوٹی بڑی سڑکیں کھنڈرات میں تبدیل | مسافروں و ٹرانسپورٹروں کو دوران آمد ورفت مسائل درپیش 

محمد بشارت
کوٹرنکہ //بدھل ڈویژن میں تمام چھوٹی اور بڑی سڑکیں انتہائی خستہ ہونے کی وجہ سے مسافروںو ٹرانسپورٹروں کو دوران آمد ورفت شدید مشکلات کا سامنا کرنا پڑرہا ہے ۔مکینوں نے انتظامیہ کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہاکہ مرکزی حکومت کی جانب سے دیہات میں سڑکوں کا جال بچھانے کے نعر ے لگائے جارہے ہیں جبکہ سڑکوں کی مرمت کیلئے بھی لاکھوں روپے خرچ کئے جاتے ہیں تاہم مذکورہ سڑکیں کھڈوں میں تبدیل ہو گئی ہیں ۔انہوں نے کہاکہ رابطہ سڑکوں کی مرمت کے سلسلہ میں انتظامیہ سے کئی مرتبہ رجوع بھی کیا گیا لیکن یقین دہانیوں کے باوجود بھی سڑکوں کی مرمت ہی نہیں کی جارہی ہے ۔انہوں نے بتایا کہ مندر گالہ سے گھروٹ ،پروڑی ،پیڑی ،ساکری ،درہال وغیرہ علاقوں کی سڑکیں نا قابل استعمال ہو گئی ہیں ۔سرپنچ حلقہ پنچایت دھار اعجاز احمد نے بتایا کہ گزشتہ کئی برسوں سے تعمیر وترقی کے نام پر لوگوں سے ووٹ لئے جارہے ہیں لیکن دیہات میں سڑکوں کی حالت ہی نہیں بدلی ۔مقامی لوگوں نے مانگ کرتے ہوئے کہاکہ سڑکوں کی جلدازجلد مرمت کی جائے تاکہ مسافروں کیساتھ ساتھ ٹرانسپورٹروں کو مشکلات کا سامنا نہ کرنا پڑے ۔
 
 

راجوری یونیورسٹی میں پہاڑی طبقہ کو ریزرویشن دینے کی مانگ 

جاوید اقبال 
مینڈھر //متعدد تنظیموں نے بابا غلام شاہ بادشاہ یونیورسٹی راجوری میں پہاڑی طبقہ کو تعلیمی برس 2021-22کیلئے ریزرویشن دینے کی مانگ کی ۔اپنی پارٹی یوتھ ونگ جموں وکشمیر نائب صدر اور میڈیا کوآرڈینٹر رقیق احمد خان نے حکومت پرزور دیا ہے کہ باباغلام شاہ بادشاہ یونیورسٹی راجوری میں تعلیمی سال 2021-22کے لئے مختلف کورسز میں جاری داخلہ عمل میں ریزرویشن دی جائے۔ انہوں نے کہا ہے کہ بدقسمتی کا مقام ہے کہ راجوری یونیورسٹی نے پہاڑی طلبا کو داخلہ میں حکومت کی طرف سے منظور کردہ چارفیصد ریزرویشن نہیں دی گئی جو کہ طبقہ کے طلباء کیساتھ نا انصافی ہے ۔ انہوں نے کہاکہ ’’یہ پہاڑی زبان بولنے طبقہ کے تئیں یونیورسٹی انتظامیہ کا متعصبانہ رویہ ہے جوکہ ریزرویشن زمرے کے تحت طبقہ کو حاصل آئینی حقوق سے محروم رکھ رہی ہے۔ انہوں نے الزام لگایاکہ یونیورسٹی انتظامیہ کی طرف سے تعلیمی سال 2021-22کے لئے انڈرگریجویٹ اور پوسٹ گریجویٹ پروگراموں کے داخلہ کے لئے جونوٹیفکیشن نکالاگیا ، اُس میں پہاڑی زبان بولنے والے طلبا کے لئے کوئی نشست مخصوص نہیں رکھی گئی ہے۔اس دوران راجہ محمود خان نے کہاکہ یونیورسٹی کی جانب سے پہاڑی طبقہ کے طلباء کیساتھ نا انصافی کی جارہی ہے ۔ انہوں نے لیفٹیننٹ گورنر منوج سنہا سے گذارش کی ہے کہ وہ معاملہ کی تحقیقات کی جائے اور پہاڑی طبقہ کے طلباء کو ریزرویشن دی جائے تاکہ وہ اپنی تعلیم جاری رکھ سکیں ۔
 

کووڈ ویکسین بارے افواہیںپھیلانے کا معاملہ | معیاری مہم کیلئے جانچ پڑتال کی اشد ضرورت :ڈاکٹر شلندر 

