مزید خبریں

 کرنٹ لگنے سے ایک شخص زخمی 

 بانہال ہسپتال انتظامیہ کی عدم توجہی کے خلاف لوگوں کا احتجاج 

محمد تسکین 
بانہال // جموں سرینگر شاہراہ پر واقع شیر بی بی کے مقام بجلی کا کرنٹ لگنے کی وجہ سے ایک شخص جھلس کر زخمی ہوگیا ہے اور مزید علاج کیلئے اسے وادی کشمیر کے ہسپتال منتقل کیا گیا ہے ۔ زخمی شخص کی شناخت امتیاز احمد نائیک ولد عبد الرشید نائیک ساکنہ ٹھاچی ، بانہال کے طور کی گئی ہے۔ زخمی کو بانہال ہسپتال منتقل کیا گیا ہے جہاں ڈاکٹروں اور ہسپتال انتظامیہ کی عدم توجہی کے خلاف لوگوں نے احتجاج کیا۔ لوگوں کا کہنا ہے کہ شیر بی بی کے نزدیک فورلین شاہراہ کو تعمیر کرنے والی کمپنیوں کے ساتھ کام کرنے والے ٹھیکیداروں نے ملبہ ڈالا ہوا ہے جس کی وجہ سے زمین کی سطح اونچی ہوگئی ہے اور اوپر سے گذرنے والی بجلی لائین اور زمین کا فیصلہ کم ہو کر رہ گیا ہے اور ہی وجہ اس حادثے کا سبب بنی۔ محمد اقبال نامی ایک عینی شاہد نے بتایا نے کشمیر عظمیٰ کو بتایا کہ امتیاز احمد مزدور پیشہ انسان ہے اور خچروں کے ذریعے لوگوں کو ریت بجری فراہم کرتا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ شیر بی بی کے نزدیک مکنگ یارڈ سے وہ گذررہا تھا کہ اوپر سے گذرنے والی ٹرانسمیشن لائین نے اسے زور دار کرنٹ مارا جس کی وجہ سے امتیاز جھلس کر زخمی ہوا اور اسے بے ہوشی کی حالت میں فوری طور پر بانہال ہسپتال پہنچایا گیا ۔انہوں نے کہا کہ ہسپتال میں تعینات عملہ کے لیت و لعل کے خلاف لوگوں نے احتجاجی مظاہرے کئے۔ ڈاکٹروں نے زخمی کی حالت اگرچہ خطرے سے باہر بتائی ہے تاہم ابتدائی طبی امداد کے بعد زخمی کو مزید چیک اپ کیلئے سرینگر کے ہسپتال روانہ کیا گیا ہے۔ لوگوں نے فورلین شاہراہ کو تعمیر کرنے والی کمپنی ،متعلقہ ٹھیکیدار اور محکمہ بجلی کے خلاف قانونی کارروائی کا مطالبہ کیا ہے اور اس زخمی مزدور کے حق میں معاوضے اور علاج و معالجہ کیلئے مالی مدد کی اپیل کی ہے ۔
 
 
 

 بھکاریوں نے لوگوں کا جینا حرام کردیا

ضلع انتظامیہ رام بن خاموش تماشائی،عوام پریشان 

ایم ایم پرویز 
رام بن //ریاست میں بھیک مانگنے پر پابندی عائد ہونے کے باوجود حُکام ضلع میں بھیک مانگنے کی بدعت کی طرف اپنی آنکھیںبند کئے ہوئے ہیں، جسکی وجہ سے بچوں کی ایک بڑی تعداد کو ضلع کے مین مارکیٹ میں پیدل چلنے والوں ،ڈرائیوروں اور مسافروں سے بھیک مانگتے دیکھا جاتا ہے۔بچے بشمول لڑکیوں کو لیتے ہوئے لوگوں سے خیرات مانگ رہے ہیں، جن میں سے بیشتر غیر ریاستی اور بہرے و گونگے ہیں۔ضلع انتظامیہ 14سال سے کم عمر کے بچوں کی زندگی سدھارنے میں خاموش ہے۔لوگوں کا کہناہے کہ اگر انتظامیہ چاہیے تو وہ ان کی زندگی سدھار سکتی ہے۔بھیک مانگنے سے ایک غلط تاثُر ملتا ہے۔پولیس بھی اس سلسلہ میں خاموش بیٹھا ہے ا ور اس سلسلہ میں ابھی تک کوئی بھی کوشش نہیں کی گئی ہے۔لوگوں کے مطابق ضلع میں اس نہج میں گُذشتہ کئی مہینوں سے اضافہ دیکھنے کو ملا ہے اور بکھاریوں کی ایک بڑی تعداد نے مساجد اور مندروں کے مین گیٹوں اور بس ۔اسٹینڈپر اپنا ڈھیرہ جما کے رکھا ہے۔عوام نے متعلقہ حُکام سے اپیل کی ہے کہ وہ اس سلسلہ میں ضروری کاروائی عمل میں لائے،تاکہ ضلع میں بھیک کی بدعت کا خاتمہ ہو سکے۔
 
