مزید خبریں

محرم انتظامات کیلئے گورنر انتظامیہ کی سراہنا 

پونچھ//پونچھ کی شیعہ انجمنوں نے محرم انتظامات کیلئے گورنر انتظامیہ کا شکریہ ادا کیاہے ۔انجمن جعفریہ پونچھ،انجمن تنظیم المومنین منڈی،انجمن جعفریہ سرنکوٹ مینڈھر، انجمن گلشن حسینی پلیرہ، انجمن رضائے آل محمد ساتھرہ،انجمن جعفریہ سانگلا، انجمن منتظریہ سنئی پنیالی،انجمن حسینی سنئی، انجمن انصار المہدی سرنکوٹ،انتظامیہ کمیٹی جلوس عاشورہ حسین آباد گورسائی نالہ، انتظامیہ کمیٹی مدرسہ علمیہ امام محمد باقر گورسائی نالہ، انجمن کاظمیہ بانڈی چچیاں، انجمن سادات گلپور،انجمن خدام الحسین منگناڑ،انجمن معصومیہ ہنڈی گورسائی، انجمن سجادیہ بھائی دھڑہ گورسائی، انجمن جعفریہ مینڈھر انجمن جعفریہ سر گورسائی کے عہدیداران نے  ایک مشترکہ بیان میں محرم الحرام کے دوران انتظامات کے لئے ریاستی گورنر اورضلع ترقیاتی کمشنرپونچھ راہل یادو کا شکریہ ادا کیا ہے ۔انجمن گلشن حسینی پلیرہ کے صدر اصغر علی میر نے کہا کہ شیعہ فیڈریشن کے صدر عاشق حسین کی گزارش پرریاستی گورنر نے جس طرح تمام اضلاع کی انتظامیہ کمیٹیوں کو متحرک کر کے محرم کے نتظامات کروائے اسی طرح سے پونچھ میں انتظامات کئے گئے ۔انہوں نے کہا کہ پہلی محرم سے لیکر دس محرم الحرام تک بجلی ،پانی راشن کی فراہمی کو یقینی بنایاگیا جس کے  علاوہ مجالس عزا ء اور جلوسہائے عزاء کے دوران بھی کڑے حفاظتی انتظامات کئے گئے ۔انہوں نے گورنر انتظامیہ کے ساتھ ساتھ شیعہ فیڈریشن کا بھی شکریہ ادا کیا ہے ۔
 

پاک بھارت جنگی جنون سے دور رہیں:پیپلز مومنٹ

راجوری//جموں کشمیر پیپلز مومنٹ نے بھارت اور پاکستان کے حکمرانوا ں پر زور دیا ہے کہ وہ جنگی جنون کو بڑھاوا دینے سے پرہیز کریںاور تمام تر تصفیہ طلب مسائل کو  بذریعہ گفت و شنید حل کریں۔ سینئر حریت رہنما اور پیپلز مومنٹ کے چیر مین میر شاہد سلیم نے اپنے ایک بیان میں اس بات پر گہرے افسوس کا اظہار کیا کہ بھارت نے پاکستان کے نو منتخب وزیرِ اعظم عمران خان کی جانب سے بات چیت کی پیش کش کو ٹھکرا دیا ۔ انہوں نے کہاکہ بھارت نے جس طریقے کا مظاہرہ کرتے ہوئے بات چیت کے سنہری موقعہ کو گنوا دیا ہے، اس نے نہ صرت بھارت اور پاکستان کے کروڑں عوام کو مایوس کیا ہے بلکہ اس سے امن کے عمل کو شدیدی دھچکا لگا ہے ۔میر شاہد سلیم نے دونوں ملکوں کے حکمرانوں سے اپیل کی کہ وہ خطے میں جنگی جنون کو بڑھاوہ دینے کے بجائے باہمی مسائل کو حل کرنے کے لئے سنجیدہ اور با معنی مذاکرات کا آغاز کریں۔ انہوں نے کہا کہ جموں کشمیر گزشتہ ستر برس سے ایک حل طلب مسئلہ ہے جس کے باعث دونوں ممالک کے مابین کئی جنگیں بھی ہوئی ہیں ۔انہوںنے کہاکہ  جموں کشمیر کے عوام اپنی پیدائشی حق حقِ خود ارادیت کے لئے ایک پر امن تحریک چلا رہے ہیں جسے کچلنے کے لئے بھارت ہر طرح کے گھٹیا اور غیر انسانی حربے استعمال کر چکا ہے ۔حریت رہنما نے کہا کہ جموں کشمیرکے عوام اپنے عظیم مقصد کے حصول کی خاطر گزشتہ کئی دہائیوں سے فقید المثال قربانیاں پیش کرتے آئے ہیں اور یہ سلسلہ اس وقت تک جاری رہے گا جب تک ہماری تحریک منزل مقصود تک نہیں پہنچ جاتی ۔انہوں نے انسانی حقوق کی بین الاقوامی انجمنوں اور اداروں سے اپیل کی کہ وہ کشمیر میں فورسز کے ہاتھوں ہو رہی انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کا نوٹس لے ۔
 
 

