مزید خبریں

تھنہ منڈی ۔دیرہ گلی سڑک پسی گرآنے سے بند 

سمت بھارگو 
راجوری //راجوری ضلع کے تھنہ منڈی سب ڈویژن ہیڈکوارٹر کو پونچھ کے سرنکوٹ سب ڈویژن سے دہرہ کی گلی سے جوڑنے والی مین سڑک پر گاڑیوں کی آمدورفت بدھ کی شام کو منیال گلی کے قریب مٹی کے تودے گرنے کی وجہ سے بند ہوگئی یہ لینڈ سلائیڈ علاقے پالا موڑ میں ہوئی ہے۔حکام نے بتایا کہ سڑک کو چوڑا کرنے کا کام جاری ہے جس دوران زمین کا کچھ حصہ کٹا ہوا تھا جس کے دوران یہ لینڈ سلائیڈنگ ہوئی۔ان کا کہنا تھا کہ لینڈ سلائیڈنگ کی وجہ سے زمین کا ایک حصہ نیچے کی طرف کھسک گیا ہے جس سے سڑک کے کچھ حصے کو بھی نقصان پہنچا اور گاڑیوں کی آمدورفت بند ہو گئی ہے۔ڈی ایس پی ٹریفک نے بتایا کہ لینڈ سلائیڈنگ ہونے کی وجہ سے ہر قسم کی گاڑیوں کی آمدورفت بند ہو گئی ہے۔انہوں نے مزید کہا کہ لینڈ سلائیڈنگ کا کام جاری ہے اور آخری اطلاعات موصول ہونے تک سڑک بند تھی۔یہاں یہ بات قابل ذکر ہے کہ لینڈ سلائیڈنگ کی وجہ سے بند ہونے والی سڑک نہ صرف ایک سڑک ہے جو راجوری ضلع کے تھنہ منڈی سب ڈویژن کو پونچھ کے سرنکوٹ سب ڈویژن سے جوڑتی ہے بلکہ راجوری ضلع کو تاریخی مغل روڈ سے بھی جوڑتی ہے۔
 
 
 
 

نہرو یووا کیندر راجوری کا نوشہرہ میں بیداری پروگرام 

رمیش کیسر 
نوشہرہ //نہرو یووا کیندر راجوری نے گورنمنٹ ڈگری کالج نوشہرہ میں کووڈ19 کا مقابلہ کرنے، بڑے پیمانے پر بیداری ،خود روزگار پیدا کرنے والی سکیموں سے متعلق ایک بیداری پروگرام کا انعقاد کیا۔ کالج کے پرنسپل ڈاکٹر سریندر کمار نے مہمان خصوصی کی حیثیت سے شرکت کی جبکہ نوجوان افکار وکرانت شرما بھی پروگرام میں موجود تھے ۔اس تقریب کے ریسورس پرسن جل شکتی محکمہ کے اسسٹنٹ ایگزیکٹو انجینئر اشوک کمار، محکمہ صحت کے ڈاکٹر کلپنا آریہ، ڈی آئی سی راجوری مشتاق احمد اور ڈسٹرکٹ ایمپلائمنٹ اینڈ کونسلنگ سنٹر سے رفاقت حسین نے بھی پروگرام میں شرکت کی ۔اس بیداری پروگرام کے دوران طلباء کو مذکورہ موضوعات سے آگاہ کیا گیا اور معاشرے میں بیداری کے سفیر بننے کی اپیل کی گئی۔مقررین نے کہاکہ طلباء معاشرے میں ریڑھ کی ہڈی کی حیثیت رکھتے ہیں ۔انہوں نے طلباء سے اپیل کرتے ہوئے کہاکہ وہ اس سلسلہ میں لوگوں کو بیدار کرنے کیلئے بھی اپنا رول ادا کریں ۔
 
 
 
 
 

