مزید خبریں

میونسپل کمیٹی تھنہ منڈی

 ملازمین 3 ماہ سے تنخواہوں سے محروم

طارق شال
 
تھنہ منڈی// میونسپل کمیٹی تھنہ منڈی کے مستقل و عارضی ملازمین گزشتہ 3 ماہ سے تنخواہوں سے محروم ہیں۔ یہ ملازمین تنخواہیں وقت پر ادا نہ ہونے کی وجہ سے دانے دانے کے محتاج ہو گئے ہیں۔ ان کاکہناہے کہ ان کے پاس اب ڈیوٹی پر آنے جانے کیلئے جیب میں کرایہ بھی نہیں ہوتا اور وہ بھی ادھار لیناپڑتاہے ۔انہوںنے کہاکہ اگر اب بھی ان کی تنخواہ واگزار نہ کی گئی تو وہ بھکمری کاشکار ہوجائیںگے ۔رابطہ کرنے پرایگزیکٹو آفیسر میونسپل کمیٹی تھنہ منڈی کبیر احمد ملک نے بتا یا کہ ان ملازمین کی تنخواہ محکمہ شہری ترقی سول سیکریٹریٹ سے واگزار ہوتی ہے لیکن محکمہ کی طرف سے تین ماہ سے پیسہ نہیں آیا۔ انہوں نے کہا کہ تنخواہ کے بارے میں ڈائریکٹر لوکل باڈیز جموں  سے رجوع کیا گیا ہے ۔انہوںنے کہاکہ کوشش کی جائے گی کہ ملازمین کو جلد سے جلد تنخواہیں واگزار کی جائیں ۔
 

یوتھ پہاڑی یونین ایس ایس آر بی پر برہم 

حسین محتشم
 
پونچھ//جموں وکشمیر سروسز سلیکشن بورڈ کی طرف سے اساتذہ کی بھرتی میں ضلع پونچھ کو نظرانداز کرنے پر ان ایمپلائیڈ پہاڑی یوتھ یونین نے برہمی کا اظہار کیاہے ۔اس سلسلے میں یوتھ پہاڑی یونین کی طرف سے وزیر برائے تعلیم کے نام خط لکھاگیاہے جس میںوزیر موصوف سے وضاحت طلب کی گئی ہے کہ حالیہ نوٹیفکیشن میں سرحدی ضلع پونچھ کو کیوں کر نظرانداز کیاگیاہے ۔اس خط کے ذریعہ سجاد اکبر شیخ جنرل سیکریٹری ان ایمپلائڈ یوتھ پہاڑی یونین پونچھ نے یہ جاننے کی کوشش بھی کی ہے کہ پہاری طلباء کو وظائف کیوں نہیں دیئے جارہے اور کیوں بیروزگاری کوختم کرنے کیلئے جامع پالیسی مرتب نہیں کی جارہی ۔انہوںنے مانگ کی ہے کہ ضلع پونچھ کے ہر سطح پر انصاف کیاجائے اورمقامی نوجوانوں کو روزگار فراہم کرنے کے ساتھ ساتھ بارڈر ڈیولپمنٹ سکیم کے تحت سرحدی دیہاتوں کے سکولوں کے درجے بڑھائے جائیں ۔انہوںنے کہاکہ ضلع کو ترقیاتی سکیموںمیں نظرانداز نہ کیاجائے ۔انہوںنے کہاکہ اگر حکومت نے ضلع کے ساتھ انصاف نہیں کیاتو بڑے پیمانے پر احتجاج کیاجائے گا۔
 

