مزید خبریں

مختلف برادریوں کے نمائندے لیفٹیننٹ گورنر سے ملاقی

سری نگر//مہاجن کمیونٹی ، ڈوگرہ کھتری صدر سبھا جموں اور اروڈہ بنس سبھا سمیت مختلف برادروں کے نمائندوں کے وفد نے آج راج بھون میں لیفٹیننٹ گورنر منوج سِنہا سے ملاقات کی۔وفد جس میں مہاجن کمیونٹی سے سریندر موہن گپتا، ڈوگرہ کھتری صدر سبھا سے  ید ھویر سیٹھی ،  رمیش اروڑہ صدر اروڑ بنس سبھا او رسماجی کارکن ارون گپتا شامل تھے نے لیفٹیننٹ گورنر کو ایک میمورنڈم پیش کیا او رانہیں درپیش مشکلات سے آگاہ کیا۔لیفٹیننٹ گورنر نے وفد کے اراکین کو بغور سنا اور انہیں یقین دِلایا کہ ترجیحی بنیادوں پر مسئلے کے مناسب ازالہ کریں گے۔
 
 
 

مرکزی سیکرٹری بجلی کا جموںوکشمیر میں پاور سیکٹر کے کام کا جائزہ 

 جموں//مرکزی سیکرٹری بجلی آلوک کمار نے جموں وکشمیر یوٹی میں پاور سیکٹر سے متعلقہ مختلف کاموں اور مسائل کی پیش رفت کا جائزہ لینے کے لئے ایک میٹنگ کی صدارت کی۔ابتداً ، پرنسپل سیکرٹری پی ڈی ڈی روہت کنسل نے جموںوکشمیر میں ڈسٹری بیوشن ، ٹرانسمیشن اور ہائیڈرو پروجیکٹس میں پاور سیکٹر کی پیش رفت پر تفصیلی پرزنٹیشن پیش کی۔دورانِ میٹنگ سیکرٹری موصوف کو یونین ٹریٹری میںبجلی کی مانگ او رکھپت کے بارے میں بھی جانکاری دی گئی۔میٹنگ میں بتایا گیا کہ بجلی کی خریداری کے واجبات کولیکوڈیڈکرنے کے لئے جے کے نے جی اِی این سی او ایس اور ٹی آر اے این ایس سی او ایس کو بجلی کی خریداری کے واجبات کو کلیئر کرنے کی خاطر مرکزی حکومت سے 11029.47کروڑ روپے کے قرضے حاصل کئے ہیں ۔ اِس کے علاوہ روہت کنسل نے سیکرٹری کو یہ بھی بتایا کہ مختلف تعمیلات کی گئی ہیں جن میں ترمیم شدہ ٹیرف ،پری پیڈ میٹرنگ ، بجلی کی خریداری کی اِصلاح کے ساتھ ساتھ 41781 ناد ہندگان کو بجلی کی سپلائی منقطع کردی گئی ہے۔ اس کے علاوہ 4106.63لاکھ روپے کے بقایاجات کی وصولی او روسیع معائینہ مہمات شامل ہیں۔میٹنگ کو جانکاری دی گئی کہ محصول کی وصولی میں 23.16 فیصدکا اِضافہ ہوا ہے جس میں گزشتہ سال 954 کروڑ روپے اور اس برس ستمبرکے آخیر تک1176 کروڑ روپے کی وصولی ہوئی ہے ۔روہت کنسل نے کہا کہ جے اینڈ کے پی ڈی ڈی کی بنیادی توجہ آمدنی میں اضافہ ، نقصانات کو کم کرنا اور محکمہ پاور کے ملازمین کی حوصلہ اَفزائی کرنا ہے جس کے لئے ایک پائلٹ ترغیبی سکیم ریونیو بڑھانے کی سکیم ( آر اِی ایس ) تجویز کی گئی ہے ۔سیکرٹری کو اِی گورنر / آئی ٹی اقدامات کے حوالے سے ڈسٹری بیوشن ٹرانسفارمروں کے ڈیجیٹائزیشن ڈیٹابیس ،100 فیصد فیڈر میٹرنگ کا حصول ، سٹیٹ آف دی آرٹ سسٹم کے ذریعے فیڈر ڈیٹا مانیٹرنگ ، جے کے پی ڈی ڈی کے 647 شہری فیڈر ،شکایات کے لئے پاور پورٹل اور صارفین کی دیکھ ریکھ کا مرکز کے بارے میں بتایا گیا ۔سیکرٹری موصوف نے پی ڈی ڈی کے آئی ٹی اثاثوں کو کامیابی سے مربوط کرنے کے لئے جے اینڈ کے پی ڈی ڈی کی تعریف کرتے ہوئے کہا کہ جے اینڈ کے نے پاور سیکٹر آئی ٹی کے حوالے سے بہت اَچھا کام کیا ہے۔سیکرٹری موصوف نے محکمہ کے آئی ٹی وِنگ کے کام ، اَفرادی قوت اور آلات کی دستیابی کے بارے میں بھی جانکاری حاصل کی۔ انہیں بتایا گیا کہ ڈیجیٹل ادائیگیوں میں کئی گنا اِضافہ ہوا ہے اور جموںوکشمیر ڈیجیٹل ادائیگیوں میں 278 فیصد اِضافے کے ساتھ پورے ہندوستان میں تیسرے نمبر پر ہے۔میٹنگ کو بتایا گیا کہ 1400 میگاواٹ تکمیل کے قریب ہے۔ پکل ڈل (100 میگاواٹ ) ، رتلے(850میگاواٹ) اور کیرو (624 میگاواٹ) زیر تعمیر ہیں جبکہ اِس سال تاریخی مفاہمت نامے پر بھی دستخط کئے گئے۔سیکرٹری کو بتایا گیا کہ کشمیر کے پانپور ٹائون شپ میں9 میگاواٹ کا سولر پاور پلانٹ قائم کیا جارہا ہے ، گریز کو روشن کرنے کے لئے کشن گنگا ڈیم سمال ہائیڈل پروجیکٹ بھی زیر تعمیر ہے ۔ اِس کے علاوہ 12 میگاواٹ کا چھوٹا ہائیڈرو پاور پروجیکٹ کرناہ میں ہے۔زیر تعمیر 100 سال پرانا ورثہ موہرا پروجیکٹ جو 1902 میں تعمیر کیا گیا تھا ،کو بحال کیا جارہا ہے ۔پی ڈی ڈی کے ٹرانسمیشن سیکٹر پر بحث کرتے ہوئے بتایا گیا کہ جموں وکشمیر نے گزشتہ دو برسوں میں 150 فیصدترقی دیکھی ہے ۔ 1947ئسے 2019ء تک گزشتہ 70 برسوں کے دوران جموںوکشمیر میں 8394 ایم وی اے ٹرانسمیشن کی گنجائش تھی اور اپریل 2019ء سے 31؍ مارچ 2022 ء تک مزید 3806 ایم وی اے شامل کیا جائے گا۔میٹنگ کو یہ بھی جانکاری دی گئی کہ گزشتہ کئی برسوں سے غیر فعال یا اِلتوأ میں پڑے منصوبوں کو تیزی سے بحال کیا گیا ہے اور مختلف علاقوں کے کل 82 منصوبوں کو یوٹی میں بحال کیا جائے گا۔میٹنگ آئی پی ڈی ایس، پی ایم ڈی پی ۔ یو اور آر ، ڈی ڈی یو جے وائی اور دیگر مرکزی معاونت والی سکیموں کے تحت کئے گئے منصوبوں پر بھی تفصیل سے تبادلہ خیال ہوا۔اس سے قبل یہاں پہنچنے پر سیکرٹری نے جے کے پی ٹی سی ایل کے 140 ایم وی اے ، 132/33جی ایس ایس راولپورہ ٹرانسمیشن لائن مینٹیننس ڈویژن دوم کا معائینہ کیا ۔سیکرٹری کو بتایا گیا کہ گرڈ سب سٹیشن سری نگر شہر کے جنوبی علاقوں کے صارفین کی مطلوبہ مانگ کو پوری کی جاتی ہے۔اِس موقعہ پر سیکرٹری نے مختلف حصوں کا معائینہ کیا اور سٹیشن پر نصب آلات کے بارے میں بھی دریافت کیا۔سیکرٹری نے یہاں3X50 ایم وی اے ، 132/33 جی آئی ایس  ٹینگہ پورہ کی تعمیراتی سائٹ کا بھی دورہ کیا۔سیکرٹری نے سٹیشن کے مختلف حصوں کا معائینہ کیا او رسٹیشن کی تکمیل کی ٹائم لائن کے بارے میں دریافت کیا۔اِس موقعہ پر انہیں بتایا گیا کہ 50ایم وی اے ، 132/33پاور ٹرانسفارمرکی سپلائی ، 33کے وی  جی آئی ایس آلات کی فراہمی ، سی اینڈ آر پینلز وغیرہ کی سپلائی موصول ہوئی ہے ۔ اِس کے علاوہ سائٹ پر پاور ٹرانسفارمروں کی تنصیب کی گئی ۔
 
