مزید خبریں

محکمہ جنگلات کے ملازمین کا احتجاج 

نیوز ڈیسک
راجوری +پونچھ //راجوری اور پونچھ میں محکمہ جنگلات کے نان گزیٹیڈ ملازمین نے اپنے مطالبات کے حق میں نعرے بازی کرتے ہوئے احتجاج کیا ۔دونوں اضلاع میں ضلع صدر مقامات پر ان ملازمین نے احتجاج کیا ۔ملازمین کاکہناتھاکہ ان کے محکمہ جاتی پرموشنل کمیٹی اور مناسب تنخواہ گریڈ کے مطالبات التوامیں رکھے گئے ہیں اور حکومت اس جانب کوئی دھیان نہیں دے رہی اور نہ ہی متعلقہ وزارت و افسران کو کوئی پرواہ ہے ۔انہوںنے کہاکہ حکومت کی طرف سے انہیں مشکل سے کچھ سہولیات دستیاب ہیں اور باقی مطالبات زیر التوارکھ دیئے گئے ہیں ۔ انہوںنے انتباہ دیاکہ اگر مطالبات پورے نہ ہوئے تو وہ آنے والے دنوں میں بڑے پیمانے پر احتجاج کریںگے ۔
 

انکم ٹیکس ٹیم کا تجارتی مرکز پر چھاپہ 

ریکارڈ کی چھان بین شروع 
نیوز ڈیسک
راجوری //انکم ٹیکس کی ایک ٹیم نے راجوری کے ایک تجارتی مرکز پر اچانک چھاپہ مار کر ریکارڈ کی چھان بین شروع کردی ہے ۔ذرائع کے مطابق جمعرات کی صبح محکمہ کی ایک ٹیم نے پیٹرول پمپ راجوری کے نزدیک جموں پونچھ شاہراہ پر واقع ایک تجارتی مرکز پر اچانک چھاپہ ماراجس دوران دوکان کے شٹر نیچے کرکے پولیس بھی تعینات کردی گئی ۔ذرائع کاکہناہے کہ ٹیم نے اس تجارتی مرکز میں ریکارڈ کی چھان بین شروع کردی ہے اور یہ سلسلہ آخری اطلاعات موصول ہونے تک جاری تھا۔ذرائع کاکہناہے کہ یہ چھاپہ ایک ایسے تجارتی مرکز پر ماراگیا جو ایک مقامی شخص کی طرف سے چلایاجارہاہے جو کاسمیٹک وغیرہ کا سامان راجوری اور گردونواح کے علاقوں میں سپلائی کرتاہے ۔
 

منجاکوٹ میں بجلی کی غیراعلانیہ کٹوتی 

امتحانات دے رہے طلباء کی پڑھائی متاثر

پرویز خان
 
منجاکوٹ //تحصیل منجاکوٹ میں بجلی کی غیر اعلانیہ طور پر کٹوتی کے باعث لوگوں میں محکمہ بجلی کے تئیں سخت غصہ پایا جا رہا ہے۔منجاکوٹ ایک وسیع اور دوردراز علاقہ ہے جہاں ہر ایک علاقے سے بجلی کی غیر اعلانیہ کٹوتی کی شکایات موصول ہورہے ہیں ۔مقامی لوگوں کاکہناہے کہ غیر ضروری طور پر بجلی کٹوتی کی جارہی ہے جس نے ان کیلئے مشکلات کھڑی کررکھی ہیں ۔ان کاکہناہے کہ ان دنوں پرائمری کلاسوں سے کالج سطح تک کے طلباء کے سالانہ امتحانات چل رہے ہیں مگر بجلی نہ ہونے کی وجہ سے بچوں کی پڑھائی متاثر ہورہی ہے اور انہیں رات کو پڑھنے کا موقعہ ہی نہیں ملتا۔انہوںنے کہاکہ جب طلباء کو بجلی کی سہولت بھی نہیں ملے گی تو وہ پھر امتحان میں کیا لکھیںگے اور کیسے مسابقتی امتحانات کیلئے تیار ہوںگے ۔انہوںنے ڈپٹی کمشنر راجوری ڈاکٹر شاہد اقبال چوہدری سے مانگ کی کہ وہ محکمہ بجلی کے آفیسران کو سپلائی میں بہتری لانے کی ہدایت جاری کریں ۔
 