لسانہ کا شہری لاپتہ 

سرنکوٹ //شبیر احمد ولد صادق خان ساکنہ لوہر لسانہ سرنکوٹ مورخہ 31دسمبر سے کہیں لاپتہ ہیں، وہ گھر سے پونچھ قصبہ کے لئے نکلے تھے لیکن واپس گھر نہیں لوٹے، ان کا فون بھی سوئچ آف آرہاہے۔ موصوف کی صحت سازگار نہیں، ذہنی طور پریشان ہیں۔ تلاش بیسار کے بعد کہیں اتہ پتہ نہ چلا۔ اگر کسی شخص کو کوئی پتہ ہو تو برائے مہربانی فون نمبر9622371371پر رابطہ کریں۔
 
 

نثار خان کی چچازاد بہن کا انتقال 

مینڈھر //سابق وزیر نثار احمد خان کی چچازاد بہن گزشتہ روز انتقال کرگئیں ۔ وہ کانگریس کی ریاستی سیکریٹری پروین سرور خان کی بھابھی بھی تھیں ۔ مرحومہ کی نماز جنازہ میں بڑی تعداد میںلوگوں نے شرکت کی ۔ ان کی وفات پر مقامی سیاسی و سماجی کارکنان نے دکھ کا اظہار کرتے ہوئے کہاکہ وہ اس گھڑی لواحقین کے ساتھ برابر کے شریک ہیں ۔ انہوںنے مرحومہ کی روح کی تسکین کیلئے دعائے مغفرت اور لواحقین کیلئے صبر جمیل کی دعا کی ۔
 

بنولہ میں پینے کے پانی کی شدید قلت 

۔35سالہ پرانی سپلائی سکیم ناکارہ بن کر رہ گئی 

جاوید اقبال
 
مینڈھر//مینڈھر کے علاقہ بنولہ کے وارڈ نمبر8اور اس کے گرد ونواح کے لوگوںکو پینے کے صاف پانی نہیں مل رہاجس وجہ سے مرد و زن پریشانی سے دوچار ہیں ۔مقامی لوگوں کاکہناہے کہ محکمہ پی ایچ ای کے ملازمین ایمانداری سے ڈیوٹی نہیں کرتے جس کی وجہ سے35سالہ پرانی سکیم ناکارہ بن کر رہ گئی ہے ۔محمد اشرف نامی ایک شخص کاکہناہے کہ 35سال قبل ایک لائن لگا ئی گئی تھی جس سے ہزاروں لوگوں کوپانی سپلائی ہورہاتھا تاہم محکمہ کی لا پرواہی کے باعث سکیم ناکارہ بنتی جارہی ہے اوراب اس سے صرف اثرورسوخ والے چندگھروں کو پانی سپلائی ہورہاہے جبکہ بقیہ آبادی پریشان کن حالات سے گزر رہی ہے ۔ان کا کہنا تھا کہ انہوں نے کئی بار محکمہ کے اعلیٰ آفیسران سے بھی شکایت کی لیکن کسی نے ان کی نہ سنی ۔ ان کا کہنا تھا کہ مقامی سطح پر تعینات ملازمین ڈیوٹی سے غیر حاضر رہتے ہیں اور ایسے ملازمین سے نہ ہی لوگوں کو کوئی فائدہ پہنچ رہاہے اور نہ ہی محکمہ کو۔انہوںنے کہاکہ یہ ملازمین محکمہ پر بوجھ بنے ہوئے ہیں جنہیں یہاںسے تبدیل کردیاجائے ۔اشرف کاکہناہے کہ کئی جگہوں سے ملازمین نے پائپیں بھی اکھاڑ کر بیچ دی لیکن محکمہ کو ٹس سے مس نہیں ۔ انہوںنے کہاکہ اس بات کی انکوائری کروائی جائے کہ یہ سکیم کیونکر ناکارہ بن گئی ہے اور لوگوںکو پانی نہیں مل رہا۔مقامی لوگوں کاکہناہے کہ خواتین کو کئی کلو میٹر دور سے پانی لاناپڑتاہے اور ان کا سار ادن ہی اسی کام میں بیت جاتاہے لیکن ملازمین کو کوئی احساس نہیں ۔انہوںنے محکمہ پی ایچ ای کے وزیر سے اپیل کی کہ وہ ایسے ملازمین کے خلاف کارروائی کریں اور علاقے میں پانی کی سپلائی کو بحال کیاجائے نہیں تو لوگ احتجاج کی راہ اختیا ر کریںگے ۔
 