 
 

کشتواڑ میں پکل ڈول بجلی پروجیکٹ کا دورہ کیا

کشتواڑ // مرکزی پاور سکریٹری آلوک کمار نے 1000 میگاواٹ کے پکل ڈل ہائیڈرو الیکٹرک پروجیکٹ کے ڈیم سائٹ کا دورہ کیاجو کہ سی وی پی پی ایل ضلع کشتواڑ کے درنگدھوران میں زیر تعمیر ہے تاکہ ڈیم کمپلیکس میں جاری تعمیراتی کاموں کا معائنہ کیاجاسکے۔مرکزی سکریٹری کے ساتھ پرنسپل سکریٹری بجلی روہت کنسل، سی ایم ڈی این ایچ پی سی ابھے کمار سنگھ، مرکزی جوائنٹ سیکرٹری پاور وشال کپور اور پی ڈی ڈی کے دیگر افسران تھے۔مرکزی سکریٹری نے منصوبے کی ترتیب کے بارے میں مختصر جائزہ لینے کے بعد موڑ سرنگ پر جاری تعمیراتی کاموں کا معائنہ کیا۔ انہوں نے منصوبے کے تحت جاری کاموں پر پیش رفت کی رفتار پر اطمینان کا اظہار کیا۔انہوں نے متعلقہ افراد سے کہا کہ اس بات کو یقینی بنائیں کہ کوفر ڈیم اور کنکریٹ فیس راک فل ڈیم پر تعمیراتی کام جلد از جلد شروع کیا جا سکے تاکہ منصوبے کو مقررہ وقت میں مکمل کیا جا سکے۔ انہوں نے کہا کہ اس منصوبے کی تکمیل سے نہ صرف بجلی کی موجودہ پیداوار میں اضافہ ہوگا بلکہ یہ ضلع اور مرکز کے زیر انتظام علاقوں کی ترقی اور ترقی میں بھی بہت زیادہ حصہ ڈالے گا۔انہوں نے امید ظاہر کی کہ خاص طور پر کشتواڑ میں اور عام طور پر جموں و کشمیر میں بجلی کے منصوبے مقامی لوگوں کو روزگار فراہم کرنے میں اہم کردار ادا کریں گے۔
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 

اڑھائی کنال اراضی پر پھیلی بھنگ کی فصل تباہ

 ایم ایم پرویز
رام بن// رام بن پولیس نے بدھ کے روز رام بن کے بالیہوٹ گاؤں میں 2.5 کنال اراضی پرپھیلی بھنگ کی کاشت کو تباہ کردیا۔پولیس ذرائع نے بتایا کہ ایس ایچ او تھانہ رام بن نے معتبر ذرائع سے معلومات حاصل کیں کہ ایک شخص دھرم سنگھ ولد سکھ رام ساکن بالیہوٹ  رام بن نے اپنے کھیتوں میں بھنگ کی غیر قانونی طریقے سے کاشت کی ہے۔اطلاع ملنے کے بعد ایس ایچ او تھانہ رام بن اور نائب تحصیلدار کی قیادت میں ایک گاؤں بالیہوٹ پہنچا اور وہاں ڈھائی کنال زمین پر بھنگ کے پودے غیر قانونی طور پر کاشت کیے گئے پائے۔ضروری قانونی طریقہ کار پر عمل کرنے کے بعد مجسٹریٹ نے غیر قانونی طور پر کاشت کی جانے والی بھنگ کوتباہ کرنے کے لیے پولیس کو موقع پر احکامات جاری کیے۔پولیس نے دھرم سنگھ کے گھر کی تلاشی بھی لی اور 3 کلو بھنگ برآمد کی۔پولیس نے بتایا کہ ایف آئی آر نمبر 167 2021زیردفعہ 8/20 این ڈی پی ایس ایکٹ کے تحت تھانہ رام بن میں درج ہے۔اس معلومات پر ایک مقدمہ ایف آئی آر نمبر 167/2021 زیردفعہ 8/20 NDPS ایکٹ پولیس اسٹیشن رام بن میں درج کیا گیا۔تاہم دھرم سنگھ ابھی تک فرار ہے اور اسے گرفتار کرنے کی کوششیں جاری ہیں۔
 
 
 
 

ڈوڈہ ضلع میں 4 لاکھ سے زائد ٹیکے لگائے گئے 

بدھ کو کوئی نیا کیس نہیں، 8 مریض صحتیاب 

اشتیاق ملک
ڈوڈہ //ڈوڈہ ضلع میں بدھ کو کورونا معاملات کا کوئی نیا کیس سامنے نہیں آیا ہے تاہم 8 مریض صحتیاب ہوئے ہیں جبکہ ضلع میں 4 لاکھ سے زائد افراد کو ٹیکے لگائے گئے ہیں۔ اطلاعات کے مطابق بدھ کے روز ڈوڈہ ضلع سے کوؤڈ 19 کا کوئی نیا معاملہ سامنے نہیں آیا ہے تاہم قرنطینہ میں رکھے گئے 8 مریض صحتیاب ہوئے ہیں۔اس طرح سے ضلع میں شفایاب ہوئے مریضوں کی مجموعی تعداد 7618 و فعال کیسوں کی تعداد سمٹ کر 50 پہنچ گئی ہے۔ضلع میں اب تک کوؤڈ 19 سے 133 افراد فوت ہوئے ہیں اور 402243 ٹیکے لگائے گئے ہیں۔
 
 
 
 

سی سی ٹی وی کیمرے و سخت حفاظتی انتظامات بھی بے سود

کشتواڑ قصبہ میں چوری کی بڑھتی وارداتوں سے عوام پریشان ،ایک اور دکان کا صفایا

 عاصف بٹ
کشتواڑ//قصبہ کشتواڑ میں گزشتہ کئی ماہ سے چوری کی مسلسل وارداتیں رونما ہورہی ہیںجسکے سبب قصبہ کی عوام میں کافی تشویش پائی جارہی ہے۔ منگل کی شب کو قصبہ کے بیچ سخت حفاظت والے علاقے کشتواڑ پولیس تھانہ سے محض200 میٹر کی دوری پر آئی ٹی آئی کے قریب  چوری کی وارداتیں انجام دی گئیں اور چور دوکان سے ہزاروں روپے کا سامان اڈالے گئے۔کشمیر عظمیٰ کو ملی تفصیلات کے مطابق کریانہ کی ہول سیل وکان کے تالے صبح ٹوٹے پائے گئے جسکے بعد د کان مالک نے پولیس کو اسکی اطلاع دی جبکہ ساتھ میں قریبی د کانوں کے بھی تالے ٹوٹے پائے گئے تھے جسکے بعد پولیس نے جائے واردات پر آکر معاینہ کیااور تحقیقات شروع کردی ۔چوری کی پوری واردات دکان کے اندرلگے سی سی ٹی وی کیمرے میں قید ہوگئی ہے۔ چور نے دکان کے اندر سے زعفران و دیگر قیمتی سامان چرا لیا۔مقامی لوگوں نے تشویش  ظاہر کرتے ہوئے کہا کہ اس سے قبل بھی قصبہ کے اندر کئی مرتبہ  چوری کی وارداتیں انجام دی جاچکی ہیں لیکن آج تک پولیس چوروں کو  پکڑنے میں ناکام ثابت ہوئی۔مقامی لوگوں نے بتایا کہ قصبہ کے اندر سی سی ٹی کیمرے نصب کئے گئے ہیں لیکن انکے باوجود چوری کی ورداتیں انجام دی جاتی ہیں۔ اگرچہ پولیس و سی آئی ایس ایف کی نفری کو رات بھر تعینات کیا جاتا ہے لیکن باوجود اسکے چور انکے سامنے چوری کی وارداتوں کو انجام دیتے ہیں جس سے حفاظتی انتظامات پر سوال کھڑے ہوجاتے ہیں۔لوگوں نے چوروں کو جلد از جلد پکڑنے کی مانگ کی ہے۔
 