مولانا اسماعیل کے انتقال پر تعزیتی اجلاس 

سرنکوٹ// ریاست کے سرکردہ عالم دین مولانا محمد اسماعیل اثری کے انتقال پر محمدی جامع مسجد اقبال نگر سرنکوٹ میں ایک تعزیتی مجلس کا انعقاد کیا گیا۔مدرسہ بدرالاسلام کے مہتمم اور امام وخطیب مولانا عبد الشہید سلفی نے مولانا کی خدمات کو سراہتے ہوئے انکی وفات کو عظیم خسارہ قرار دیا۔اس موقعہ پرمولانا عبد الباسط مدنی،ناظم ضلعی جمعیتِ اہلحدیث پونچھ،سرکردہ ادیب اور ماہر تعلیم محمد حسین سلیم اور محمدی جامع مسجد کی مجلس منتظمہ کے صدر خواجہ محمد یٰسین نے بھی مرحوم کو زبردست خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے مغفرت اور بلندی درجات کی دعا کی ۔
 

مرتضیٰ خان کو صدمہ  بہنوئی انتقال کرگئے 

جاوید اقبال
 
مینڈھر//قانون ساز کونسل کے سابق رکن و سینئر رہنمامرتضی احمد خان کے بہنوئی محمد مشتاق خان جمعرات کی صبح جموں میڈیکل کالج میں انتقال کر گئے ۔ان کی نعش آبائی گائوں گلہوتہ لائی گئی جہاں اسے ہزاروں افراد کی موجودگی میں سپرد خاک کردیاگیا۔مرحوم کی وفات پر کئی سیاسی و سماجی شخصیات نے دکھ کا اظہار کرتے ہوئے غمزدہ کنبے کے ساتھ ہمدردی کا اظہار کیا۔ان کا کہنا تھا کہ مشتاق خان نے بطور ملازم محکمہ تعمیرات عامہ میں اپنی نوکری کے دوران بہت اچھا کام کیا جنہیں آج بھی لوگ یاد کرتے ہیں ۔مرحوم گزشتہ کئی عرصہ سے علیل تھے اور جمعرات کو وہ انتقال کرگئے ۔ان کی وفات پر سابق ایم ایل اے رفیق حسین خان،سابق ایم ایل سی محمد رشید قیریشی ،سابق ایم ایل سی رحیم داد،سابق وزیر نثار احمد خان،حاجی محمد اعظم ساگر،آل انڈیا کانگریس کمیٹی کی ممبر پروین سرور خان ،وسیم احمد خان،چوہدری ولی داد،ایڈووکیٹ محمد معروف خان،ایڈووکیٹ ندیم احمد خان،ایڈووکیٹ شوکت چوہدری ،ماسٹر عنایت اللہ خان،محمد اعظم فانی،شوکت چوہدری،محمد صادق چوہدری،ماسٹر محمد دین پسوال،حاجی محمد صادق خان ،جاوید گلشن ،خورشید احمد،ماسٹر طلعت سرور خان،حاجی خورشید میرودیگران نے گہرے دکھ کا اظہار کرتے ہوئے کہاکہ وہ لواحقین کے ساتھ اس دکھ کی گھڑی میں برابر کے شریک ہیں ۔انہوںنے مرحوم کی روح کی تسکین کیلئے دعائے مغفرت اور لواحقین کیلئے صبر جمیل کی دعا کی۔
 

پرائمری اسکول کلسیاں شاہدرہ شریف 

2014میں تباہ ہوئی عمارت ہنوز تعمیر کی منتظر

طارق شال
 
تھنہ منڈی // تعلیمی زون تھنہ منڈی کے پرائمری اسکول کلسیاں کی عمارت 4 سال سے تعمیر کی منتظر ہے۔عمارت نہ بن پانے پر اسکولی بچوں کو دو کلو میٹر پیدل سفر کر کے مڈل اسکول اپر شاہدرہ میں امتحان دینے کے لئے جا نا پڑاہے۔ اس سکول میں 40طلباء زیر تعلیم ہیں جو عمارت کے بغیر مشکلات کاسامنا کررہے ہیں۔واضح رہے کہ 5 ستمبر 2014 میں آئے سیلاب کے دوران اسکول کی عمارت گر کر تباہ ہو گئی تھی جسکو اس وقت تک تعمیر نہیں کیا گیا۔ چار سال میں اسکول میں زیر تعلیم بچوں کو نزدیکی کھیتوں میں بیٹھ کے تعلیم حاصل کر نے مجبور کیا گیا جبکہ وہ امتحان دینے کیلئے دو کلو میٹر دوسرے سکول جاتے ہیں ۔ مقامی لوگوں کاکہناہے کہ تعلیم کو فوقیت دینے کے وعدے تو بڑے بڑے کئے جارہے ہیںمگر حقیقت حال کا اندازہ اس سکول کی عمارت سے لگایاجاسکتاہے جو چار سال میں نہیں بن پائی ۔انہوںنے کہاکہ ایسے بچے کیا پڑھائی کرپائیںگے جنہیں بیٹھنے تک کیلئے جگہ نہ ملے اور وہ دربدر ہوں۔رابطہ کرنے پر زونل ایجوکیشن افسر تھنہ منڈی ٹھاکر دیوان چند نے بتا یا کہ چار سال قبل اس اسکول کی عمارت سیلاب میں منہدم ہوگئی تھی جس کی تعمیر کے لئے کچھ رقم محکمہ تعلیم کے پاس موجود ہے تاہم یہ عمارت کی تعمیر کیلئے کافی نہیں ۔ انہوں نے یقین دلایاکہ وہ اس سلسلے میں اعلیٰ حکام سے بات کریںگے تاکہ آئندہ سال بچوں کو مشکلات کاسامنا نہ کرناپڑے۔
 

