مزید خبریں

مینڈھر میں متعدد ہینڈ پمپ خراب | محکمہ مشینری کی مرمت کیلئے سنجیدہ نہیں :عوام 

جاوید اقبال 
مینڈھر //مینڈھر سب ڈویژن کے متعدد علاقوں میں نصب کردہ ہینڈ پمپ گزشتہ کئی برسوں سے خراب پڑے ہوئے ہیں جس کی وجہ سے عام لوگوں کو پانی کی قلت کا سامنا کرناپڑرہا ہے ۔مقامی لوگوں نے بتایا کہ مینڈھر کیساتھ ساتھ سرحدی تحصیل بالاکوٹ ،منکوٹ ،ہرنی ودیگر علاقوں میں لوگوں کودرپیش پانی کی قلت کو دور کرنے کیلئے محکمہ کی جانب سے کئی ہینڈ پمپ نصب کئے گئے تھے لیکن مذکورہ پمپ کچھ عرصہ تک چلنے کے بعد خراب ہوگئے ہیں ۔انہوں نے محکمہ پر الزام عائد کرتے ہوئے کہاکہ ان خراب ہینڈ پمپوں کی مرمت کیلئے ابھی تک کوئی عملی قدم نہیں اٹھایا گیا ہے جس کی وجہ سے لوگوں کو قدرتی چشموں سے پانی لانا پڑرہا ہے ۔غور طلب ہے کہ مینڈھر سب ڈویژں میں کئی واٹر سپلائی سکیمیں بند پڑی ہوئی ہیں جبکہ میدانی و پہاڑی علاقوں میں نصب کردہ کئی ہینڈ پمپ بھی اب نا قابل استعمال ہیں ۔مکینوں نے مانگ کرتے ہوئے کہاکہ خراب پڑی ہوئی مشینری کی جلدازجلد مرمت کی جائے تاکہ لوگوں کو پانی جیسی بنیادی سہولیت مل سکے ۔
 
 

مینڈھر میں ٹریفک پولیس کی کارروائی | 30گاڑیوں کے چالان ،2ضبط کرلی گئی 

جاوید اقبال 
مینڈھر //جموں وکشمیر ٹریفک پولیس کی جانب سے مینڈھر سب ڈویژن میں مختلف مقامات پر ناکے لگا کر ٹریفک قوانین کی خلاف ورزی کرنے والوں کیخلاف کارروائی عمل میں لائی ۔مینڈھر میں ڈرائیوروں و ٹرانسپورٹروں کی جانب سے قاعدہ کی خلاف ورزی کے سلسلہ میں متعدد مرتبہ شکایتیں موصول ہو رہی تھی جس کے بعد حکام کی جانب سے سخت کارروائی شروع کی گئی ۔گزشتہ روز مینڈھر میں کی گئی کارروائی کے دوران 30گاڑیوں کے چالان کئے گئے جبکہ 2گاڑیوں کو ضبط بھی کرلیا گیا ۔ٹریفک پولیس نے لورزامات نہ ہونے کیساتھ ساتھ قاعدہ کی خلاف ورزی کرنے پر 9ہزار روپے جرمانہ بھی عائد کیا ۔آفیسران نے ٹرانسپورٹروں کو ہدایت جاری کرتے ہوئے کہاکہ وہ قانون کی خلاف ورزی نہ کریں جبکہ قاعدہ کیخلاف گاڑیاں چلانے والوں کیخلاف سخت کارروائی عمل میں لائی جائے گی ۔
 
 