 
 

سوچھ بھارت ابھیان کی کارکردگی پر سوالیہ نشان | منی بس سٹینڈکشتواڑ میں گندگی کے ڈھیر،عوام کا جینا دوبھر

 عاصف بٹ 
کشتواڑ//جہا ں ریاستی سرکار شہروں کو صاف و شفاف بنانے کے بڑے بڑے دعوے کرتی ہے اور آئے روز بڑے بڑے پروگرام منعقد کئے جاتے ہیں تاکہ عوام اپنے آس پاس کو صاف ستھرا رکھیںلیکن قصبہ کشتواڑ کے زمینی حقایق بالکل اسکے برعکس ہیں۔ قصبہ میں ہر گزرتے دن کے ساتھ گندگی کے ڈھیر مزید بڑھتے جا رہے ہیں جس کی طرف انتظامیہ کوئی خاص توجہ نہیں دے رہی ہے اور صرف بیان بازی تک ہی اپنے دعوئوں کو محدود کرکے رکھتی ہے۔قصبہ کے مرکز میں واقع منی بس سٹینڈ کے گردونواح کی عوام گندگی کے ڈھیر سے تنگ آچکی ہے۔اگرچہ انھوں نے کئی مرتبہ گندگی کو کسی دوسری جگہ منتقل کرنے کی مانگ کی لیکن انکی ان مانگوں پر کوئی توجہ نہیں دی جاتی ہے ۔مقامی د کانداروں نے بتایا منی بس سٹینڈ،جو گاڑیوں و مسافروں کی سہولت کیلئے ہوتا ہے وہاںمیونسپل کمیٹی پورے قصبہ سے کوڑا کرکٹ جمع کرکے ڈال دیتی ہے جس کی وجہ سے یہاں ہر وقت مویشی و کتے موجودرہتے ہیں جس سے عام عوام ہر وقت خطرہ لاحق رہتا ہے جبکہ اب محکمہ کے ملازمین گندگی کو کوڑے دان میں جلا ڈالتے ہیں جسکے سبب دھواں اٹھتا ہے جو انسانی صحت کیلئے مضر ہے۔ انھوں نے کئی دفعہ متعلقہ عہدیداروں سے بات بھی کی لیکن ان کی طرف سے کوئی خاص توجہ نہیں دی جا رہی ہے۔انہوںنے ضلع انتظامیہ سے اپیل کی کہ وہ ہ جلد اس مسئلہ کو حل کریں تاکہ لوگوں کو مشکلات سے دوچار نہ ہونا پڑے۔مسعود احمد نامی شہری نے بتایا کہ چند ہفتہ قبل نائب صدر میونسپل کمیٹی نے منی بس سٹینڈکو بہتر بنانے کیلئے کئی لاکھ روپے کے فنڈس واگزارہونے کا کہا تھا لیکن لگتا نہیں کہ پیسے کہیںصرف ہورہے ہیں،گندگی کے ڈھیر وارڈوں سے جمع کرکے بس سٹینڈ میں پھینکے جاتے ہیں جس کے نتیجہ میں ہر وقت عفونت رہتی ہے اور یوں مسافر و عام لوگوں کا جینا دوبھر ہوچکا ہے ۔ انھوں نے انتظامیہ سے فوری مداخلت کی اپیل کی ہے اور گندگی کے ڈھیروں کو دوسری جگہ منتقل کرنے کی مانگ کی ہے۔
 
 
 

جموں چیمبر وفد کی جے کے بینک چیئرمین سے ملاقات،توسیع پر مبارکباد

؎سرینگر //جموں چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری (جے سی سی آئی) کے ایک وفد نے بینک کے کارپوریٹ ہیڈ کوارٹر میں جے اینڈ کے بینک کے چیئرمین اور ایم ڈی آر کے چھبر سے ملاقات کی تاکہ کاروباری برادری کو درپیش مسائل اور آگے کے راستے پر تبادلہ خیال کیا جا سکے۔ وفد نے انہیں ریزرو بینک آف انڈیا (آر بی آئی) کی جانب سے سی ایم ڈی کے عہدے میں مزید چھ ماہ کی توسیع پر مبارکباد بھی دی۔میٹنگ کے دوران سی ایم ڈی آر کے چھبرکے ہمراہ صدر (قانون) ڈاکٹر اشرف علی ، صدر و سپیشل سیکریٹری سی ایم ڈی کرنجیت سنگھ اور صدر (کریڈٹ) انل دیپ مہتا تھے جبکہ صدر جے سی سی آئی ارون گپتا کی قیادت میں وفد میں سینئرنائب صدر انل گپتا ،سیکریٹری جنرل گورو گپتا اور سیکریٹری راجیش گپتاتھے۔ سی ایم ڈی کو ان کی توسیع پر مبارکباد دیتے ہوئے وفد نے کہا کہ انہوں نے بینک کے مختلف اسٹیک ہولڈرز خاص طور پر کاروباری برادری کے ساتھ بروقت رسائی کے ذریعے منافع اور استحکام کی طرف بینک کو محفوظ طریقے سے نکال کر اپنی قیادت کی صلاحیت کو عملی طور پر ثابت کیا ہے۔ وفد کے اراکین نے اپنے سینئر مینجمنٹ ایگزیکٹوز کے ساتھ سی ایم ڈی کی قیادت میں بینک کے آؤٹ ریچ پروگرام کو بھی سراہا۔ بینک کی عالمی معیار کی بینکاری خدمات کے علاوہ بلاتعطل مالی اعانت کی روشنی میں صدر جے سی سی آئی نے عوام بالخصوص کاروباری برادری سے اپیل کی کہ وہ جے اینڈ کے یو ٹی کے اہم مالیاتی ادارے کے ساتھ اپنے تعلقات کو مزید مضبوط کریں۔تاہم وفد نے جموں کی کاروباری برادری سے متعلق کچھ مسائل بھی اٹھائے اور یہ بھی تجویز کیا کہ آپریٹو سطحوں پر کسٹمر سروس کو بہتر بنانے اور مزید جوابدہ بنانے کی ضرورت ہے۔وفد کو ان کی مبارکباد کے لیے شکریہ ادا کرتے ہوئے سی ایم ڈی نے انہیں یقین دلایا کہ ان کی تجاویز اور زیر بحث مسائل کو بینک میرٹ پر غور کرے گا اور وقت کے ساتھ حل کیا جائے گا۔
 
 