 
             

تمباکو نوشی کے مُضر اثرات پر توسیعی لیکچر کا اہتمام 

عظمیٰ نیوز
کشتواڑ//انڈین آرمی کی جانب سے ضلع کے درنگدھرون علاقہ میں ’’تمباکو نوشی کے مُضر اثرات پر ایک توسیعی لیکچر کا اہتمام کیا گیا جسکا مقصد نوجوانوں میں تمباکو نوشی کے مُضر اثرات، اسکی علامتوں، علاج اور بازآبادکاری سے واقف کرنا تھا ۔لیکچر کے دوران مقامی لوگوں اور طلاب کو منشیات کے مُختلف مراحل سے آگاہ کیا گیا ۔اسکے علاوہ لیکچر کے دوران منشیات کی بدعت کے مرحلوں بشمول منشیات کے اقسام اور کس طرح سے منشیات فروش ایک نوجوان کی زندگی کے ساتھ کھلواڑ کر رہے ہیں اور ا ن کو منشیات کے تباہ کن ماحول میں دکھیلتے ہیں۔مقامی لوگون نے فوج کی جانب سے ایسی کارروائی منعقد کرنے کی ستائش کی اور کہا کہ اس پروگرام سے علاقہ کے لوگوں خصوصاً نوجوانوں کو منشیات کے مُضر اثرات کی جانکاری حاصل ہوگی ۔
 
 

چھاترو میں پانی بچائو کی اہمیت پر توسیعی لیکچر

عظمیٰ نیوز
کشتواڑ//ضلع کے چھاترو میں فوج کی جانب سے لوگوں کو پانی بچائو کی اہمیت پر ایک توسیعی لیکچر کا اہتمام کیا گیا ۔فوج اس سلسلہ میں کرہ ارض پر ایک اہم جُز کو بچانے کے لئے بدستور کاوشیں کر رہی ہے۔لیکچر میں کل ملا کر 43طلاب نے شرکت کی۔لیکچرکے دوران طلاب کو  دنیا بھر میںپانی کی قلت کے مسئلہ سے باخبر کیا گیا اور انہیں پانی بچانے کی حوصلہ افزائی کی گئی۔طلاب کو پانی بچانے کے لئے مختلف اقدام کی جانکاری دی گئی اور کہا گیا کہ اسکے منصفانہ استعمال ،بارش کے پانی کو جمع کر کے وغیرہ اقدام سے پانی کو بچایا جا سکتا ہے۔طلاب اور اساتذہ نے فوج کی جانب سے ایسا پروگرام منعقد کرنے پر فوج کی سراہنا کی اور کرہ ارض پر اہم قدرتی وسیلہ کو بچانے کی حلف لیا۔
 
 
        