پمروٹ پل ۔سانگلہ رابطہ سڑک کا حال بے حال 

بختیار کاظمی
سرنکوٹ// سرنکوٹ پمروٹ پل تا سانگلہ سڑک کی حالت نہایت ہی ابتر ہو ئی ہے جس پر گاڑیوں کا چلنا بھی محال ہو چکا ہے۔ اس سڑک کا ایک حصہ پمروٹ پل تا شاجی موڑ محکمہ پی ڈبلیو ڈی کے زیر تحت ہے اور ایک حصہ شاجی موڑ تا سانگلہ محکمہ پی ایم جی ایس وائی کے زیر تحت ہے۔ محکمہ کی عدم توجہی کی وجہ سے سڑک پوری طرح کھڈوں میں تبدیل ہو چکی ہے ۔مکینوں نے تعمیر اتی ایجنسیوں کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہاکہ پانچ برس بعد بھی رابطہ سڑک کی مرمت نہیں کی جاسکی جس کی وجہ سے مسافروں کیساتھ ساتھ ٹرانسپورٹروں کو شدید مشکلات درپیش ہیں ۔مکینوں نے بتایا کہ جب سڑک کی سہولیات میسر نہیں تھی تب بھی وہ پیدل ایک گھنٹے میں مسافت طے کرتے تھے لیکن اب سڑک کی موجود گی میں بھی گاڑیوں پر ایک گھنٹے میں ہی وہ مذکورہ مسافت طے کرنے پر مجبور ہیں ۔انہوں نے متعلقہ محکمہ پر الزام عائد کرتے ہوئے کہاکہ وہ رابطہ سڑکوں کی مرمت میں کوئی دلچسپی نہیں لی جارہی ہے ۔مقامی لوگوں نے ضلع انتظامیہ کیساتھ ساتھ جموں وکشمیر کے لیفٹیننٹ گورنر سے مانگ کرتے ہوئے کہاکہ رابطہ سڑک کی مرمت کیلئے عملی اقدامات اٹھائے جائیں ۔
 

سرنکوٹ میں سڑک حادثہ ،1ہلاک دو زخمی 

بختیار کاظمی
سرنکوٹ//سرنکوٹ کے ترانوالی بفلیازعلاقہ میں ہوئے ایک سڑک حادثے کے دوران ایک شخص کی موت واقعہ ہو گئی جبکہ گاڑیوں میں سوار دیگر دو افراد شدید زخمی ہوگئے ہیں ۔مقامی ذرائع کے مطابق ایک الٹو گاڑی زیر نمبرJK02AA 3887-ترانولی سے بفلیاز جاتے ہوئے ڈرائیور کے کنٹرول سے باہر ہو کر حادثے کا شکا رہو گئی ۔حادثے کی وجہ سے گاڑی کا ڈرائیور نظارت حسین موقعہ پر ہی لقمہ اجل بن گیا جبکہ گاڑیوں میں سوار دیگر دو افراد زخمی ہوگئے ۔زخمیوں کی شناخت چاندنی نظر زوجہ محمد تسلیم عارف مو حسن احمد ولد محمد بشیر کے طورپرہوئی ہے ۔زخمیوں کو سرنکوٹ کے مقامی ہسپتال علا ج معالجہ کیلئے منتقل کیا گیا جہاں پر ابتدائی مرحم پٹی کے بعد گور نمنٹ میڈیکل کالج راجوری ریفر کر دیا گیا۔جموں وکشمیر پولیس نے اس سلسلہ میں ایک معاملہ درج کرتے ہوئے مزید تحقیقات شروع کر دی ہیں ۔
 
 

ڈنوگام کی عوام 3ماہ سے پانی کی قلت کا شکار 

عشرت حسین بٹ
منڈی//تحصیل منڈی کے علاقہ ڈنوگام وارڈ پانچ کی عوام گزشتہ تین ماہ سے پینے کے صاف پانی کی قلت سے گزر رہے ہیں جس کی وجہ سے اس علاقہ میں رہ رہے لوگوں کو تین کلو میٹر پیدل سفر کر کے ایک مقامی نالہ سے پانی حاصل کرنا پڑتا ہے۔ اگر چہ محکمہ جل شکتی کی جانب سے علاقہ میں پانی کی پائپ لائن بچھائی گئی ہے مگر وہ بوسیدہ ہو چکی ہے جس کی وجہ سے عوام کو مشکلات کا سامناکرنا پڑتا ہے۔ وارڈ کے پنچ عبدل سبحان کے مطابق ان کی وارڈ دو سو سے زائدنفوس پر مشتمل ہے اور وہ گزشتہ تین ماہ سے پانی کی بوند بوند کو ترس رہے ہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ انہیں پانی حاصل کرنے کیلئے تین سے چار کلو میٹر دوری پر جانا پڑتا ہے جو کہ ان کے مرد و زن کیلئے کافی زیادہ مشکلات کا سبب بنا ہوا ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ پانی کی مشکل کے حوالے سے متعدد بار انہوں نے متعلقہ محکمہ کے ملازمین اور آفسران کے نوٹس میں بھی لایا مگر ابھی تک ان کے اس معاملے کو ان کی طرف سے سنجیدگی سے نہیں لیا گیا۔عوام نے ضلع ترقیاتی کمشنر پونچھ اور متعلقہ محکمہ کے آعلی آفسران سے اپیل کی ہے کہ اس علاقہ کی پانی کی پائپ لائن کو نئے طرز پر لگایا جائے اور عوام کیلئے پانی کا معقول انتظام کیا جائے تاکہ لوگوں کی مشکل حل ہو سکے۔
 