ریاسی میںامسال ستمبرماہ میںآواس یوجناکے تحت 707 گھر مکمل   

مکانات کی تکمیل کیلئے مستحقین میں7 کروڑ روپے تقسیم کئے گئے 

ریاسی//ایک بڑی کامیابی کی نشاندہی کرتے ہوئے رواں سال ستمبر کے مہینے میں پردھان منتری آواس یوجنا گرامین (PMAY-G) کے تحت ضلع ریاسی میں 707 مکانات مکمل ہوچکے ہیں جبکہ مستحقین میں 7.00 کروڑ ان مکانوںکی تکمیل کیلئے تقسیم کئے گئے ہیں۔ضلع کے دیہی اور شہری علاقوں میں پی ایم اے وائی سکیم کے تحت کامیابیوں کا جائزہ لینے کے لیے ڈپٹی کمشنر چرندیپ سنگھ کی طرف سے بلائے گئے اجلاس میں یہ بات بتائی گئی۔اجلاس نے مزید بتایا کہ سکیم کے آغاز کے بعد سے ضلع کے تمام بلاکوں میں کل 3700 مکانات مکمل ہو چکے ہیں اور باقی 6015 پر کام جاری ہے۔بلاک چسانہ میں 177 گھر مکمل ہو چکے ہیں۔ بلاک مہور میں 156 ، بلاک گلاب گڑھ میں 136،بلاک تھورو میں 105 ، بلاک ارناس میں 40، بلاک پونی میں 44 اور بقیہ بلاکوں میں 49 تعمیر کیے گئے ہیں۔سکیم کے رہنما خطوط کے مطابق فنڈز ڈی بی ٹی موڈ کے ذریعے مستحقین کو منتقل کیے جاتے ہیں جب فیلڈ افسران گھروں کو جیو ٹیگ کرتے ہیں۔ گھر کی تعمیر کی سکیم کے تحت ہر اہل مستحقین کو 130000 روپے کی کل رقم فراہم کی جاتی ہے۔ضلع نے 1.25 کروڑ روپے کے فنڈز کی منتقلی کے احکامات بھی جاری کیے ہیں جو جلد ہی مستحقین میں تقسیم کیے جائیں گے۔میٹنگ کے دوران ڈی سی نے دیہی اور شہری علاقوں میں سٹیج وار جسمانی اور مالی پیش رفت کا جائزہ لیا۔انہوں نے شہری علاقوں میں کام کرنے والے بی ڈی اوز اور افسران کو ہدایت کی کہ وہ فیلڈ میں باقاعدگی سے دورے کریں تاکہ گھروں کی پیش رفت کی نگرانی کی جا سکے تاکہ اس سال کے آخر تک تمام گھروں کی تکمیل کو یقینی بنایا جا سکے۔ انہوں نے کہا کہ  سکیم سے متعلق ہر قسم کی معلومات کو عوامی ڈومین میں رکھنا ضروری ہے تاکہ شکایات کو کم کیا جا سکے۔میٹنگ میںآواس پلس کے رہ چکے زمرے کے تحت سروے کیے گئے گھرانوں کی حیثیت پر مفصل بحث کی گئی جس کے لیے ڈی سی نے اہلیت کے معیار کو جانچنے اورسکیم میں صرف حقیقی لوگوں کو شامل کرنے کی ہدایت کی۔
 
 
 

رام بن سے وفد اپنی پارٹی صدر الطاف بخاری سے ملاقی

بے روزگاری، غریبی اور آگ متاثرین کی بازآبادکاری مسائل کو اُجاگر کیا

 سرینگر//سیری رام بن سے شیتل سنگھ کی قیادت میں معزز سماجی کارکنان کے ایک وفد نے بدھ کے روز اپنی پارٹی دفتر لال چوک سرینگر میں پارٹی صدر سید محمد الطاف بخاری سے ملاقات کی۔ وفد نے خاص طور سے ضلع رام بن میں لوگوں کو درپیش مشکلات ومسائل سے الطاف بخاری کو آگاہ کیا جن میں غریبی، بے روزگاری کی بڑھتی شرح اور بنیادی سہولیات کا فقدان شامل ہے۔ وفد نے اِس بات پر افسوس ظاہر کیا کہ کمپنیاں ضلع رام بن کے قدرتی وسائل کا استعمال کر نے کے باوجود ضلع میں چلائے جارہے پن بجلی پروجیکٹوں میں مقامی نوجوانوں کو بھرتی عمل میں ترجیحی نہیں دے رہیں۔ انہوں نے کہاکہ حکومت ضلع میں غریبی کے سدباب کے تئیں غیر سنجیدہ ہے اور خطہ کو معاشی بحران سے نکالنے کے لئے کوئی اقدامات نہیں اُٹھائے جارہے۔ انہوں نے بتایاکہ ’’ضلع رام بن میں مختلف کمپنیاں جن میں IRCON,، ناردرن ریلویز اور دیگر اہم پروجیکٹوں پر کام کر رہی ہیں لیکن بدقسمتی سے ہنریافتہ ہونے کے باوجود مقامی نوجوانوں کو روزگار فراہم نہیں کیاجارہا۔ وفد نے اردپورہ والو مہو تحصیل کھڑی ضلع رام بن میں حالیہ بھیانک آتشزدگی کے متاثرین 32کنبوں کی بازآبادکاری کے لئے اپنی پارٹی صدر سے ذاتی مداخلت کی اپیل کی۔ وفد نے الطاف بخاری کے وژن وپالیسیوں کو سراہتے ہوئے جموں وکشمیر میں اپنی پارٹی قائم کرنے کے لئے اُن کا شکریہ ادا کیا۔ انہوں نے کہاکہ لوگ اپنی پارٹی کے حقیقت پسندانہ رویہ سے متاثر ہیں اور جموں وکشمیر کی ہمہ جہت ترقی کے لئے اُن کے منصوبوں کی تائید وحمایت کرتے ہیں۔ بخاری نے وفد کو بغور سننے کے بعد یقین دلایاکہ وہ اُن کی مشکلات ومسائل کو حل کرنے کے لئے ہرممکن مدد کریں گے اور پارٹی کی طرف سے اُن کو مکمل تعاون ملے گا۔
 

سرگواڑی کشتواڑ میں بیئر سیلر میٹ کا اہتمام

 کشتواڑ // فوج نے محکمہ زراعت کشتواڑ کے اشتراک سے بلاک ٹھکرائی کے گاؤں سرگواڑی میں بیئر سیلر میٹنگ کا اہتمام کیا تاکہ مقامی طور پر اگائے جانے والے بٹن قسم کے مشروم کی پہلی پیداوار کی مارکیٹنگ کی جاسکے۔ضلع کشتواڑ میں کاشتکار طبقے کی معاشی ترقی کے لیے فوج اور محکمہ زراعت کی طرف سے پہلی بار علاقے میں یہ نظام متعارف کرایا گیا۔پیسٹریائزڈ ھاد کے تھیلوں کے ساتھ سپون اور اس کی کاشت کے لیے دیگر مطلوبہ مواد کا اہتمام محکمہ زراعت نے کیا تھا اور آپریشن سدبھاونا کے تحت فوج نے کسانوں میں تقسیم کیا تھا۔تکنیکی رہنمائی منظور زرگر اے ای او پلمار اور ملک رفیع نان ای ای او انجول ٹھکرائی نے مشروم کے کاشتکاروں کو شروع سے لے کر آج تک فصل کی افزائش کے مختلف مراحل کے دوران فراہم کی۔پنچایتی نمائندوں نے اس زبردست کامیابی پر افسران کے کام کی تعریف کی۔ 52 کلو بٹن قسم کے مشروم کی اوسط پہلی پیداوار کو علاقے کے مشروم کاشتکاروں نے حاصل کیا اور خریداروں کو 200 روپے فی کلو کی خوردہ قیمت پر فروخت کیا۔
 
 
 

ڈی سی کٹھوعہ نے مہان پور میں عوامی شکایات کو سنا

کٹھوعہ //عوامی آؤٹ ریچ پروگرام کے ایک حصے کے طور پر ڈپٹی کمشنر کٹھوعہ راہل یادو نے بلاک دیواس کی صدارت کی جس میں لوگوں کی شکایات سننے کے علاوہ علاقے کے ترقیاتی منظر نامے کا جائزہ لیا گیا۔چیئرپرسن بلاک ڈیولپمنٹ کونسل مہان پور راج سنگھ ، سرپنچ ، پنچ اور مقامی لوگ موجود تھے۔اس پروگرام میں کئی افراد اور نمائندگان دیکھے گئے جن میں پی آر آئی کے ممبران اپنے مطالبات اور شکایات ڈی سی کے سامنے پیش کر رہے تھے۔شرکاء نے اپنے مطالبات کا میمورنڈم پیش کیا جس میں بہتر سڑک رابطہ ، بے پردہ علاقوں میں پینے کے پانی کی فراہمی اور بجلی کی بلا تعطل فراہمی شامل ہے۔پروگرام کے دوران اجاگر ہونے والے دیگر مسائل میں سلابھ کمپلیکس کی عمارت کی جلد تکمیل اور مہان پور میں سولر لائٹس کی خریداری ، PMAY گھروں کے لیے مستحق خاندانوں کو شامل کرنا ، پی ایس ہری پور کے لیے نئی سکول کی عمارت کے علاوہ الٹراساؤنڈ اور ٹراما ہسپتال میں ڈیجیٹل ایکسرے کی سہولت شامل ہے۔بی ڈی سی کی چیئرپرسن نے دھلمر میں ایلوپیتھک ڈسپنسری ، اشتہار اندراج کیمپوں کی فراہمی کے علاوہ ہموار موبائل نیٹ ورک کنیکٹوٹی اور بلاک مہان پور کے مختلف علاقوں میں آبپاشی کی مناسب پانی کی فراہمی کا مطالبہ پیش کیا۔ڈی سی نے متعلقہ محکموں کو موقع پر ہدایات جاری کیں کہ شرکاء کے پیش کردہ تمام مسائل کا وقتی حل نکالا جائے۔ڈی ڈی سی نے پی آر آئی کے نمائندوں اور متعلقہ محکموں کے افسران پر زور دیا کہ وہ مقررہ وقت میں مطلوبہ ترقیاتی اہداف کو حاصل کرنے کے لیے مل کر کام کریں۔انہوں نے پی ایم جی ایس وائی کے عہدیداروں پر زور دیا کہ وہ ٹھیکیداروں کو بلیک لسٹ کریں جو ترقیاتی منصوبوں کی مقررہ ٹائم لائن اور دیگر شرائط و ضوابط پر عمل نہیں کر رہے ہیں۔ انہوں نے یقین دلایا کہ آنے والے دنوں میں مزید آدھار اندراج کیمپ قائم کیے جائیں گے تاکہ بائیں علاقوں کو احاطہ کیا جاسکے۔ڈی سی نے متعلقہ افسران کو ہدایت کی کہ وہ 10 اکتوبر 2021 سے پہلے جل زندگی مشن کے تحت اسکیموں کا ڈی پی آر جمع کرائیں۔
 