تھنہ منڈی میں سرکاری دفاتر کا معائینہ کیا گیا

عظمیٰ یاسمین
 تھنہ منڈی // تحصیلدارتھنہ منڈی ساحل علی شاہ نے تمام سرکاری دفاتر کا اچا تک معائینہ کیا۔اس دوران انھوں نے تمام دفاتر میں سرکاری ملازمین کو حاضر رہنے کی تاکید کی۔انہوں نے ملازمین کو اپنے اپنے دفاتر میں حاضر رہنے کی تلقین کرتے ہوئے کہا کہ جو ملازم بھی ڈیوٹی کے دوران غفلت شعاری کا مظاہرہ کرئے گا اس کیخلاف سخت کارروائی عمل میں لائی جائے گی ۔انہوں نے کہاکہ ملازمین اور متعلقہ آفیسران عوامی مسائل کو حل کرنے و بنیادی سہولیات فراہم کرنے کیلئے ایک اہم رول ادا کرتے ہیں تاہم ان کو اپنی ڈیوٹی باقاعدگی کیساتھ انجام دینا پڑئے گی ۔یہاں یہ بات قابل ذکر ہے کہ تحصیلدار کی کرسی سنبھالنے کے بعد تحصیلدارتھنہ منڈی نے سرکاری دفاتر میں ملازمین کی چیکنگ پر کافی توجہ دی گئی ہے جس کے نتیجے میں لوگوں کی پریشانیوں میں نمایاں کمی آئی ہے۔
 
 
 
 
 
 
 
 

ٹریفک پولیس کی مینڈھر میں کارروائی 

قانون کی خلاف ورزی کرنے پر 15ہزار روپے جرمانہ عائد 

جاوید اقبال 
مینڈھر //ٹریفک پولیس کی جانب سے مینڈھر سب ڈویژن میں ٹریفک قوانین کی خلا ف ورزی روکنے کیلئے ایک کارروائی شروع کی گئی ۔اس کارروائی کے دوران ٹریفک پولیس اہلکاروں نے ڈی ٹی آئی شوکت امین خان کی قیادت میں مختلف رابطہ سڑکوں پر ناکے لگا کر قاعدہ کی خلاف ورزی روکنے کا عمل شروع کیا ۔کارروائی کے دوران ٹریفک قوانین کیخلاف ورزی کرنے والوں پر 15ہزار روپے جرمانہ بھی عائد کیا گیا ۔ٹریفک حکام نے ڈرائیورں کو ہدایت جاری کرتے ہوئے کہاکہ سڑک پر بغیر کاغذات کے گاڑیاں نہ چلائی جائیں جبکہ مسافروں بالخصوص طلباء سے اضافی کرایہ وصول کرنے والوں کیخلاف سخت کارروائی عمل میں لائی جائے گی ۔اس دوران سٹوڈنٹ یونین کا ایک وفد بھی ٹریفک حکام سے ملاقی ہوا ۔وفد میں شامل اراکین نے شکایت درج کرواتے ہوئے کہاکہ ڈرائیوروں کی جانب سے اضافی کرایہ وصول کرنے کیساتھ ساتھ ان کیساتھ بدتمیزی بھی کی جاتی ہے ۔ٹریفک حکام نے طلباء کو یقین دہانی کرواتے ہوئے کہاکہ اضافی کرایہ اور بدتمیزی کرنے والوں کیخلاف شکایت درج کروائی جائے جس کے بعد سخت کارروائی عمل میں لائی جائے گی ۔انہوں نے ڈرائیوروں اور مالکان کو ہدایت جاری کرتے ہوئے کہاکہ گاڑیوں میں اور لوڈنگ نہ کی جائے جبکہ محکمہ کی جانب سے جاری کی گئی کرایہ لسٹ کے تحت ہی کرایہ وصول کیا جائے ۔
 
 
 
 