 

منریگا کے تحت ہوئے کاموں کی ادائیگیاں نہ ہوسکیں | منڈی کے مزدورپریشانی میں مبتلا،حکام سے توجہ کی مانگ 

عشرت حسین بٹ
منڈی//تحصیل منڈی میں ایم جی نریگا کی اجرت کو لیکر عوام سخت پریشان ہے جس پر ایم جی نرگا کے تحت کرنے والے مزدور طبقہ نے محکمہ کے تئیں سخت برہمی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ انہیں سرکار کی جانب سے گزشتہ دو برسوں تعمیراتی کام کی ادائیگیاں نہیں کی گئی ہیں ۔مزدور طبقہ نے بتایا کہ اجرتوں کے سلسلہ میں وہ گزشتہ کئی عرصہ سے سرکار دفاتر کے چکر کاٹ رہے ہیں لیکن ابھی تک ان کو ادائیگیاں نہیں کی گئی ہیں ۔سرپنچ راجپورہ فاروق احمد نے کہا کہ بلاک منڈی میں گزشتہ دوسالوں سے لوگوں کو ایم جی نریگا کے کام کا پیسہ فراہم نہیں کیا گیا ۔ان کا کہنا تھا کہ انہوں نے کہا کہ کئی بار عوامی دربار میں بھی ایم جی نریگا کی بقایہ جات کو واگزار کرنے کی بات کی لیکن ابھی تک لوگوں کی رقومات واگزار نہیں ہوئی ہیں۔ ان کے علاوہ متعدد مزدورو نے کہا کہ انتظامیہ کے مطابق پندرہ دنوں کے اندر اندر لوگوں کو ایم جی نریگا کا پیسہ ڈالنا ہوتا ہے لیکن لوگ کو تین تین سالوں تک دفتروں اور بنکوں کے چکر کاٹنے پڑتے ہیں۔ ان کا مزید یہ کہنا تھا اگر چہ 2016 میں لوگوں نے بازار سے سامان خرید کر اپنا کام مکمل کیا تاہم اس خریدے ہوئے سامان کا بھی پیسہ انہیں نہیں ملا ہے۔ رابطہ کرنے پر بلاک ترقیاتی آفسر منڈی مظاہر کاظمی کا کہنا تھا کہ سات دنوں کے اندر اندر لوگوں کو لیبر کا پیسہ واگزار کر دیا جائے گا ان کا کہنا تھا کہ سال 2020-21 کے کچھ پیسے ابھی باقی ہیں پچیس فیصد پیسہ ابھی گورنمنٹ کے فنڈ سے نہیں آیا ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ  2016 کے بقایا جات کے حوالے سے  انہیں کوئی علم نہیں ہے کیونکہ م ان کی منڈی میںنئی تعیناتی ہے اور انہیں اس بارے میں ابھی تک کسی نے بھی جانکاری نہیں دی ہے۔
 