راجوری //گور نمنٹ میڈیکل کالج راجوری میں آرتھو پیڈک شعبہ کے ایچ او ڈی ڈاکٹر شلندر نے کہاکہ کووڈ ویکسین کے سلسلہ میں افواہیں پھیلانے والوں کے سلسلہ میں جانچ پڑتال کی اشد ضرورت ہے ۔انہوں نے جاری اپنے بیان میں عوام سے اپیل کرتے ہوئے کہاکہ کووڈ کے پھیلا ئو کو کم کرنے کیلئے انتظامیہ کیساتھ تعاون کی جائے ۔انہوں نے کہاکہ کووڈ ویکسین کے بارے میں پھیلائی جارہی افواہوں کی وجہ سے وائرس کیخلاف جنگ کمزور ہوتی جارہی ہے ۔ڈاکٹر موصوف نے کہاکہ لوگوں کو کووڈ ویکسین کے سلسلہ میں مزید بیدار کرنا اشد ضروری ہے ۔انہوں نے بتایا کہ ان کے والدین کیساتھ ساتھ ایک بڑی تعداد میں بزرگ ایسے ہیں جنہوں نے کووڈ ویکسین لی ہے ۔ڈاکٹر موصوف نے بتایا کہ ویکسین پہلے لوگوں کو وائرس سے بچاتی ہے جبکہ اس سے وائرس کا پھیلا ئو بھی کم ہو جاتا ہے ۔ڈاکٹر شلندر نے سماج کے معززین ،سماجی کارکنوں اور فلاحی تنظیموں سے اپیل کرتے ہوئے کہاکہ کووڈ ویکسین کے سلسلہ میں لوگوں کو بیدار کیا جائے تاکہ وائرس کے پھیلائو کو کم کیاجاسکے ۔
 
 

میونسپلٹی پونچھ نے جراثیم کش ادویات کا چھڑکائو کیا 

حسین محتشم
پونچھ//پونچھ میونسپلٹی نے کورونا وائرس (COVID-19) کے پھیلاؤ سے نمٹنے کے لئے محلہ پرانی پونچھ وارڈ نمبر 16 میں حفاظتی اقدام اٹھاتے ہوئے پورے محلہ میں جراثیم کُش ادویات کاچھڑکاؤ کیا اور خصوصی صفائی مہم چلائی۔اس مہم کے دوران میونسپل کمیٹی پونچھ کے صدر ایڈوکیٹ سنیل کمارشرما ، کونسلر نریش چندر ، سنجے کھجوریا ، پرویندر سنگھ اور بلدیہ کے دیگر کارکنان موجود تھے۔کشمیر عظمیٰ سے بات کرتے ہوئے پونچھ میونسپلٹی کے صدر نے کہا کہ ان کے محکمہ کے کارکنان مختلف عوامی مقامات پر  جراثیم کُش ادویات کاچھڑکاؤ کرنے کے ساتھ ساتھ خصوصی صفائی ستھرائی کر رہے ہیں تاکہ کوڈ 19کا پھیلائو نہ ہو ۔انہوں نے کہا ان کی کوشش ہے کہ کورونا انفکشن پر قابو پانے کے لئے تمام تر کوششیںکر کے پونچھ کو اس وبائی مرض سے پاک کریں۔ انہوں نے عوام سے اپیل کی کہ وہ گھر پر ہی رہیں اور اپنے گھر اور گردونواح میں صفائی برقرار رکھیں۔اس موقع پر خطاب کرتے ہوئے ، کونسلر نریش چندر (راج) نے عوام سے حکومت  کی جانب سے بتائے کئے احتیاطی تدابیر کی خلاف ورزی نہ کرنے اوراپنی اور دوسروں کی حفاظت کے لئے اپنے گھر میں رہنے کی اپیل کی۔
 
 

بیک ٹو ولیج کے سلسلہ میں انتظامیہ کا جائزہ اجلاس 

حسین محتشم
پونچھ//ضلع ترقیاتی کمشنر اندر جیت نے ضلع میں بیک ٹو ولیج پروگرام کے تحت شروع کی جانے والی ترقیاتی سرگرمیوں کی پیشرفت کا جائزہ لینے کے لئے متعلقہ افسران کے اجلاس کی صدارت کی۔اس موقع پرمعاون کمشنر ترقیات پونچھ ، ایس ایس پی پونچھ ، تحصیلدار منڈی ،ایکس ای این محکمہ تعمیرات عامہ ،ایکس ای این پی ایچ ای ،ایکس ای این محکمہ بجلی ،سی ای او پونچھ اور تمام بلاک ڈیو لپمنٹ افسران موجود رہے۔اس دوران ضلع ترقیاتی کمشنر کو جانکاری دیتے ہوئے افسروں نے بتایا کہ بیک ٹو ولیج کے تحت زیادہ تر کام مکمل ہوچکے ہیں جبکہ باقی تکمیل کے مختلف مراحل پر ہیں، اس کے علاوہ یہ بھی بتایا گیا کہ اکثر کا موں کے ٹینڈر نگ کی گئی ہے جبکہ کچھ کی ٹینڈرنگ جاری ہے۔ ڈی ڈی سی نے متعلقہ افسران کو ہدایت کی کہ وہ  فوری طور پرٹینڈرنگ کے عمل کو مکمل کرنے اور جولائی تک تمام شناخت شدہ کاموں کے ٹینڈرنگ کو یقینی بنائیں۔ انہوں نے متعلقہ افسران پر زوردیا کہ وہ نئے اور پرانے دونوں پورٹل کی زیر التو شکایات کا فوری جواب دیں۔
 