 
 

پہلی نوراترا پر چھڑی پوجا کیلئے چھڑی مبارک کٹرہ کیلئے روانہ

 جموں//شیو سینا کی 39 ویں چھڑی یاترا شری ماتا ویشنو دیوی تک جموں سے رنگ برنگے جلوس کی شکل میں ڈھول کی دھڑکنوں کے درمیان روانہ ہوئی جس میں عقیدت مندوں کا ایک بہت بڑا ہجوم ماں بھگوتی کی تعریف اور شان میں بھجن گا رہا ہے۔یہاں یہ بات قابل ذکر ہے کہ یاترا کے جلوس کے آغاز سے پہلے مہاراشٹر اور دیگر ریاستوں کے شیو سینا پارٹی رہنماؤں سمیت عقیدت مندوں نے روایتی رسومات کے مطابق 'اکھنڈ جیوتی' اور 'چھڑی مبارک' کی پوجا کی۔ اس کے بعد تمام شیوسینک مذہبی شہر کٹرا کے لیے رنگا رنگ جلوس میں روانہ ہوئے جو کہ بسوں میں سوار ہونے سے پہلے وکرم چوک ، ڈوگرہ چوک ، ہری مارکیٹ ، رگھوناتھ بازار ، پرانی منڈی اور پریڈ سے گزرے۔ جموں و کشمیر یونٹ کے صدر منیش ساہنی نے میڈیا کو مخاطب کرتے ہوئے بتایا کہ ’’ چھڑی پوجا ‘‘ نوراترا کے پہلے دن شری ماتا ویشنو دیوی جی کی مقدس غار میں منعقد کی جائے گی اور اس کے علاوہ مزار کے مقدس مقدس مقام پر ماں بھگوتی کے درشن بھی ہوں گے ۔ساہنی نے کہا کہ وہ سب جموں و کشمیر یونین ٹیریٹری کے امن اور خوشحالی کے علاوہ جاری کوویڈ 19 وبائی مرض کے خاتمے کے لیے خصوصی طور پر دعا کریں گے۔
 
 
 

مرکزی وزیر کو برخاست کریں ، لکھیم پور واقعہ کیلئے ان کے بیٹے کو گرفتار کریں:کانگریس ترجمان

 جموں// کل ہند کانگریس کے ترجمان چرن سنگھ سپرا نے کہا ہے کہ وزیر اعظم نریندر مودی کو اپنے بیٹے مونو مشرا کے لکھیم پور (یوپی) میں مشتعل کسانوں کو کچلنے کے لرزہ خیز واقعے کے پیش نظر فوری طور پر مرکزی وزیر مملکت داخلہ اجے مشرا سے استعفیٰ مانگنا چاہیے۔پی سی سی ہیڈکوارٹر جموں میں ایک پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے سپرا نے کہا کہ لکھیم پور واقعے نے قوم کو برطانوی راج کی یاد دلادی جب ہندوستانیوں کو ان کی آزادی کے مطالبے کے لیے اس قسم کی سفاکیوں سے نمٹا جا رہا تھا۔ سپرا نے کہا کہ جس طرح کسانوں کی تحریک کوکچلا جا رہا ہے اور بی جے پی حکومت کے بعد بی جے پی لیڈروں خاص طور پر موجودہ وزرائے اعلیٰ اور مرکزی وزراء کی طرف سے کسانوں کو دھمکیاں دی جا رہی ہیں،وہ بہت بدقسمتی ہے اور اسے ہندوستانیوں کے خلاف برٹش راج کے برابر قرار دیا جا سکتا ہے۔موجودہ حکومت کو جمہوریت پر بدترین حملہ قرار دیتے ہوئے اسے ہٹلر راج کے مترادف قرار دیتے ہوئے سپرا نے کہا کہ جس طرح ہریانہ کے وزیر اعلیٰ نے کسانوں کو دھمکیاں دی ہیں اور مرکزی وزیر داخلہ اجے مشرا نے انہیں متنبہ کیا تھا اس کے بعد لکھیم پور واقعہ ، مکمل مایوسی اور گنڈا راج ظاہر کرتا ہے، بی جے پی حکومت میںکسانوں کو جسمانی طور پر کچلا جا رہا ہے کیونکہ ایف آئی آر میں مرکزی وزیر کے بیٹے کا نام ہے لیکن مجرم آزاد گھوم رہے ہیں جبکہ اپوزیشن کے اعلیٰ رہنماؤں کو حراست میں لے کر غیر قانونی طور پر گرفتار کیا جا رہا ہے۔ کیا یہ جمہوریت ہے؟ آج یہ کسانوں کے بعد تاجر ہیں اور اسی طرح ہر طبقے کو آہستہ آہستہ نشانہ بنایا جا رہا ہے۔گجرات کے اڈانی ہوائی اڈے سے کروڑوں روپے مالیت کی 3000 کلو گرام منشیات کی بھاری کھیپ کی ضبطی کا مسئلہ اٹھاتے ہوئے انہوں نے سوال کیا کہ وشاکھاپٹنم ہوائی اڈے کے قریب ایک بڑی منزل کے لیے بڑی کھیپ گجرات کے اڈانی ہوائی اڈے کے ذریعے کیوں لائی گئی؟ انہوں نے ایک سنگین مسئلے کی اعلیٰ سطح کی تحقیقات کا مطالبہ کیا اور اس ملک دشمن واقعہ میں ملوث تمام افراد کو سختی سے مقدمہ درج کرنے کی ضرورت ہے۔ یہ مودی حکومت کے تحت ہونے والی قوم کے خلاف ایک سنگین سازش ہے۔سپرا نے وادی کشمیر میں کل تین معصوم شہریوں کے بہیمانہ قتل کی شدید مذمت کی اور کشمیر میں ٹارگٹ اور سلیکٹڈ قتل کے سلسلے کو براہ راست وزارت داخلہ کے تحت انتہائی سنگین مسئلہ قرار دیا۔ انہوں نے اسے وزارت داخلہ کی سنگین ناکامی قرار دیا۔ انہوں نے جے کے پی سی سی کے سینئر رہنماؤں کے ساتھ سوگوار خاندانوں کے ساتھ گہری ہمدردی کا اظہار کیا اور مطالبہ کیا کہ مجرموں کی نشاندہی کی جائے اور ان کے ساتھ سختی سے نمٹا جائے۔ انہوں نے سوال اٹھایا کہ مرکز کے زیر انتظام یو ٹی حکومت کے تحت معصوم شہریوں کی حفاظت اور حفاظت کو یقینی بنانے میں ناکام رہا ہے۔ سپرا نے کہا کہ کانگریس پارٹی مودی حکومت کی آمرانہ حکومت کے خلاف لڑتی رہے گی اور شہریوں بالخصوص کسانوں ، بے روزگار نوجوانوں ، چھوٹے تاجروں اور عام لوگوں کے حقوق کا تحفظ کرے گی جو بی جے پی حکومت کی غلط پالیسیوں کی وجہ سے کچلے جا رہے ہیں۔
 
 
 

پی ڈی پی نے کسانوں کے قتل کی مذمت کی |  زرعی قوانین کو منسوخ کرنے کا مطالبہ دہرایا