دبڑ پوٹھہ میں 2ماہ سے پانی سپلائی بند 

لوگوں کا احتجاج ،سپلائی بحال کرنے کی مانگ 

رمیش کیسر 
نوشہرہ //نوشہرہ سب ڈویژن کے دور افتادہ علاقہ دبڑ پوٹھہ میں پینے کے صاف پانی کی سپلائی گزشتہ دو ماہ سے بند ہونے کی وجہ سے عام لوگوں کو شدید مشکلات کا سامنا کرنا پڑرہا ہے ۔محکمہ کی لاپرواہی سے تنگ آکر مقامی لوگوں نے محکمہ جل شکتی اور مقامی انتظامیہ کیخلاف سخت احتجاج کرتے ہوئے الزام عائد کیا کہ ملازمین و آفیسران کی لاپرواہی کی وجہ سے ان کو کئی کلو میٹر دور سے پینے کیلئے صا ف پانی لانا پڑرہا ہے ۔انہوں نے بتایا کہ 2ماہ قبل سپلائی بند ہو گئی تھی اس کے بعد وہ متعلقہ حکام کیساتھ رابطہ کرنے کیساتھ ساتھ ملازمین کو بھی فون کررہے ہیں لیکن ابھی تک سپلائی کو بحال کرنے میں کوئی دلچسپی نہیں لی جارہی ہے ۔مظاہرین نے ضلع ترقیاتی کمشنر راجوری سے اپیل کرتے ہوئے کہاکہ سب ڈویژن میں تعینات لا پرواہ ملازمین اور آفیسران کیخلاف کارروائی کر کے پانی کی سپلائی بحال کروائی جائے تاکہ ان کی مشکلات کم ہو سکیں ۔
 
 
 
 

ڈگری کالج کوٹرنکہ کا کام تعطل کا شکار

3برسوں بعد بھی عمارت کی تعمیر شروع نہ ہو سکی 

محمد بشارت 
کوٹرنکہ //جموں وکشمیر انتظامیہ گورنمنٹ ڈگری کالج کوٹرنکہ کا تعمیر عمل 3برس بعد بھی شروع نہیں کروا سکی جس کی وجہ سے کالج میں زیر تعلیم سینکڑوں طلباء کا مستقبل تاریک ہو تا دیکھائی دے رہا ہے ۔عوامی مانگ پر انتظامیہ کی جانب سے کو ٹرنکہ میں ڈگری کالج قائم کرنے کا فیصلہ کیا تھا جبکہ اس کی تعمیر کیلئے سنگ بنیاد 2019میں رکھا گیا جس کے دوران عوام کیساتھ وعدہ کیا گیا تھا کہ کالج کی تعمیر کو کچھ ہی مدت میں مکمل کر لیا جائے گا لیکن تین برس بعد اس کی تعمیر ہی شروع نہیں کی جاسکی ۔مقامی معززین نے بتایا کہ انتظامیہ کی جانب سے 2021میں ڈگری کالج کو مکمل کرنے کا ہدف مقرر کیا گیا تھا لیکن بد قسمتی سے کالج کی تعمیر ہی ابھی تک شرو ع نہیں ہو سکی جس کی وجہ سے طلاب سخت پریشانی میں مبتلا ہو چکے ہیں ۔غور طلب ہے کہ کالج کی عمارت تعمیر نہ ہونے کی وجہ سے طلباء کو گور نمنٹ ہائر سکینڈری سکول میں رکھا گیا ہے جہاں پر پہلے سے ہی ہائر سکینڈری سطح تک کے 700بچے زیر تعلیم ہیں ۔مکینوں نے بتایا کہ کالج کے بچوں کو محض دو کمروں میں تعلیم فراہم کی جارہی ہے جبکہ جموں وکشمیر انتظامیہ سے رجوع کرنے کے بعد بھی کالج کی عمارت تعمیر شرو ع ہی نہیں ہو رہی ہے ۔انہوں نے مانگ کرتے ہوئے کہاکہ کالج کی تعمیر کو جلدازجلد شروع کروانے کیلئے اقدامات اٹھائے جائیں تاکہ بچوں کو مستقبل بچایا جاسکے ۔
 
 
 
 