 

پیوپلس مومنٹ کا پونچھ میں ٹراما سنٹر قائم کرنے کا مطالبہ 

حسین محتشم
پونچھ//جموں کشمیر پیوپلس مومنٹ پونچھ اکائی کی جانب سے ایک احتجاجی مظاہرہ انجینئر ردم پریت سنگھ ضلع صدر کی قیادت میں محلہ اعلیٰ پیر پونچھ میں کیا گیا۔اس احتجاج کے دوران پارٹی کے نوجوان لیڈروں نے احتیاطی تدابیر پر عمل کرتے ہوئے نعرے بازی کی اور پونچھ میں ٹراما سینٹر کے قیام کا مطالبہ کیا۔اس موقعہ پر موجود پارٹی لیڈر شکیل احمد نے تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ راجوری کے لمبیڑی میں ٹراما سنٹر کا قیام کیا جا رہا ہے لیکن اس کی سب سے زیادہ مستحق سرحدی ضلع پونچھ کی عوام کو نظر انداز کیا جا رہا ہے۔انہوں نے کہا کہ پونچھ میں جہاں طبی سہولیات کا فقدان ہے وہیں دیگر سہولیات بھی یہاں کی عوام کو میسر نہیںہیں۔انہوں نے کہا کہ کئی سرکاری عمارتوں پر کڑوروں روپئے خرچ کر کے سیاسی جماعتوں نے اپنی ذاتی مفاد کے لئے ان کو زیر التوا رکھا ہوا ہے۔انہوں نے یونیورسٹی کیمپس ڈینگلہ کی مثال دیتے ہوئے کہا کہ اس عمارت میں اس وقت آوارہ جانوروں کا ڈھیرہ لگا ہوا ہے جس کی وجہ سے وہ عمارت خستہ حال ہوتی جا رہی ہے۔انہوں نے فوری اس عمارت کی تعمیراتی مکمل کر کے اس میں یونورسٹی کی کلاسیں شروع کرنے کا مطالبہ کیا۔انہوں نے انتباہ دیا کہ اگر فوری طور پر پونچھ میں ٹراما سنٹر کے قیام کا اعلان نہ کیا گیا تو وہ دوبارہ بڑی سطح پر احتجاج کریں گی اور تب تک احتجاج جاری رکھیں گے جب تک ان کے مطالبات پورے نہ کئے جائیں گے۔
 
 

انتظامیہ کووڈ کو کنٹرول کرنے کی ہرممکن کوشش کررہی ہے :ڈی سی 

حسین محتشم
پونچھ//ضلع ترقیاتی کمشنر پونچھ اندرجیت نے کہا کہ ضلع انتظامیہ پونچھ کووڈ کو کنٹرول کرنے کی ہر ممکن کوشش کررہی ہے ۔پونچھ میں منعقدہ ایک پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے موصوف نے کہاکہ 32دنوں کے لاک ڈئون کے بعد پونچھ میں تجارتی سرگرمیاں شرائط کے ساتھ شروع کی گئی ہیں۔کچھ ہی ادارے بند ہیں آہستہ آہستہ ان کو بھی کھولا جائے گا۔ انہوں نے کہا اس دوران ضلع میں نمونوں کی جانچ کے سلسلہ کو مزید بڑھایا گیا ہے،اس کے علاوہ ویکسی نیشن میں بھی تیزی لائی گئی ہیں ۔انہوں نے بتایا کہ اس وقت تک پونچھ میں کورونا کے فعال معاملات کی تعداد 945ہے اور صحت یابی کا فیصدہ81ہو گیا ہے جو جموں کشمیر میں اچھا مانا جاتا ہے۔انھوں نے بتایا کہ ضلع میںاس وقت 17کنٹین منٹ زون فعال ہیں،ضلع کی229پنچایتوں میں کوڈ کئیر سینٹر بنائے گئے ہیں جن میں اب ہر طرح کی سہولت فراہم کرنے کی کوشش کی جا رہی ہیں۔انہوں نے پنچایتوں کے لوگوں سے اپیل کی کہ اگر ان کی پنچایت میں کوئی کورونا مثبت ہے تو اسے کر سینٹر میں داخل کروائیں جہاں ماہر ڈاکٹر اور دیگر عملہ تعینات کیا گیا ہے۔انہوں نے کہا کہ ضلع میں کوڈ 19کو کنٹرول کرنے میں یہاں کی انتظامیہ بڑی حد تک عوام کے تعاون سے کامیاب ہوئی ہے ۔انہوں نے آگے بھی انتظامیہ کا تعاون کرنے کی عوام سے اپیل کی۔انہوں نے کہا کہ ضلع پونچھ میں بھی جلد اٹھارہ سال سے اوپر کے افراد کی ویکسی نیشن شروع کی جائے گی۔انہوں نے کہا کہ ضلع میں آکسیجن کی جتنی ضرورت ہے وہ اتنی دستیاب ہو رہی ہے۔
 