جموں//اتر پردیش کے لکھیم پور کھیری ضلع میںکسانوں کی بہیمانہ ہلاکتوں پر اپنے غم کا اظہار کرتے ہوئے پیپلز ڈیموکریٹک پارٹی نے طاقت کا ناجائز استعمال کرتے ہوئے اس گھناؤنے جرم میں ملوث افراد کے خلاف کارروائی کا مطالبہ کیا۔پی ڈی پی کے جنرل سکریٹری سردار امریک سنگھ رین نے سردار سکھویندر کے ساتھ ایک مشترکہ پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ جو ویڈیو سوشل میڈیا پر وائرل ہوئی ہے،وہ اس کی واضح مثال ہے کہ کس طرح پرامن احتجاج کرنے والے کسانوں کو بی جے پی کے غنڈوں نے کاٹا۔مسٹر سنگھ نے الزام لگایا کہ مرکزی وزیر مملکت برائے داخلہ کے بیٹے نے کاشتکار قوانین کے خلاف احتجاج کرنے والے کسانوں پر ان کی گاڑی چلا کر انہیں ڈھٹائی سے قتل کیا ہے۔انہوںنے کہا "ذمہ داروں کے خلاف کارروائی کرنے کے بجائے ، وہاں کی پولیس نے اپوزیشن لیڈروں کو گرفتار کیا جو زخمی کسانوں کو تسلی دینے جا رہے تھے" ۔انہوں نے افسوس کا اظہار کیا اور بتایا کہ لکھیم پور کھیری واقعہ نے بی جے پی کو بے نقاب کر دیا ہے۔پی ڈی پی کے جنرل سکریٹری نے کہا کہ آج کسانوں کے ساتھ جو کچھ ہورہا ہے وہ انتہائی افسوسناک ہے ، کسانوں کی طرف سے ہندوستان کی ترقی اور ترقی میں بے پناہ شراکت دی گئی ہے ۔انہوں نے مرکز سے نافذ تین فارم قوانین کو فوری طور پر ختم کرنے کا مطالبہ کیا جبکہ آگے کا راستہ تلاش کرنے کے لیے کسانوں کے ساتھ تفصیلی بات چیت کا مطالبہ کیا۔ پی ڈی پی کے جنرل سکریٹری نے کہا کہ اب وقت آگیا ہے کہ مرکزی حکومت کو اپنی غلطی کا احساس ہوا اور کسانوں اور قوم کے مفاد میں قانون سازی کو واپس لے لیا جائے۔مسٹر رین نے کہا کہ جموں و کشمیر کے کسان مشتعل کسانوں پر ہونے والے مظالم کے لیے خاموش تماشائی نہیں رہیں گے۔ رین نے خبردار کیا کہ "جابرانہ طریقوں سے مشتعل کسانوں کی آواز کو دبانے کی کوشش نہ کریں"۔منگل کی شام کشمیر میں ایم ایل بندرو سمیت تین شہریوں کے قتل کی شدید مذمت کرتے ہوئے پی ڈی پی کے جنرل سکریٹری نے کہا کہ تشدد کسی بھی مسئلے کا حل نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ "تشدد کا یہ شیطانی چکر ختم ہونا چاہیے" اور انہوں نے افسوس کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ جموں و کشمیر میں قتل و غارت گری جاری ہے لیکن معاملات کے ذمہ دار دعویٰ کر رہے ہیں کہ جموں و کشمیر میں حالات معمول پر ہیں۔
 
 
 

سوانا کمپنی کا  ہرنوٹا اور باروٹا دیہات میں کسان آگاہی میلہ

بلاور//سوانا کمپنی نے ضلع کٹھوعہ کی تحصیل رام کوٹ کے ہرنوٹا اور باروٹا علاقے میں منعقد ہونے والے کسان میلے میں حصہ لیا۔ کمپنی کے سینئر آفیشل بشمول روٹاش چوہان (T.M) اور مکیش کمار (S.D.A) نے سوانا کمپنی کے اعلی نسل کے بیجوں پر پریزنٹیشن دی۔ انہوں نے کمپنی کے بیجوں کی اہم خصوصیات پر روشنی ڈالی ۔ ان کا کہنا تھا کہ یہ بیج کم خرچ ، کم وقت اور کم پانی میں زیادہ سے زیادہ پیداوار دیں گے۔ کمپنی کے ایک سینئر عہدیدار نے بتایا کہ "سوانا کے بیج اچھے ہیں اور ہر ایک کے لیے صحت مند بھی ہیں۔" اس کمپنی کے عہدیداروں نے گندم کے دو بیج بھی پیش کیے جو کہ کمپنی نے تیار کیے ہیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ "ایک کسان کو ایک ایکڑ اراضی میں 34 کلو گندم کا بیج استعمال کرنا پڑتا ہے ، جو کہ اعلی معیار اور ذائقہ میں بھی اچھا ہے"۔ آخر میں کمپنی کے عہدیداروں نے کسانوں کو مختلف اعلی معیار کے بیجوں کی تفصیلات دیں۔ 
 
 
 

 سبکدوش انجینئروںکو دوبارہ نوکری پر رکھنے کے فیصلہ کی مخالفت 

جموں//اپنی پارٹی یوتھ ونگ نے سرکاری محکموں میں سبکدوش انجینئروں کو دوبارہ نوکری پر رکھنے کے حکومتی فیصلے کی پرزور مذمت کی ہے اور مطالبہ کیا ہے کہ اِس کے بجائے بے روزگار انجینئروں کو روزگار فراہم کیاجائے۔ یہ مطالبہ پارٹی صدردفتر گاندھی نگر میں منعقدہ صوبائی سطحی میٹنگ سے خطاب کرتے ہوئے یوتھ ونگ لیڈران نے کیا۔ اس موقع پر نائب صدر یوتھ ونگ رقیق احمد خان نے کہاکہ جموں وکشمیر کے اندر بے روزگاری میں اضافہ ہوا ہے جبکہ روزگار کے مواقعے کم ہورہے ہیں۔ نوکریاں نہ ملنے کی واجہ سے تعلیم یافتہ نوجوان ذہنی تناؤ کا شکار ہیں۔ انہوں نے کہاکہ ایسی صورتحال میں حکومت کی طرف سے سبکدوش انجینئروں کو دوبارہ نوکریاں فراہم کرنا انتہائی بدقسمت آمیز ہے۔ انہوں نے مطالبہ کیاکہ حکومت فوری فیصلے پر نظرثانی کرے اور بے روزگار انجینئروں کو نوکریاں دی جائیں۔ یوتھ ونگ جنرل سیکریٹری ابہے بقایہ نے کہاکہ وادی چناب میں روزگار ایک بڑا مسئلہ ہے جہاں پر پروجیکٹوں میں نوجوانوں کو روزگار دینے سے انکار کیاجارہاہے۔ صوبائی کارڈی نیٹر یوتھ ونگ وپل بالی نے بھی اِس موقع پر جموں وکشمیر کے اندر نوجوانوں کو درپیش مسائل کو اُجاگر کیا ۔
 
 