خطہ پیر پنچال کے 4سب ڈویژنوں میں سیکورٹی بڑھا دی گئی 

سمت بھارگو 
راجوری //گزشتہ تین ماہ کے دوران راجوری پونچھ میں ہوئے پانچ انکائونٹر وں کے بعد خطہ پیر پنچال کے 4سب ڈویژنوں میں سیکورٹی انتظامات کو مزید سخت کر دیا گیا ہے ۔حالیہ دنوں میں پیش آئے واقعا ت کے بعد سرحدی ضلع راجوری کے تھنہ منڈی اور منجا کوٹ سب ڈویژن میں سیکورٹی اقدمات و نگرانی کے عمل کو مزید سخت کیا گیا ہے جبکہ اسی طرح سرحدی ضلع پونچھ کے سب ڈویژن مینڈھر اور سرنکوٹ میں نگرانی عمل کو مزید سخت کر کے سیکورٹی کے اضافی انتظامات کئے گئے ہیں ۔یہ سبھی سب ڈویژن آپس میں جوڑے ہوئے ہیں جبکہ منجا کوٹ اور مینڈھر سب ڈویژن کا ایک وسیع علاقہ حد متارکہ کیساتھ بھی منسلک ہے جبکہ تھنہ منڈی اور سرنکوٹ دونوں سرحدی اضلاع کے اندرونی علاقوں میں آرہے ہیں ۔ان چاروں سب ڈویژن میں گزشتہ تین ماہ کے دوران کل 5انکائونٹر ہوئے ہیں جن میں6اگست کو بھنگائی ،9اگست کو کریوٹ ،12ستمبر کو دہوری مہال منجاکوٹ ،12اکتوبر کو چمراڑ سرنکوٹ اور 15اکتوبر کو ناڑ کس مینڈھر کے انکائونٹر شامل ہیں ۔ان انکائونٹروں میں 4ملی ٹینٹ جبکہ 10فوجی اہلکار ہلاک ہوئے ہیں ۔سرکاری ذرائع نے بتایا کہ ان سب ڈویژنوں میں فوج کووسیع جنگلات کی وجہ سے کئی طرح کے مسائل کا سامنا کرناپڑرہا ہے ۔تھنہ منڈی سب ڈویژن میں دیرہ گلی بھنگائی ،شاہدارہ و ملحقہ علاقے جنگلات پر مشتمل ہیں جبکہ منجاکوٹ تحصیل کے گھمبیر مغلاں سے لے کر دھیری رلیوٹ گائوں تک شدید و گھنا جنگل موجود ہے ۔اسی طرح دھیری رلیوٹ کا جنگل بھمبر گلی کے مقام سے مینڈھر سب ڈویژن کیساتھ جوڑ جاتا ہے جبکہ یہی جنگل بھاٹہ دھوڑیاں جنگلات کا ایک حصہ بھی ہے ۔مینڈھر کے سنگیوٹ ،بھاٹہ دھوڑیاں ،جڑانوالی گلی ودیگر ملحقہ علاقے جنگلات پر مشتمل ہیں ۔سرنکوٹ مین دیرہ گلی ،چمراڑ و دیگر ملحقہ علاقے بھی جنگلات پر مشتمل ہیں ۔ان سبھی جنگلات میں گزشتہ دنوں انکائونٹر ہوچکے ہیں ۔انہوں نے بتایا کہ وسیع جنگلات کیساتھ ساتھ خستہ حال رابطہ سڑکیں اور مشکل راستے سیکورٹی فورسز کیلئے ایک چیلنج ہے جبکہ مذکورہ معاملات کو ذہن میں رکھتے ہوئے سیکورٹی کے مزید انتظامات کئے گئے ہیں ۔
 
 

راجوری میں’ ریڈیولوجی ‘ڈے منایا گیا

راجوری //گور نمنٹ میڈیکل کالج راجوری کی انتظامیہ نے ’ ریڈیولوجی‘کے عالمی دن کی مناسبت سے ایک پروگرام کا اہتمام کیا جس میں میڈیکل کالج کے پرنسپل کیساتھ ساتھ دیگر آفیسران و ڈاکٹروں و سٹاف ممبران نے شرکت کی ۔غور طلب ہے کہ یہ دن 1895 میں ولہیل مین رونٹجن کی طرف سے ایکس تابکاری کی دریافت کی سالگرہ کے طور پر منایا جاتا ہے۔کالج منتظمین کی جانب سے منعقدہ پروگرام میں پرنسپل گور نمنٹ میڈیکل کالج راجوری ڈاکٹر پرج موہن گپتا نے بطور مہمان خصوصی شرکت کی جبکہ شعبہ ریڈ یولوجی کے سربراہ ڈاکٹر ارشاد احمد چوہدری ودیگرشعبوں کے ہیڈ نے بھی شرکت کی ۔اس موقعہ پر ریڈیولوجی کی اہمیت پر تفصیلی روشنی بھی ڈالی گئی ۔
 
 