پونچھ میں کئی مستحقین کے راشن کارڈ نہیں بن سکے 

غریب پریشان ،انتظامیہ سے توجہ دینے کی اپیل 

حسین محتشم
پونچھ//پونچھ ضلع میں کئی مستحقین کو ابھی تک راشن کارڈ بنا کر نہیں دیے گئے ہیں جس کی وجہ سے وہ سخت پریشان ہیں۔ مستحقین نے بتایا کہ گزشتہ کئی عرصہ سے وہ راشن کارڈ کیلئے کوششیں کررہے ہیں لیکن ابھی تک اس سلسلہ میں کوئی عملی اقدامات نہیں اٹھائے جارہے ہیں ۔زوراور سنگھ شہباز چیرمین پبلک ویلفیئر فرنٹ کی قیادت میں وفد اس حوالے سے تحصیل سپلائی افسر پونچھ منموہن سوری سے ایک ملا قی ہوا ۔وفد میں شامل اراکین نے کہا کہ ضلع میں کئی مستحقین راشن کارڈ کے بغیر کئی طرح کے مسائل کا سامنا کررہے ہیں ۔انہوں نے کہا کہ راشن کارڈ 2011 میں بنے تھے لیکن اب دس سال گزر چکے ہیں نئے راشن کارڈ نہیں بنے۔ انہوں نے کہا کہ بہت سے لوگ ایسے ہیں جو خاندان الگ ہو کر اپنا الگ گھر بنا چکے ہیں ذاتی کارڈ نہ ہونے کی وجہ وہ راشن سے محروم ہیں۔انہوں نے کہا کہ مرکزی حکومت کی طرف سے پردھان منتری غریب کلیان یوجنا کے تحت جو راشن بھیجا گیا تھا وہ بہت ایمانداری سے لوگوں تک پہنچایا گیا۔اراکین نے تحصیل سپلائی آفیسر کے کام کی تعریف کرتے ہوئے کہا کہ انہوں نے عوام سے بھی بھرپور تعاون کیا ہے جو کہ بہت قابل ستائش ہے۔ فرنٹ کے چیئرمین زوراور سنگھ شہباز نے ریاست کے ایل جی منوج سنہا سے پرزور اپیل کی ہے کہ وہ اس معاملے پر مداخلت کریں اور جموں و کشمیر میں نئے راشن کارڈ جاری کرنے کیلئے محکمے کو احکامات جاری کریں۔ وفد فرنٹ ممبران اجگر سنگھ، نتن شرما اور رویندر کور شامل تھے۔
 
 
 
 

لورن میں کرکٹ چمپئن شپ اختتام پذیر 

حسین محتشم
پونچھ//تحصیل منڈی کے لورن میں ایک ٹورنامنٹ کا انعقاد کیا گیا جس میں تحصیل منڈی اور حویلی کی 24 ٹیموں نے حصہ لیا۔ فائنل میچ اڑائی قلندر بمقابلہ لورن کھیلا گیاجو آڑائی قلندر نے جیت لیا۔ ایس ایچ او لورن وید پرکاش مہمان خصوصی تھے اور پرویز ملک آفریدی کو مہمان اعزازی کے طور پر مدعو کیا گیا تھا۔ پرویز ملک آفریدی نے میڈیا کے نمائندوں سے مختصر کرتے ہوئے آرگنائزنگ کمیٹی اور ایونٹ میں حصہ لینے والے کھلاڑیوں کو مبارکباد دی۔ انہوں نے کہا کہ اس طرح کے میچز کا مشاہدہ کرنے کے بعد انہیں بہت خوشی ہوئی ہے۔انہوں نے کھا کہ منڈی تحصیل میں ٹیلنٹ بہت زیادہ ہے اور جسے شکل دینے کی ضرورت ہے۔ انہوں نے کہا کہ انتظامیہ، سماجی اصلاح کاروں اور سماجی کارکنوں کو بڑے پیمانے پر آگے آنا چاہیے تاکہ علاقے کے ابھرتے اور خواہشمند نوجوانوں کی شناخت اور پھر انہیں پلیٹ فارم فراہم کیا جا سکے۔ انہوں نے کھلاڑیوں کو ضلع میں سول انتظامیہ، محکمہ پولیس، انڈین آرمی اور دیگر تنظیموں کی جانب سے منعقد ہونے والے ایونٹس میں شرکت کے لیے بھی کہا۔ انہوں نے کہاپونچھ میں کھیلو انڈیا اور فٹ انڈیا پروگرام کے تحت بہت سے پروگرام ہونے والے ہیں ان میں شرکت کریں اور چھپی ہوئی صلاحیتوں کو دکھانے کیلئے  آگے آئیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ پی پی ایل کا دوسرا مرحلہ فروری 2022 میں شروع ہوگا اور رجسٹریشن کا عمل جنوری 2022 میں شروع کیا جائے گا، تمام نوجوانوں کے پاس اس پلیٹ فارم پر کھیلنے کا موقع ہے۔ انہوں نے لوگوں سے پونچھ میں آرڈی سی اے اور ایس سی اے کے درمیان تاریخی ٹیسٹ میچ سیریز دیکھنے کی بھی درخواست کی۔ آفریدی نے نوجوانوں کو بری عادتوں اور خصوصاً منشیات اور دیگر برائیوں سے دور رہنے کا مشورہ دیا۔ سکول کے اوقات میں سخت مطالعہ کرتے رہیں اور کھیلوں کے اوقات میں سخت مشق کریں، خود کو صحت مند رکھنے کے لیے گیمز کو اپنی زندگی کا ایک اہم حصہ بنائیں۔ آخر میں شرکاء کو مومنٹوز اور میڈلز دئیے گئے۔ آرگنائزنگ کمیٹی نے دیہی علاقوں کے نوجوانوں کی حوصلہ افزائی کیلئے وقت نکالنے پر ایس ایچ او منڈی اور پرویز آفریدی کا شکریہ ادا کیا۔
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 