نگروٹہ اسمبلی حلقہ میںترقی نام کی کوئی چیز نہیں :منجیت سنگھ 

جموں//اپنی پارٹی صوبائی صدر جموں منجیت سنگھ نے کہاکہ اسمبلی حلقہ نگروٹہ میں دو سیاسی جماعتوں کی دشمنی چیدہ ترقی کے لئے ذمہ دار ہے جس کی وجہ سے سماج ے کمزور طبقہ جات کو نظر انداز کیاگیاہے۔ خواتین ونگ صوبائی نائب صدر روپالی رانی کی طرف سے منعقدہ ایک میٹنگ سے خطاب کرتے ہوئے سابقہ وزیر منجیت سنگھ نے کہاکہ نگروٹہ میں سماج کے کمزور طبقہ جات سے تعلق رکھنے والے لوگوں کے لئے ترقی ابھی بھی ایک خواب ہے جن کی کہیں بھی سنوائی نہیں۔ انہوں نے دو سیاسی جماعتوں کی دشمنی کی وجہ سے لوگوں کو بنیادی سہولیات سے محروم رکھاجارہاہے، یہ جماعتیں خود کو جموں کا چمپئن کہتی ہیں مگر لوگوں کی اِنہیں کوئی فکر نہیں۔ انہوں نے کہا کہ لوگوں کے ساتھ امتیاز ترقیاتی کاموں میں مداخلت کی وجہ ہے ۔ لوگوں کے ساتھ امتیازی سلوک کیا جا رہا ہے اگر وہ ایک پارٹی سے تعلق رکھتے ہیں اور دوسری پارٹی اپنے علاقوں میں کاموں کی مخالفت کرتی ہے۔لیکن اپنی پارٹی بلا امتیاز ہر علاقے کی ترقی پر یقین رکھتی ہے چاہے اس کا تعلق حریف سیاسی جماعت سے ہو۔ لوگوں کو ترقی سے محروم نہیں ہونا چاہیے ، بلکہ ان کے ساتھ یکساں سلوک کیا جانا چاہیے اور ترقی کے مواقع فراہم کیے جانے چاہئیں۔اس موقع پر خطاب کرتے ہوئے صوبائی صدر ، خواتین ونگ ، جموں ، نمرتا شرما نے کہا کہ دور دراز علاقوں میں ترقی نہ ہونے کی وجہ سے دیہات میں خواتین کو مشکلات کا سامنا ہے۔موصوفہ نے کہاکہ لوگوں کو خاص طور پر نگروٹا حلقہ میں خواتین کو درپیش اہم مسئلہ ہے اور رہائشیوں کے درمیان ترقی کے حوالے سے انتخابی نقطہ نظر بنیادی تشویش ہے۔ریاستی ایس سی اسٹیٹ کارڈی نیٹر بودھ راج بھگت نے کہا کہ ایس سی کے لوگوں کو ان کی رہائشی کالونیوں میں ترقی کے حوالے سے اب بھی امتیازی سلوک کیا جا رہا ہے۔صوبائی صدر ایس ٹی ونگ جموں چوہدری شبیر کوہلی نے جموں ڈویلپمنٹ اتھارٹی کی طرف سے خانہ بدوشوں کو ہراساں کرنے پر تشویش کا اظہار کیا اور کہاکہ خانہ بدوش صدیوں سے اس سرزمین پر رہتے ہیں جسے جے ڈی اے نے اپنے قبضے میں لے رکھا ہے اور انہیں سرکاری محکمہ کی طرف سے بغیر کسی رحم کے بے گھر کیا جا رہا ہے جسے عوامی فلاح و بہبود کے لیے کام کرنا چاہیے۔
 
 
 

مرحوم قاسم سجاد کو چناب کے صحافیوں کا خراج

ڈوڈہ// چناب ویلی جرنلسٹ ایسوسی ایشن کے صدر نصیر احمد کھوڑا کی صدارت میں ایک ماتمی اِجلاس منعقد ہوا۔ جس میں بزرگ اردو صحافی اور روزنامہ شہاب کے ایڈیٹرو مالک قاسم سجاد کی موت پر دْکھ کا اظہار کیا گیا۔ایسوسی ایشن نے مرحوم کے اہل خانہ کے ساتھ تعزیت کا اظہار کیا۔اْنہوں نے بتایا کہ اردو کے صحافتی، ادبی اور علمی حلقے قاسم سجاد کے اچانک جدا ہونے سے سخت صدمے میں ہیں۔اْنہوں نے اللہ سے مرحوم کیلئے مغفرت اور لواحقین کو صبر جمیل کی دعا کی۔اجلاس میں جناب ویلی جرنلسٹ ایسوسی ایشن کے عہدیداروںکے علاوہ متعدد ٹی وی چینلوں و پرنث میڈیا سے وابستہ متعدد لوگوں نے شرکت کی جبکہ میڈیا سے وابستہ نمایندوں کے علاوہ،قلم کاروں،شعرا و سماجی تنظیموں سے وابستہ کی دیگر کئی شخصیات نے بھی شرکت کی اور مرحوم صحافی کے حق میں دعائے مغفرت اور دو منٹ کی خاموشی اختیار کی گئی اور مرحوم فاسم سجاد کی ادبی اور صحافتی خدمات کو یاد کیا گیا۔
 
 
 

لوپیڈ ایمپلائز فیڈریشن ڈوڈہ کا تعزیتی اجلاس

ڈوڈہ //لوپیڈ ایمپلائز فیڈریشن کے ضلع صدر نیاز احمد راہی کی صدارت میں ایک تعزیتی اجلاس منعقد ہوا جس میں ڈوڈہ سازان سے تعلق رکھنے والے محکمہ تعمیرات عامہ میں تعینات بطو رسینئراسسٹنٹ عادل رشید بٹ کی مختصر علالت کے بعد ہوئی موت پر گہرے دکھ کا اظہار کرتے ہوئے غمزدہ خاندان کے ساتھ تعزیت کی۔اجلاس کے دوران مقررین نے کہا کہ مرحوم کی موت سے جو خلا پیدا ہوا اس کا پر کرنا ناممکن ہے۔انہوں نے مرحوم کی ایصال ثواب کیلئے دعائے مغفرت کرتے ہوئے اہل خانہ کے ساتھ ہمدردی کا اظہار کیا۔
 