غیر قانونی پارکنگ راہگیروں کیلئے پریشانی کا باعث 

حسین محتشم
پونچھ//سرحدی ضلع پونچھ کے صدر بازار میں غیر قانونی پارکنگ کے ساتھ ساتھ ریڑھی والوں نے دکانوں کے سامنے کھوکھے لگا لئے ہیں، جبکہ دکاندار بھی اپنے موٹر بائیک اور دیگر گاڑیاں دکانوں کے سامنے لگا لیتے ہیں جس کی وجہ سے عام راہگیروں سڑک پر چلنے میں دشواریاں پیش آتی ہیں۔ مقامی لوگوں نے الزام لگایا ہے کہ انتظامیہ نے لوگوں کو کھلی چھوٹ دے دی کہ وہ جہاں چاہیں تجاوزات کر دیں۔ لوگوں کا کہنا ہے کہ سڑک پر تجاوزات کی وجہ سے راہگیروں کو شدید مشکلات کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔ سہیم جعفر نامی سماجی کارکن نے اس سلسلہ میں برہمی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ پونچھ بازار میں غیر قانونی پارکنگ کے ساتھ ساتھ چھوٹے کاروباریوں نے اڈے قائم کر لئے اور ریڑھی بانوں نے بازار میں دکانوں کے سامنے کھوکھے لگا لئے ہیں جس سے راہگیروں کو شدید مشکلات کا سامنا ہے۔ انہوں نے کہا یہ غیر قانونی پارکنگ مشکلات کا باعث بن رہا ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ پورے بازار میں سڑک کے دونو ں جانب ریڑھیاں سجائی جاتی ہیں جبکہ دکاندار اور صارفین موٹر بائیک کہیں بھی کھڑی کر کے غیر قانونی پارکنگ قائم کر دیتے ہیں جن کے باعث عوام متاثر ہو رہی ہے اور راہگیروں کو شدید مشکلات کا سامنا ہے۔ انہوں نے ضلع انتظامیہ سے بازار میں ناجائز تجاوزات کو سرے سے ختم کرنے کی اپیل کی تاکہ لوگوں کو پریشانی سے نجات حاصل ہو سکے۔
 
 
 

 تھنہ منڈی میں صحت کارڈ بنانے کی مہم جاری

عظمیٰ یاسمین
 تھنہ منڈی// حکومت ہند کی جاری کردہ ہدایات کے مطابق جموں و کشمیر یو ٹی میں آیوشمان کارڈ بنائے جا رہے ہیں۔ اس سلسلے میں سب ڈویژن تھنہ منڈی کے بھٹیلی علاقے میں متعلقہ عملے نے گھر گھر جا کر لوگوں کے کارڈ بنائے۔ عملے کے ایک کارکن فیاض احمد رینہ نے بتایا کہ اس سکیم سے لوگوں کو کافی فائدہ مل رہا ہے۔ فیاض رینہ نے کہا کہ یو ٹی جموں و کشمیر میں تیزی سے آیوشمان کارڈ بنائے جا رہے ہیں۔ انھوں نے مزید بتایا کہ اے بی پی ایم جے اے وائی صحت کارڈ کا آغاز 26 دسمبر 2020 کو وزیر اعظم نے کیا  تھا جس کا مقصد فلوٹر کی بنیاد پر فی خاندان کو 5 لاکھ روپے یونیورسل ہیلتھ انشورنس کا فائدہ دلانا تھا۔ آیوشمان بھارت پردھان منتری جن آروگیہ یوجنا یا اے بی پی ایم جے اے وائی جموں و کشمیر کے تمام باشندوں کو طبی علاج پر تباہ کن اخراجات کو کم کرنے میں مدد کرتا ہے اورہسپتال میں داخل ہونے سے پہلے 3 دن تک اور ہسپتال میں داخل ہونے کے بعد 15 دن تک کے اخراجات ، جس میں تشخیص اور ادویات شامل ہیں ، کا احاطہ کرتا ہے۔ خاندان کی عمر یا جنس پر کوئی پابندی نہیں ہے۔اس سکیم کے تحت ہندوستان کے ساتھ ساتھ جموں و کشمیر کا ہر شہری 226ہسپتالوں میں کہیں بھی اپنے مریضوں پر پانچ لاکھ کی لاگت کا مفت علاج کروا سکتا ہے۔ اس سکیم کو لیفٹیننٹ گورنر نے اولین ترجیح دی ہے جس کے تحت گاؤں گاؤں جا کر آیوشمان بھارت کارڈ بنائے جا رہے ہیںجس کا مقصد پوری آبادی کو کم سے کم مدت میں آیوشمان بھارت کارڈ فراہم کرنا ہے۔جس کے لیے رجسٹریشن کیمپ بھی لگائے جا رہے ہیں۔
 
 
 