پونچھ ضلع میں شاہراہ کی حدود کا حال بے حال 

مسافروں کو پریشانی کا سامنا ،مرمتی کیلئے وفد ڈی سی سے ملاقی 

حسین محتشم
پونچھ// جموں پونچھ قومی شاہراہ پونچھ سے نوشہرہ تک خستہ حالی کا شکار ہے جس کی وجہ سے مسافروں کو سفر کرنے میں بڑی پریشانی ہوتی ہے۔ اس حوالے سے جموں کشمیر پیپلز کانفرنس کے لیڈر ریدھم پریت سنگھ کی قیادت میں ایک وفد ضلع ترقیاتی کمشنر پونچھ سے ملاقی ہوا۔وفد نے پونچھ کے مختلف علاقوں کے لوگوں کو درپیش مسائل پر مشتمل  ایک یادداشت پیش کی۔ اس دوران پونچھ نوشہرہ قومی شاہراہ کی جلد از جلد مرمت کرنے کا مطالبہ کیا۔انہوں نے خاص طور پر پونچھ سے چند کلو میٹر دور عمر کالونی کے قریب کنویاں میں سڑک کی خستہ حالت پر تشویش کا اظہارکرتے ہوئے کہا کہ یہ واحد سڑک رابطہ ہے جو راجوری پونچھ کے لوگوں کاجموں سے جوڑتا ہے۔انہوں نے کہا اس سڑک سے سفر کرنے والے لوگ سڑک کی خستہ حالی کے بارے میں شکایت کر رہے ہیں جو کہ کنویاں میں عمر کالونی کے قریب بہت زیادہ خراب ہو گئی ہے۔انہوں نے کہا مسافروں میں زیادہ تر مریض ہوتے ہیں جن کو جی ایم سی راجوری یا جموں ریفر کیا جاتا ہے اور ان مریضوں کی حالت نازک ہوتی ہے اور ایمبولینس میں ان کو مشکلات کا سامنا کرنا پڑ تا ہے اس لئے سڑک کی فوری مرمت کی بہت ضروری ہے۔ وفد نے ڈی سی پر زور دیا کہ وہ پونچھ کے لوگوں کو خاص طور پر سردیوں کے مہینوں میں بجلی کی فراہمی اور دیگر سہولیات کو یقینی بنائیں۔ انہوں نے ترقیاتی کاموں کو ترجیحی بنیادوں پر مکمل کرنے کی بھی اپیل کی تاکہ عوام کو درپیش پریشانیوں سے راحت فراہم ہوسکے۔اس وفد نثار احمد خواجہ، فضل حضرت یوتھ لیڈرز، بشیر احمد، غلام رسول، محمد زید، محمد اسلم شامل ہیں۔
 