 
 

الحاج ڈاکٹر بشیر احمد بھٹی نہ رہے

سماجی سیاسی اور دینی شخصیات کا اظہار افسوس

حسین محتشم
پونچھ//سرحدی ضلع پونچھ کے قدیم معروف طبی معالج، مقبول طبیب وڈاکٹر الحاج بشیر احمد بھٹی سبکدوش سی ایم او طوی ل علالت کے بعد بدھ وار کو انتقال کر گئے آپ کی تدفین پونچھ کے قبرستان میںکی گئی ۔مرحوم کے انتقال پر سیاسی، سماجی و دینی شخصیات نے گہرے دکھ اور افسوس کا اظہار کیاہے۔مرحوم کے انتقال پر اظہار افسوس کرتے ہوئے الجمعیۃ الخیریہ کے جنرل سکریٹری مولاناشیراز انوری نے کہا کہ مرحوم ہردلعزیز ، غریب پرور، باکردار، با اخلاق اور طبی طور نرم و نازک جب کہ شرعی طور پر حساس مزاج اور فکر مند شخصیت کے مالک تھے۔ انھوں نے کہا کہ ڈاکٹر مرحوم مدارس اور اہلِ مدارس سے بے لوث محبت فرماتے تھے، تمام مدارسِ عربیہ کے ساتھ سال بھر معاونت کا سلسلہ جاری رکھتے جب کہ جامعہ امام محمد انورشاہ کشمیری سے آپ کی دینی محبت عروج پر تھی، موقع بموقع جامعہ کے طلبہ وطالبات کی خیریت دریافت کرتے اور راہ ملتے دستِ شفقت کے ساتھ ڈھیروں دعائیں دیتے تھے۔ مولانا نے کہا کہ جامعہ کی بنیادوں میں مرحوم اور ان کی جمیع دختران و فرزندانِ نسبتی کا مرکزی کردار ہے ۔انہوں نے کہا کہ الجمعیۃ مرحوم کے اہل خانہ، اعزاء واقارب کے ساتھ اپنے گہرے دکھ اور افسوس کا اظہارکرتی ہے کہ ہم سب سماج کے عظیم خادم سے محروم ہوگئے۔انہوں نے مرحوم کی جمیع دختران اور ان کے فرزندانِ نسبتی انجینئر سلیم بانڈے، شیخ نسیم سنیئر فارماسسٹ، غلام مصطفی منہاس، نواز راتھر، ڈاکٹر مقرب اور محمد ساجد کے ساتھ اظہار تعزیت کرتے ہوئے کہا کہ دکھ کی اس گھڑی میں وہ ان کے ساتھ برابر کے شریک ہیں۔کانگرس کے سینئر لیڈر جہانگیر میر، تاج میر، سابق کے اے ایس آفسر اور انجمن آل محمد ساتھرہ کے سرپرست اعلیٰ سید شوکت کاظمی، اکبر علی انصاری، سینئر لیڈر ایڈوکیٹ ندیم خان، سردار وسیم احمد خان، سابق ضلع ترقیاتی کمشنرسید انور حسین شیرازی،پرنسپل ڈگری کالج پونچھ سید مسرف حسین شاہ، پروفیسر محمد زمان، پروفیسر نجم بھٹ،کے اے ایس زبیر حسین،عبدالعزیز قرشی،ڈاکٹر منیر حسین، نجم جعفری،صدر انجمن خدام الحسین منگناڑ فیاض علی آروزو حیاتپوری،صدر انجمن جعفریہ پونچھ ماسٹر انور حسین ونتو،اعظم راتھر،لیکچررسجاد نقوی نے بھی اپنے اپنے تعزیتی بیان میں کہا ہے کہ وہ دعا گو ہیں کہ اللہ پاک مرحوم کو جنت الفردوس میں جگہ عطا فرمائے اور لواحقین کو صبر جمیل عطا فرمائے۔