تھنہ منڈی میں بس سٹینڈ موجود نہیں 

جام روز کا معمول بن گیا ،مسافر پریشان 

عظمیٰ یاسمین
 تھنہ منڈی // قصبہ تھنہ منڈی میں بے جا سیاسی مداخلت کی وجہ سے خطیر رقومات کی منظوری کے باوجود بس اڈہ کی تعمیر کا کام شروع نہیں کیا جا سکا ہے۔ بس اڈہ کے نہ ہونے کی وجہ سے روزنہ ہزاروں کی تعداد میں مشہور زیارت شاہدرہ شریف ، سیاحتی مقام دیرہ کی گلی و مغل شاہراہ پر واقع پیر کی گلی کا رخ کرنے والے زائرین و سیاحوں کو کئی طرح کی مشکلات کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔ جموں راجوری، سرینگر مغل شاہراہ پر تھنہ منڈی ایک مرکزی مقام کی حیثیت رکھتا ہے جہاں پر مسافروں کو رکنا پڑتا ہے مگر بدقسمتی سے یہاں پر مسافروں کے رکنے کیلئے معقول انتظام نہ کے برابر ہے۔ روزنامہ کشمیر عظمی سے بات کرتے ہوئے منی بس یونین کہ صدر بشارت خان و مشتاق وانی نے کہا کہ بس اڈہ نہ ہونے کی وجہ سے گاڑیاں کھڑی کرنے میں سخت پریشانی ہو رہی ہے کوئی بھی دوکاندار آپنی دوکان کے آگے گاڑی کھڑی نہیں کرنے دیتااور اگر سڑک پر گاڑی کھڑی کریں تو پولیس کے ڈنڈے کھانے پڑتے ہیں ۔انہوں نے کہا کہ ڈرائیوروں کو بیچ بازار گاڑی کھڑی کر سواری کو اتارنا اور چڑھانا پڑتا ہے۔ وہیں تھنہ منڈی کی عوام کا کہنا ہے کے تھنہ منڈی بازار میں نجی گاڑیاں سڑک پر لگا کر ملازمین چلے جاتے ہیں جس سے عام راہگیروں سکولی طلباء و بزرگوں کو مشکلات کا سامنا کرنا پڑتا ہے ۔عوام تھنہ منڈی نے لیفٹیننٹ گورنر و ضلع انتظامیہ سے مطالبہ کیا ہے کہ تھنہ منڈی میں بس اڈے کا قیام عمل میں لایا جائے تاکہ عوام کی مشکلات کا ازالہ ہو سکے۔
 
 
 

حیات پورہ پنچایت گھر کی عمارت مکمل نہ ہوسکی 

پنچایتی اراکین کو شدید مشکلات کا سامنا ،توجہ کی اپیل 

پرویز خان 
منجا کوٹ //تحصیل منجا کوٹ کے حیات پورہ علا قہ میں پنچایت گھر کی عمارت گزشتہ 8برسوں سے مکمل نہیں ہو سکی جس کی وجہ سے پنچایتی اراکین کھلے عام اجلاس منعقد کرنے پر مجبور ہیں ۔پنچایتی اراکین نے متعلقہ محکمہ اور ضلع انتظامیہ کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہاکہ ڈھانچہ مکمل کرنے میں کوئی دلچسپی ظاہر نہیں کی جارہی ہے ۔انہوں نے کہاکہ انتظامیہ کی جانب سے پنچایتوں کو با اختیار بنانے کیلئے بلندو بانگ دعوئے کئے جارہے تھے لیکن پنچایتی ادارے کے قیام کے بعد اس کو مکمل طورپر فعال ہی نہیں بنایا گیا ہے ۔انہوں نے کہاکہ حیات پور ہ پنچایت میں عمارت کی مکمل کیلئے ہمیشہ سے ہی فنڈز کی قلت رہی ہے جس کی وجہ سے وہ پلان مرتب کرنے کیلئے کھلے عام اجلاس منعقد کرنے پر مجبور ہیں ۔انہوں نے کہاکہ حالیہ کئی عرصہ سے عمار ت کو مکمل کرنے کا مطالبہ کیاجارہا ہے لیکن متعلقہ محکمہ اور ضلع انتظامیہ راجوری اس طرف کوئی دھیان ہی نہیں دے رہے ہیں ۔مقامی معززین و پنچایتی اراکین نے لیفٹیننٹ گورنر انتظامیہ سے مانگ کرتے ہوئے کہاکہ پنچایت گھر حیات پورہ کی عمارت کو مکمل کروانے کیلئے ہدایت جاری کی جائیں ۔
 
 