 
 

دھیری رلیوٹ لوہر کا ٹرانسفارمر لوگوں کیلئے درد سر 

راجوری //منجاکوٹ تحصیل کی دور افتارہ پنچایت دھیری رلیوٹ لوہر میں نصب کردہ بجلی ٹرانسفارمر مکینوں کیساتھ ساتھ سکولی بچوں کیلئے مصیبت کا باعث بن گیا ہے ۔مقامی لوگوں نے بتایا کہ پنچایت کے نکہ موڑہ میں نصب کردہ 63کے وی بجلی ٹرانسفارمر کی حفاظت کیلئے کوئی احتیاطی قدم نہیں اٹھایا گیا جبکہ اس سلسلہ میں محکمہ پی ڈی ڈی کے ملازمین و آفیسران سے بھی اپیلیں کی گئی ہیں لیکن ابھی تک کوئی عملی قدم نہیں اٹھایا گیا ۔مکینوں نے بتایا کہ بجلی ٹرانسفارمر زمین سے کم اونچائی پر نصب ہونے کیساتھ ساتھ راستے کے کنارے پر لگایا گیا ہے جہاںسے روزنہ درجنوں افراد کا گزر ہو تا ہے ۔غور طلب ہے کہ دیہات میں بجلی کی سپلائی کیلئے بنیادی ڈھانچہ قائم کرنے کے بلندو بانگ نعرے لگائے جاتے ہیں لیکن صارفین کیلئے مذکورہ نظام مصیبت سے کم نہیں ہے ۔صارفین نے بتایا کہ نکہ موڑہ میں کئی برس قبل شعبہ بجلی کی جانب سے ٹرانسفارمر نصب تو کیا گیا لیکن اس کی باڑ بندی کیلئے کوئی قدم نہیں اٹھایا جاسکا ۔انہوں نے مانگ کرتے ہوئے کہاکہ بجلی ٹرانسفارمر کی باڑ بندی کی جائے تاکہ ان کو کسی بھی قسم کا نقصان نہ ہوا ۔
 
 
 
 
 
 

ہٹا سیری کو سیاحتی نقشے پر لانے کی مانگ 

پرویز خان
منجا کوٹ // منجا کوٹ تحصیل کے مکینوں نے جموں وکشمیر انتظامیہ سے مانگ کرتے ہوئے کہاکہ تحصیل کے دور افتادہ اور قدرتی خوبصورتی سے مالا مال ہٹا سیری علاقہ کو سیاحتی نقشے پر لانے کیلئے اقدامات اٹھائے جائیں ۔مقامی لوگوں نے بتایا کہ گھمبیر مغلاں کے ہٹا سیری علاقہ کو اس وقت تک سیاحتی نقشے پر لانے کیلئے کوئی قدم نہیں لیا گیا ۔غور طلب ہے کہ سرحدی تحصیل منجا کوٹ میں کئی سیاحتی مقامات ایسے ہیں جہاں پر محکمہ سیاحت کی ابھی تک رسائی ہی ممکن نہیں ہو سکی ہے جبکہ سڑک و دیگر بنیادی سہولیات نہ ہونے کی وجہ سے ان مقاما ت کو سیاحوں کی توجہ کا مرکز نہیں بنایا جاسکا ۔تحصیل منجا کوٹ کیساتھ ساتھ گھمبیر مغلاں کے لوگوں نے جموں وکشمیر کے لیفٹیننٹ گورنر اور محکمہ سیاحت سے اپیل کرتے ہوئے کہاکہ ہٹا سیری کی تعمیر وترقی کو ممکن بنا کر سیاحوں کی رسائی کے قابل بنایا جائے تاکہ بے روز گار نوجوانوں کو روز گار کمانے کا موقعہ مل سکے ۔