بیت الخلاء کے اردگرد گندگی جمع،پانی بھی آلودہ سپلائی

جاوید اقبال
 
مینڈھر//بس اڈہ مینڈھر پر محکمہ دیہی ترقی کی طرف سے بنایا گیا بیت الخلا خستہ حالی کاشکار ہے ۔اس کی صفائی اور دیکھ ریکھ کیلئے ایک کرمچاری تو تعینات ہے تاہم وہ صفائی کرنے میں ناکام نظر آرہاہے ۔محمد زمان نامی ایک شخص نے کہاکہ اس بیت الخلاء کی حالت اس قدر خراب ہوچکی ہے کہ کوئی بھی شخص اس کے اندر جانے سے کتراتاہے ۔ ان کا کہنا تھا کہ خواتین مجبور ہوکر اس بیت الخلاء کا استعمال کرتی ہیں نہیں تو یہ استعمال کے قابل نہیں ۔ ان کا کہنا تھا کہ بیت الخلاء کے اندرصاف پانی بھی دستیاب نہیں اور دریا سے موٹر لگاکر پانی سپلائی کیاجارہاہے ۔انہوںنے کہاکہ یہ پانی ایسے مقام سے آتاہے جہاں گندگی کے ڈھیر جمع ہیں اور کئی جانوروں کے مردار بھی پڑ ے رہتے ہیں ۔انہوںنے کہاکہ اس پانی سے ہاتھ صاف نہیں بلکہ اور بھی خراب ہوجاتے ہیں ۔ان کاکہناہے کہ بیت الخلاء کے باہر بھی پانی کا کوئی انتظام نہیں ۔مقامی لوگوں کاکہناہے کہ انتظامیہ کو اس بیت الخلاء کی حالت کا مشاہدہ کرناچاہئے ۔انہوںنے کہاکہ ایسے بیت الخلاء سے بیماریاں پید اہوسکتی ہیں اس لئے فوری طور پر اس کے اندر اور باہر صفائی کا انتظام کیاجائے اور صاف پانی سپلائی کیاجائے ۔
 
 

پولیس افسر کے اعزاز میں تقریب 

حسین محتشم
 
پونچھ//ڈی وائی ایس پی آپریشن پونچھ ڈاکٹر سلیم کے پونچھ سے تبادلے پر تقریبات منعقد کئے جانے کا سلسلہ جاری ہے۔ جامعہ ضیاء العلوم ہائی اسکول پونچھ کی جانب سے پرنسپل مولانا وحید احمد بانڈے کی سربراہی میں ایک تقریب منعقد کی گئی جس میں پونچھ کے معروف ادباء، شعراء اور دیگر معزز شہریوں نے شرکت کی ۔ اس دوران مقررین نے ڈاکٹر سلیم کی خدمات کو سراہتے ہوئے کہاکہ انہوںنے اپنے فرائض منصبی کو ایمانداری سے انجام دیا جس کیلئے انہیں ہمیشہ یاد رکھاجائے گا۔اپنے خطاب میں ڈاکٹر سلیم نے کہا کہ تبادلے وتقرریاں سرکاری ملازمت کا حصہ ہیں لیکن عوامی فلاح وبہبود اور علاقائی ترقی کے لئے افسران کی عمدہ خدمات کو ہمیشہ یاد رکھا جاتا ہے۔انہوں نے تمام شرکاء اور انتظامیہ کا شکریہ ادا کیا ۔
 