شہید منجیت سنگھ میموریل والی بال کلب نے تقریب تشکر منعقدکی

حسین محتشم
پونچھ// شہید منجیت سنگھ میموریل والی بال کلب پونچھ نے ایک تقریب منعقد کرکے لیفٹیننٹ گورنر، ضلع و پولیس انتظامیہ پونچھ کا شکریہ ادا کیا جنہوں نے گورنمنٹ بوائز ہائیر سکینڈری سکول پونچھ کا نام تبدیل کر کے شہید منجیت سنگھ میموریل ہائیر سکینڈری سکول رکھا۔ اس موقع پر ایس پی پونچھ ڈاکٹرونود کمار کے علاوہ پونچھ کے سیاسی سماجی کارکنان ،معزز شخصیات وشہریوں اور والی بال کے کھلاڑیوں نے بڑی تعداد میں شرکت کی۔ اس موقع پر خطاب کرتے ہوئے معروف ناظم اور سابق لیکچر پر دیپ کھنہ نے کہا کہ ہائیر سکینڈری سکول بوائز پونچھ کا نام تبدیل کر کے اسے شہید منجیت سنگھ کے نام سے منسوب کرکے شہید کو بہت بڑا خراج تحسین پیش کیا گیا ہے۔ ایس ایس پی پونچھ نے د منجیت سنگھ والی بال کلب کے چیئر مین طارق خان کا شکریہ ادا کہ نہوں نے ایک شہید پولیس افسر کی یاد گار کے طور پر کلب بنایا ہے۔دیگر مقررین نے بھی خطاب کرتے ہوئے گورنر کا شکریہ ادا کیا۔شہید منجیت سنگھ والی بال کلب کے چیئرمین طارق خان نے اس دوران خطاب کرتے ہوئے کہا  14 مارچ 2003 کو پونچھ کے عوام کیلئے اپنی جان قربان کرنے والے شہید منجیت سنگھ کو پونچھ کے عوام ہمیشہ یاد رکھیں گے۔ انہوں نے کہا کہ ان کا کلب شہید کی یاد کو تازہ رکھنے میں اہم کردار ادا کرتا رہے گا۔ اس دوران اضافی ضلع ترقیاتی کمشنر پونچھ عبدالستار نے بھی خطاب کر کے شہید کو خراج تحسین پیش کیا۔
 
 

15نومبر سے ’ سوچھتا پکواڑا ‘ہفتہ منایا جائے گا 

حسین محتشم
پونچھ// محکمہ آئی سی ڈی ایس پروجیکٹ حویلی کی جانب سے یکم نومبر سے 15 نومبر 2021 تک سوچھتا پکواڑا منایا جا رہا ہے اس دوران تحصیل حویلی کے تمام آنگن واڑی مراکز میں سوچھتا پکواڑا کے تحت پروگرام منعقد کئے جائیں گے جن میں مختلف سرگرمیاں انجام دی جائیں گی، خصوصی طور پر آنگن واڑی مراکز کے اندر اور اس کے آس پاس کی صفائی کی جائے گی۔ان باتوں کا اظہار کشمیر عظمیٰ سے بات کرتے ہوئے محکمہ کے ضلع آفیسر جہانگیر خان نے کیا۔ انہوں نے کہا کہ اس دوران   AWCs کے ذریعہ ریلیاں نکال کر آس پاس کے علاقوں میں بیداری پیدا کرنے کے علاوہ ذاتی حفظان صحت اور ہاتھ دھونے کی تکنیک وغیرہ کے بارے میں عوام کو بیدار کیا جائے گا۔انہوں نے کہا کہ لوگوں کو سرکاری اسکیموں جن میں پوشن ابھیان، آئی سی ڈی ڈی جنرل، پی ایم ایم وی وائی، بی بی بی پی وغیرہ کی بھی لوگوں کو جانکاری دی جائے گی۔
 
 
 

سکول میں چوری کرنے کی کوشش 

پونچھ //پونچھ ضلع ہیڈ کوارٹر میں قائم کردہ شیش محل گرلز ہائر سکینڈری سکول میں چوروں کی جانب سے چوری کرنے کی کوشش کی گئی جس کے بعد سکول منتظمین نے پولیس کے پاس ایک معاملہ درج کروایا ہے ۔سکول منتظمین نے بتایا کہ پوجا کی چھٹیوں میں مذکورہ نوعیت کی وار دات انجام دینے کی کوشش کی گئی تھی جس کے بعد معاملہ درج کروایا گیا ہے ۔انہوں نے بتایا کہ پیر کے روز دوبارہ سے سکول کھلنے کے بعد انہوں نے دیکھا کہ الماری اور دورز وں کی توڑ پھوڑ کی گئی تھی ۔انہوں نے بتایا کہ ابھی تک ان کو گمشدہ چیزوں کے بارے میں ابتدائی طورپر کوئی جانکاری نہیں ہے ۔پولیس نے اس سلسلہ میں معاملہ درج کر کے مزید تحقیقات شروع کردی ہیں ۔
 