ماسٹروں فورم کا وفد سی ای او ڈوڈہ سے ملاقی 

تنخواہ واگُذار کرنے اور ساتویں تنخواہ کمیشن کے فائد کا مطالبہ 

طاہر ندیم خان 
بھدرواہ // سرو شکھشاابھیان کے تحت کام کر رہے بھدرواہ، بھالہ اور بھاگواہ زون کے ماسٹرس فورم کے ایک وفد نے زیر قیادت صدر فورم منیر احمد شیخ چیف ایجوکیشن افسر ڈوڈہ سے ملاقات کی ۔ ماسٹروںنے مبینہ الزام لگایا کہ ایس ایس آر بی کی جانب سے بطور جنرل لائن ٹیچر تعینات کرنے کے باوجود انکے ساتھ سوتیلی ماں جیسا برتائو کیا جا رہا ہے اور انکے حق میں ساتویں تنخواہ کمیشن کے فوائد اجرا نہیں کئے جا رہے ہیں۔ انہوں نے مبینہ الزام لگایا کہ انہیں تنخواہ بھی باقاعدگی کے ساتھ واگُذار نہیں کیا جا تا ہے فورم کے ترجمان سجاد سرمدی نے مزید بتایا کہ وہ گُذشتہ 6 مہینوں سے اپنے جائز حق کے لئے جد و جہد کر رہے ہیںلیکن ان کے جائز مطالبات پر کوئی دھیان نہیں دیا جا رہا ہے۔فورم نے مزید بتایا کہ ہم میں سے بعض اساتذہ ریٹائر منٹ کے دہانے پر پہنچ گئے ہیںاور دہائیوں سے محکمہ کو اپنی خدمات فراہم کی ہیں۔سرمدی نے سی ای او سے مطالبہ کیا کہ جموں ضلع میں کام کر رہے ماسٹرس کے طرز پر ڈوڈہ، رام بن ، اور کشتواڑ اضلاع کے ماسٹرس بطور ہیڈ ٹیچرس کے طور  ماسٹرس کی خالی اسامیوں کے عوض تنخواہ واگُذار کی جائے۔فورم نے سی ای او ڈوڈہ محمد شریف چوہان کو ایک میمورنڈم بھی پیش کیا۔سی او نے وفد ک وصبر و تحمل سے سُنا اور یقین دلایا کہ وہ یہ معاملہ ڈائریکٹر سکول ایجوکیشن کے ساتھ اُٹھائیں گے۔فورم میں منظور احمد خان ، اومکار بھگت، ساجد حُسین، ابھے شرما ، دیا کرشن ، ہربنس لعل، مدن لعل ، فاروق احمد، اومیش کمار، ڈی کے بھارتی اور سوشما دیوی شامل تھے۔
 
 

مویشیوں کی سمگلنگ کی کوشش ناکام 

۔6مویشی بازیاب ،3 سمگلر گرفتار 

کشتواڑ// کشتواڑ پولیس نے بھنڈار کوٹ علاقہ سے مویشیوں کی سمگلنگ کی ایک کوشش ناکام بنا دی اور 03 مویشی سمگلروں کو گرفتار کرکے انکے قبضہ سے06مویشی بازیاب  کئے۔پولیس کو مصدقہ اطلاع ملی تھی کہ سنگرام بھاٹہ سے چھاترو تک مویشیوں کی سگلنگ کی جا رہی ہے ۔ پولیس نے بھندر کوٹ میں ایک ناکہ لگایا ،جہاں پر ایک گاڑی کو روکا گیا جس میں سے 06مویشی بازیاب کئے گئے اور تین سمگلروں کو بھی حراست میں لیا، جو یہ مویشی بغیر اجازت کے چھاترو سے کشتواڑ کی جانب لے جارہے تھے۔پولیس نے اس سلسلہ میں ایک معاملہ زیر ایف آئی آر 195/2018 درج کیا۔گرفتار شدہ سمگلروں کی پہچان منظور احمد ولد جمال دین ساکنہ گزر پل چھاترو اور محمد عثمان ولد غام محمد ساکنہ ہلڑ کشتواڑ،برہان ملک ولد غلام احمد ملک ساکنہ سیو ا چھاترو کے طور کی گئی ہے۔ 
 
 

رام بن میں نقب زنی کی واردات

ایم ایم پرویز 
رام بن //قصبہ میں نقب زنوں نے قصبہ کے عقب میں واقع ایک جمعہ اور ہفتہ کی شب کے درمیان مکان میں نقب لگائی ۔ رام بن پولیس نے حسب معمول اس میں بشیر احمد وانی ولد غنی جو وانی کی تحریری شکایت پر ایک معاملہ درج کیا ہے۔حیرانی کی بات ہے کہ مکان پولیس اسٹیشن کے پاس ہی واقع ہے۔ نقب زنوں نے گھر سے گھریلو اشیاء تانبے کے برتن ،بسترے اور دیگر گھریلو ایٹمز چُر الئے ہیں۔پولیس کے مطابق پولیس نے کیس درج کرکے مزید کارروائی شروع کر دی ہے اور توقع کا اظہار کیا ہے کہ عنقریب ہی نقب زنوں کو گرفتار کیا جائے گا۔