 

این ایس ایس سرمائی کیمپ …راجوری ،تھنہ منڈی اور سرنکوٹ کالجوں میں تقریبات 

راجوری +پونچھ //این ایس ایس (نیشنل سروس سکیم ) کے سرمائی کیمپ کے سلسلے میں راجوری پونچھ کے کئی کالجوں میں ہفتہ وارپروگراموں کی شروعات ہوگئی اور اس حوالے سے ابتدائی تقریبات منعقد کی گئیں ۔ اس سلسلے میںگورنمنٹ پی جی کالج راجوری میں بھی کیمپ کاآغاز ہواجس کا افتتاح کالج کے پرنسپل ڈاکٹر جاوید احمد قاضی نے کیا ۔اس موقعہ پر ڈاکٹر ایم کے وقار ،پروفیسر حقیقت سنگھ ایشر ، پروفیسر منظور ڈار ، پروفیسر اخلاق احمد ، پروفیسر شکیل احمد ، پروفیسر پرتیما ، پروفیسر دیویا ، پروفیسر عرفان ، ڈاکٹر نسیم احمد ودیگران بھی موجود تھے ۔اس دوران این ایس ایس کی بوائز ونگ کی طرف سے استقبالیہ پیش کیاگیا اورساتھ ہی اس کیمپ کی اہمیت پر روشنی ڈالی گئی ۔اپنے خطاب میں کالج پرنسپل نے کہاکہ ایسے کیمپوں کا انعقاد کیاجاناچاہئے ۔ انہوںنے رضاکاروں پر زور دیاکہ وہ اس کیمپ میں پورے جذبے سے شریک ہوں اور اس سے ملنے والے فائدہ کو حاصل کریں ۔افتتاحی پروگرام کا اختتام پروفیسر راحیلہ مشتاق کی شکریہ کی تحریک سے ہوا۔اسی طرح کی تقریب گورنمنٹ ڈگری کالج تھنہ منڈی میں بھی ہوئی جس کا افتتاح کالج کے پرنسپل ڈاکٹر شکیل احمد رینہ نے کیا ۔ اس موقعہ پر این ایس ایس انچارج پروفیسر سلیم ایاز راتھر بھی موجود تھے ۔افتتاحی پروگرام سے خطاب کرتے ہوئے شکیل رینہ نے کہاکہ طلباء کو رضاکارانہ طور پر ایسی سرگرمیوں کو بڑھ چڑھ کر حصہ لیناچاہئے ۔ انہوںنے کالج کے این ایس ایس یونٹ کی سراہنا کرتے ہوئے کہاکہ اس طرح کے پروگرام آئندہ بھی ہونے چاہئیں ۔وہیں گورنمنٹ ڈگری کالج سرنکوٹ میں بھی این ایس ایس کے بینر تلے ہفتہ بھر چلنے والے پروگراموں کا آغاز ہواجس کا افتتاح کالج پرنسپل تیجندر سنگھ نے کیا۔ ا س موقعہ پر کالج کے این ایس ایس رضاکاروں نے بڑی تعداد میں حصہ لیا۔اپنے خطاب میں پرنسپل نے کہاکہ انہیں امید ہے کہ اس پروگرام سے طلباء بہت کچھ سیکھیںگے اور پھر وہ پورے سماج کی خدمات کیلئے کام کریںگے ۔ اس موقعہ پر این ایس ایس پروگرام آفیسر پروفیسر ڈاکٹر عبدالررازق ،پروفیسر ڈاکٹر محمود احمد،ڈاکٹر شیراز احمد میر ،پروفیسر مظفر حسین وغیرہ بھی موجود تھے۔