آنگن واڑی ورکروں اور ہیلپروں کا احتجاج جاری 

حسین محتشم
 
پونچھ//آنگن واڑی ورکروں اور ہیلپروں نے اپنے مطالبات کے حق میں سولہویں روز بھی احتجاج کا سلسلہ جاری رکھا۔اس دوران یہ ورکر فوارہ گارڈن پونچھ میںجمع ہوئیں جہاں انہوںنے حکومت مخالف نعرے بازی کی ۔آنگن واڑی ورکروں اور ہیلپروں کاکہناتھاکہ جموں و کشمیر کی ہمسایہ ریاستوں ہریانہ ، پنجاب اور دہلی میں آنگن واڑی ورکروں کو ماہانہ دس ہزار روپے مشاہرہ کے طور پر ملتے ہیں اور انہیں صرف 3600روپے دیئے جاتے ہیں جو بھی وقت پر ادا نہیں ہوتے ۔ انہوں نے کہا کہ ریاستی سرکار متعدد فلاحی سکیموں کو عملی جامہ پہنانے کے ان کی خدمات مختلف پروجیکٹوں اور محکموں میں حاصل کرتی ہے لیکن ان کی اجرتوں میں اضافہ نہیں کیا جارہاجو سراسر ناانصافی ہے ۔انہوں نے حکومت پر ان کے مسائل حل کرنے میں ناکام رہنے کا الزام عائد کرتے ہوئے کہاکہ اگر دوسری ریاستوں میںآنگن واڑی ورکروں اور ہیلپروں کو باالترتیب 10ہزار اور 6ہزا رروپے ماہوار دئیے جا رہے ہیں توجموں کشمیر میں ان کے ساتھ نا انصافی کیوں کی جا رہی ہے۔ ایک خاتون ملازم نے کہا کہ سرکار آنگن واڑی کارکنان اور ہیلپروں کا استعمال درجن بھر محکمہ جات میں مختلف نوعیت کی کاموں کے لئے کرتی ہے لیکن جب انہیں مشاہرہ دینے کی بات آتی ہے تو ان کے ساتھ امتیاز کیا جاتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ پچھلے دس برس سے اشیائے ضروریہ کی قیمتیں کہیں کی کہیں پہنچ چکی ہیں لیکن ان کے مشاہرہ میں اضافہ نہیں کیا جا رہا ہے جس کے باعث انہیں مشکلات کا سامنا ہے۔انہوںنے کہاکہ انہیں سبکدوشی پر4لاکھ روپے اور ہیلپروں کو2لاکھ روپے دیئے جائیں۔انہوں نے پنشن سکیم کا مطالبہ بھی کیا۔انہوںنے انتباہ دیاکہ مطالبات پورے ہونے تک ان کا احتجاج جاری رہے گا۔
 

کونسل چیئرمین کا گورسائی میں استقبال 

جاوید اقبال
 
مینڈھر//قانون ساز کونسل کے چیئرمین حاجی عنایت جمعرات کو پونچھ کے دورے پر گورسائی پہنچے جہاں جڑانوالی گلی میں ان کا والہانہ استقبال کیاگیا۔موصوف کی آمد پر چوہدری امان اللہ ٹھیکیدار نے پگڑی پہنا کر ان کا استقبال کیا۔ ان کے ہمراہ لیبر یونین کے صدر عبدالمجید چوہدری ،جموں وکشمیر ہیومن ویلفیئر سوسائٹی کے چیئرمین محمد رزاق بجاڑ ،محمد رزاق بجاڑ،منظور حسین شاہ، زمان حسین شاہ اور ٹیپو چوہدری بھی تھے ۔اس موقعہ پرانتظامیہ کی طرف سے ایس ڈی ایم مینڈھرکے علاوہ پولیس آفیسران بھی جڑانوالی گلی پہنچے۔اس موقعہ پر لوگوں نے حاجی عنایت سے شکایت کی کہ مینڈھر میں تعمیروترقی کے کام نہیں ہورہے اور سیاسی مداخلت بہت زیادہ ہے ۔ انہوںنے کہاکہ اس سیاسی مداخلت کا خمیازہ عام لوگوں کو بھگتناپڑرہاہے ۔انہوں نے بتایا کہ مینڈھر میں بجلی ،پانی اور سڑکوں کی خستہ حالت ہے لہٰذا سرکار مینڈھر کی طرف دھیان دے تاکہ تعمیروترقی کے کام ہوسکیں۔ حاجی عنایت نے لوگوں کو یقین دلایا کہ وہ مینڈھر میں تعمیراتی کاموں کے لئے متعلقہ حکام سے بات کریںگے اور بجلی ،پانی و سڑک روابط کی حالت بہتر بنانے کے لئے انتظامیہ سے بات کی جائے گی ۔موصوف بعد میں گورسائی علاقہ میں سید زمان حسین شاہ کے گھر چلے گئے جہاں پر ان کو ایک پروگرام میں شرکت کرنا تھی۔اس دوران مقامی لوگوںنے مانگ کی کہ محلہ ہنڈی اور گورسائی میں لنک سڑک تعمیر کی جائے جبکہ گورسائی نالہ میں اے ٹی ایم کھولاجائے اور گورسائی موڑ بجلی ڈھانچے کو اپ گریڈ کیاجائے ۔ انہوںنے گورسائی میں نئے راشن ڈپو اور پرائمری ہیلتھ سنٹروں کے قیام کی بھی مانگ کی ۔