 مرکزی وزیر مملکت سماجی اِنصاف اور امپاورمنٹ کا دورہ بانڈی پورہ 

مختلف منصوبوں کا اِی۔ اِفتتاح کیا ، متعدد عوامی وفود سے ملے

بانڈی پورہ//مرکزی حکومت کے جاری عوامی رسائی پروگرا م کے حصے کے طور پر مرکزی وزیر مملکت برائے سماجی اِنصاف و امپاور منٹ رام داس اتھاولے نے آج بانڈی پورہ کا دورہ کیا۔وزیرمملکت نے کئی سرگرمیوں میں حصہ لیا، عوامی وفود سے ملاقات کی اور مختلف ترقیاتی منصوبوں کا افتتاح کیا۔دورے کے دوران وزیر نے سرکاری ڈسٹرکٹ ہسپتال بانڈی پورہ میں 6.75 کروڑ روپے کی لاگت سے نصب 1000 ایل پی ایم آکسیجن جنریشن پلانٹ کا باضابطہ طور پراِی۔ اِفتتاح کیا۔مرکزی وزیر مملکت نے 95 لاکھ روپے کی لاگت سے تعمیر شدہ گورنمنٹ مڈل سکول صدر کوٹ بالا کے کمپلیکس اور 95 لاکھ روپے کی لاگت سے گورنمنٹ پرائمری سکول سدو نارہ کے لئے تعمیر کردہ عمارتوں کا اِفتتاح کیا۔اُنہوں نے 37.65 لاکھ روپے کی لاگت سے ضلع بانڈی پورہ کے مختلف مقامات پر سات سب سٹیشنوں کا بھی اِی۔ اِفتتاح کیا ۔وزیر موصوف نے ضلع میں کئی پنچایت گھروں کا بھی اِفتتاح کیا جنہیں 9.62 لاکھ روپے کی لاگت سے دوبارہ تعمیر کیا گیا ۔وزیر موصوف نے گھریلو تشدد کے بارے میں ایک بھی جاری کی جو کہ مہیلا شکتی مرکز بانڈی پورہ اور وَن سٹاپ سینٹر بانڈی پورہ نے ضلعی اِنتظامیہ کے تعاون سے مرتب کی ہے۔بعد میں وزیر مملکت برائے سماجی اِنصاف و امپاورمنٹ نے عوامی وفود کے ساتھ تبادلہ خیال کیا جن میں ڈسٹرکٹ ڈیولپمنٹ کونسل بانڈی پورہ کے اراکین ، میونسپل کمیٹیوں اور کونسل کے چیئرمین ، بی ڈی سی ممبران اور دیگر پی آر آئی نمائندے ، تمام جے این ڈکے اوبی سی منچ کے ارکان،جسمانی طور پر معذور اَفراد کی انجمنوں کے نمائندے ، بڑھاپے کے نمائندے ، پنشنروں ،بے سہارا ، تحصیل رابطہ کمیٹی کے اراکین حاجن ، سٹیزن ویلفیئر فورم سنبل ، گجر بکروال یوتھ فورم، بڑھئی یونین کے علاوہ دیگر اَفراد شامل ہیں اور انہوں نے وزیر موصوف کو کئی مطالبات گوش گزار کئے۔وزیر مملکت نے تمام وفود اور اَفراد کو بغور سنا اور اور وفود کو یقین دِلایا کہ وہ ذاتی طور پر تمام مطالبات کو پور ا کریں گے تاکہ ان شکایات کے ازالے کے لئے اقدمات کئے جاسکیں۔مرکزی وزیر مملکت نے وفود کے ساتھ بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ مرکزی حکومت ہندوئوں ، مسلمانوں ، عیسائیوں سمیت ملک کی تمام برادریوں کے لوگو ںکی مجموعی ترقی کے لئے مختلف ترقیاتی منصوبوں پر عمل پیرا ہے جن میں سماجی طور پر پسماندہ کمیونٹیوں کا خاص ہاتھ ہے۔اُنہوں نے کہا کہ گوجر برداری ایس ٹی کوٹا سے فائدہ اُٹھا رہی ہے اور ان پر زور دیا کہ وہ مختلف سکیموں کا استفادہ کریں جس کا مقصد قبائلی برادریوں کو فائدہ پہنچانا ہے ۔ اُنہوں نے لوگوں پر زو ردیا کہ وہ مرکزی حکومت کی طرف سے شروع کی گئی مختلف سکیموں سے فائدہ اُٹھائیں۔اُنہوں نے کہا کہ ان کی وزارت کو پسماندہ طبقات کو بااختیار بنانے کی ذمہ داری سونپی گئی ہے جن میں درجہ فہرست ذاتیں دیگر پسماندہ طبقات ، بزرگ شہری ، خانہ بدوش اور نیم خانہ بدوش قبائل شامل ہیں۔ اُنہوں نے کہا کہ جموںوکشمیر یوٹی اور مرکزی حکومت نے سکل ڈیولپمنٹ اور روزگار کے مواقع پر خصوصی توجہ کے ساتھ کئی پروگرام شروع کئے ہیں جو کہ ہدف آبادی کی سماجی و معاشی حالت کو بد ل دیں گے۔وزیر اعظم کے نظرئیے کو شیئر کرتے ہوئے رامداس اتھاولے نے کہا کہ وزیر اعظم کا’’ سب کا ساتھ سب کا وِکاس‘‘کا نعرہ محض ایک نعرہ نہیں ہے بلکہ ایک مشن ہے جو کمزور طبقے سے تعلق رکھنے والے لوگوں کی سماجی معاشی حالت میں مثالی تبدیلی کو یقینی بنائے گا۔ رام داس اتھاولے نے کہا کہ وزیر اعظم چاہتے ہیں کہ ان کے وزراء زمینی صورتحال کا جائزہ لیں اور عوام سے رائے لیں اور اس بات کو یقینی بنانا چاہتے ہیں کہ لوگوں کی زندگی میں مثبت تبدیلی لائی جائے۔وزیر موصوف نے کئی طالبات جنہوں نے تعلیمی اور غیر نصابی سرگرمیوں میں مثالی کارکردگی دکھائی سے ملاقات کی۔ انہوں نے کہا کہ ایسی لڑکیوں کو حاصل کرنے والے معاشرے میں ترقی کی علامت ہیں۔وزیر نے ایس کے سٹیڈیم میں پیرا سپورٹس کوچنگ کیمپ کا بھی افتتاح کیا۔ اس موقعہ پر وزیر نے سرکاری محکموں کی جانب سے لگائے گئے مختلف سٹالوںکا بھی معائینہ کیا جن میں ان کی کارکردگی ، پیش رفت کے علاوہ کئی فلاحی سکیموں کو اجاگر کیا گیا۔بعد میں وزیرموصوف نے مدار میں سیکٹر ہیڈ کوارٹر بی ایس ایف کا بھی دورہ کیا اور بی ایس ایف جوانوں سے اِستفسار کیا۔ انہوں نے عوام کی زندگیوں اور ملک کی سا  لمیت کے تحفظ میں ان کی خدمات کو سراہا۔
     
 
 

مشیر بھٹنا گرکااسلامک یونیورسٹی میںتین روزہ بین الاقوامی ورکشاپ کا افتتاح  

 اونتی پورہ//لیفٹیننٹ گورنر کے مشیر راجیو رائے بھٹناگر نے اسلامک یونیورسٹی آف سائینس اینڈ ٹیکنالوجی میں سید منتقی میموریل کالج آف نرسنگ اینڈ میڈیکل ٹیکنالوجی کی سالانہ تقریبات کے موقع پر ’ کارڈیک نرسنگ پریکٹس میں برجنگ ایکسی لینس ‘ پر تین روزہ بین الاقوامی ورکشاپ کا افتتاح کیا ۔ ورکشاپ کے افتتاحی سیشن کے دوران خطاب کرتے ہوئے مشیر بٹھناگر نے کسی بھی معاشرے کے صحت کی دیکھ بھال کے شعبے میں خاص طور پر کووڈ 19 جیسے مشکل حالات کے دوران فرنٹ لائین پیشہ وروں ، خاص طور پر نرسوں کے دفاع کی پہلی لائین کے کردار کی تعریف کی ۔ اس موقع پر مشیر نے وبائی امراض کے دوران قبائلی صحت اور ذہنی صحت جیسے شعبوں میں صحت کی دیکھ بھال کرنے والے کارکنوں کی شراکت کو بھی نوٹ کیا ۔ مشیر بٹھناگر نے مزید کہا کہ کووڈ 19 کے دوران صحت کی دیکھ بھال کرنے والے کارکنوں کا کردار بڑھا اور انہوں نے بعض اوقات مریضوں کو بہت زیادہ جذباتی مدد بھی فراہم کی ۔ مشیر نے اپنی تقریر میں آئی یو ایس ٹی کی ترقی کو بھی سراہا اور یونیورسٹی کے کام کاج پر اطمینان کا اظہار کیا ۔ انہوں نے مزید کہا کہ یونیورسٹی یہاں معیاری تعلیم کی فراہمی میں بہت زیادہ صلاحیت رکھتی ہے ۔ مشیر نے اپنے خطاب میں کہا کہ لفٹینٹ گورنر کا وژن اعلیٰ تعلیم کے شعبے میں بڑیء کامیابیاںحاصل کرنا ہے اور نئی تعلیمی پالیسی اس سمت میں ایک راستہ ہے جسے یو ٹی میں موثر طریقے سے نافذ کیا جائے گا ۔ انہوں نے مزید کہا کہ حکومت یونیورسٹی کو انسٹی ٹیوٹ آف ایکسی لینس کے طور پر ترقی دینے کیلئے توسیع کرے گی ۔ وائس چانسلر آئی یو ایس ٹی پروفیسر شکیل احمد رومشو نے اپنے خطاب میں نرسوں کے انسانی سرمائے کے ساتھ ان کے کردار پر زور دیا کیونکہ وہ صحت کی دیکھ بھال کرنے والی ٹیم کے ساتھ مل کر علاج اور طبی طریقہ کار کو موثر طریقے سے انجام دیتے ہیں ۔ انہوں نے مزید کہا کہ نرسوں کو ان کے انسانی رابطے کے علاوہ تکنیکی صلاحیتوں سے بھی اچھی طرح آشنا ہونا چاہئیے اور آئی یو ایس ٹی اس شعبے سے پیشہ ور افراد کو استعداد بڑھانے کے مواقع فراہم کرنے میں پیش پیش رہ سکتا ہے ۔ سابق ایچ او ڈی ڈیپارٹمنٹ آف کارڈیالوجی سکمز ڈاکٹر خورشید اسلم جو کہ افتتاحی سیشن کے دوران کلیدی اسپیکر تھے ،نے کووڈ وبائی امراض کے درمیان کارڈیک ہیلتھ پر تبادلہ خیال کیا ۔ اس موقع پر ڈین اکیڈمک افئیرز پروفیسر اے ایچ مون اور رجسٹرار آئی یو ایس ٹی پروفیسر نصیر اقبال ، کالج کی پرنسپل عصمت پروین ، انسٹی ٹیوٹ کے فیکلٹی ، طلباء اور دیگر موجود تھے ۔ ورکشاپ کے دوران مشیر بٹھناگر کی جانب سے ایک سوینئیر بھی جاری کیا گیا ۔ 
 

 مرکزی وزیر مملکت قانون و اِنصاف کا راجوری کا دو روزہ دورہ مکمل

راجوری//مرکزی وزیر مملکت قانون و اِنصاف ایس پی سنگھ بگھیل کا راجوری کا دو روزہ دورہ مکمل کیاہے۔وزیر مملکت نے دوسرے دِن کے دورے کے دوران ٹائون ہال راجوری کا دورہ کیا اور وہاں اُنہوں نے شہر کو صاف ستھرا رکھنے اورسوچھ بھارت مشن میں حصہ لینے کے لئے صفائی کرمچاریوں کو ان کی انتھک ک?