 
 

نونیال رسیونگ سٹیشن سود مند ثابت نہ ہوا 

6پنچایتوں کی عوام بجلی سپلائی سے پریشان 

رمیش کیسر 
نوشہرہ //سب ڈویژن نوشہرہ کے نونیال گائوں میں قائم کیا گیا بجلی کا رسیونگ سٹیشن مکمل ہونے کے ڈیڑھ برس بعد بھی صارفین کیلئے سود مند ثابت نہیں ہوا جس کی وجہ سے صارفین کی مشکلات جوں کی توں ہی ہیں ۔صارفین نے بتایا کہ سب ڈویژں کی 6پنچایتوں میں بجلی کی معیاری سپلائی کیلئے ڈیڑھ برس قبل محکمہ کی جانب سے ایک ریسیونگ سٹیشن قائم کیا گیا تھا لیکن ابھی تک اس کو چلایا ہی نہیں گیا ۔انہوں نے بتایا کہ متعلقہ ریسیونگ سٹیشن کے ملحقہ علاقوں میں بجلی کی غیر معیاری سپلائی کی وجہ سے صارفین کو شدید مشکلات کا سامنا کرنا پڑرہا ہے ۔انہوں نے بتایا کہ ان دیہات میں نوشہرہ بجلی سٹیشن سے بجلی سپلائی کی جارہی ہے جبکہ مذکورہ سٹیشن کے زیر تحت ایک وسیع علاقہ ہونے کی وجہ سے ان پنچایتوں میں اکثر بجلی کی کٹوتی رہتی ہے لیکن محکمہ کو جانکاری فراہم کرنے کے باوجود بھی ان کو معیاری سپلائی فراہم کرنے کیلئے ریسیونگ سٹیشن کو چلایا نہیں جارہا ہے ۔صارفین نے مانگ کرتے ہوئے کہاکہ محکمہ کو ہدایت جاری کی جائیں تاکہ ریسیونگ سٹیشن کو سود مند بنایا جائے ۔
 
 

نوشہرہ میں گندگی کے ڈھیر جمع 

رمیش کیسر 
نوشہرہ // نوشہرہ قصبہ میں گندگی کے ڈھیر جمع ہونے کی وجہ سے عام لوگوں و رہگیروں کو مشکل کا سامنا کرناپڑرہا ہے ۔نوشہرہ قصبہ کے مکینوں نے میونسپل حکام کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہاکہ قصبہ کی وار ڈ نمبر 12میں کھلے عام گندگی کے ڈھیر جمع ہوئے ہیں لیکن اس کو ٹھکانے لگانے کیلئے کوئی دھیان نہیں دیاجارہا ہے ۔انہوں نے بتایا کہ کھلے عام گندگی ہونے کی وجہ سے لوگوں کا پیدل چلنا بھی محال ہو چکا ہے جبکہ ملحقہ علاقوں میں رہائش پذ یر لوگوں کی مشکلات بھی بڑھ گئی ہیں ۔مکینوں نے مانگ کرتے ہوئے کہاکہ میونسپل حکام کو ہدایت جاری کی جائیں تاکہ عوام کو گندگی سے نجات مل سکے ۔
 

ڈینگو کو کنٹرول کرنے کیلئے تعاون کی اپیل 

رمیش کیسر 
نوشہرہ //نوشہرہ سب ڈویژن میں ڈینگو بخار سے نمٹنے کیلئے محکمہ صحت متحرک ہو رہا ہے جبکہ محکمہ بالخصوص ڈاکٹروں نے عوام سے اپیل کرتے ہوئے کہاکہ ڈینگو کو کنٹرول کرنے کیلئے محکمہ کیساتھ تعاون کیا جائے ۔جموں وکشمیر کے دیگر حصوں کی ہی طرح نوشہرہ میں بھی ڈینگو بخار کے معاملا ت سامنے آرہے ہیں جبکہ محکمہ صحت کی جانب سے بخار میں مبتلا مریضوں کی جانچ کیلئے عملی اقدامات شروع کر دئیے ہیں ۔ڈاکٹروں نے لوگوں سے اپیل کرتے ہوئے کہاکہ بخار میں مبتلا افراد کو جلدازجلد ہسپتال پہنچایا جائے تاکہ اس کی جانچ کے بعد علاج معالجے کا عمل شروع کیا جاسکے ۔