پہاڑی طبقہ کیلئے ریزرویشن کے نفاذ کا مطالبہ 

 مینڈھری//آل انڈیا کانگریس کمیٹی کی ممبر و ریاستی سکریٹری پروین سرور خان نے ریاستی گورنر سے اپیل کی ہے کہ پہاڑی طبقہ سے تعلق رکھنے والے لوگوں کو جلد از جلد شیڈیولڈ ٹرائب کادرجہ دیاجائے ۔اپنے ایک بیان میں ان کا کہنا تھا کہ نیشنل کانفرنس اور کانگریس کی حکومت نے پہاڑی طبقہ سے تعلق رکھنے والے لوگوں کیلئے پانچ فیصد ریزرویشن کا اعلان کیا تھا جس کے بعد ریاستی گورنر نے اس بل کو واپس حکومت کو بھیج دیا اور پھرسابق پی ڈی پی و بھاجپا حکومت نے یہ ریزرویشن کم کرکے تین فیصدکردی تاہم دوبارہ سے گورنر نے یہ بل اعتراضات کرکے واپس بھیج دیاجو آج تک التوا میں پڑا ہواہے ۔ انہوں نے کہاکہ یہ پہاڑی طبقہ کے ساتھ سراسر ناانصافی ہے اور قانون سازیہ کے دونوں اداروں سے پاس ہونے کے بعد گورنر کے پاس بل کو روکنے کا کوئی اختیار نہیں رہتا ۔ انہوں نے کہاکہ اب ریاست میں نئے گورنر تعینات ہوئے ہیں اور وہ امید کرتی ہیں کہ یہ معاملہ حل ہوگا اور شیڈیولڈ ٹرائب درجہ ملنے تک تین فیصد ریزرویشن دی جائے گی ۔
 
 

مینڈھر میں ترقیاتی منصوبے تعطل کاشکار :جاوید رانا

پی ڈی پی کی غلط پالیسیوں نے ریاستی معیشت تباہی کے دہانے پر پہنچادی 

جاوید اقبال
مینڈھر//منظور شدہ تعمیراتی منصوبوںمیں سست رفتاری پر گہری تشویش کا اظہار کرتے ہوئے نیشنل کانفرنس کے سینئر لیڈر اور رکن قانون ساز اسمبلی مینڈھرجاوید احمد رانا نے کہا کہ گزشتہ چار سال سے سرحدی سب ڈویژن مینڈھر میں زیر تعمیر تمام ترقیاتی منصوبے تعطل کا شکار ہیں جس کی وجہ سے عوام میں مایوسی پائی جانا قدرتی عمل ہے۔اپنے ایک بیان میں جاوید احمد رانا نے کہا کہ پی ڈی پی کی غلط پالیسیوں کی وجہ سے نہ صرف یہاں کا تعمیراتی عمل متاثر ہوا ہے بلکہ ریاستی معیشت تباہی کے دہانے تک پہنچ چکی ہے اورآج ریاست کے ذمہ مختلف مالی اداروں کے کھربوں روپے واجب الادا ہیںجس کی وجہ سے عموماً تعمیراتی سرگرمیوں پر قد غن لگی رہتی ہے۔انہوں نے کہاکہ تعلیم یافتہ نوجوان روزگار کے لئے در در کی ٹھوکریں کھا رہے ہیں،مختلف محکمہ جات میں ہزاروں غیر مستقل ملازمین گزشتہ کئی ہفتوںسے ہڑتال پر ہیںجس کی وجہ سے روز مرہ کے عوامی مسائیل میں کئی قسم کی دشواریاں حائل رہتی ہیں۔انہوں نے کہا کہ محکمہ تعلیم میں رہبرِ تعلیم اور اس قسم کی کئی دوسری فلاحی اسکیموںکو نیشنل کانفرنس قیادت نے اپنے اقتدار کے دوران متعارف کروا کر ریاست سے بے روزگاری کے مکمل خاتمے کیلئے ایک بڑا فیصلہ لیا تھالیکن سابقہ مخلوط اتحاد نے ان اسکیموں کو مزید مستحکم اور فعال بنانے کے بجائے غیر مستحکم کرکے ان اسکیموں کے زمرہ میں آنے والے ملازمین کے ساتھ بڑی نا انصافی کی ہے اورآج اس جرم کی سزا ان ملازمین کے اہل خانہ بھگت رہے ہیں۔جاوید احمد رانا نے کہا کہ سرکار کی ملازم کش پالیسیوں کی وجہ سے تنگ آ کر آج رہبر تعلیم اساتذہ سکولوں کے بجائے سڑکوں پر خاک چھان رہے ہیں اساتذہ اپنے بنیادی حقوق کے حصول کی خاطر گزشتہ کئی ہفتوں سے سراپا احتجاج ہیںجس کی وجہ سے زیر تعلیم طلبا کی تعلیم پر منفی اثرات مرتب ہوئے ہیں۔انہوں نے کہا کہ اس پورے سرحدی سب ڈیویژن مینڈھر میں آباد عوام کو گوناں گوں مسائل کا سامنا ہے۔ان کاکہناتھاکہ منظور شدہ سڑکوں کے تمام پروجیکٹ پر کام تعطل کا شکار ہے،تمام لفٹ اسکیموں پر نہ معلوم وجوہات کی بنیاد پرکام التوا میں رکھا گیا ہے جس کی وجہ سے عوام میں مایوسی پائی جا رہی ہے۔انہوں نے گورنر انتظامیہ سے مطالبہ کیا کہ منظور شدہ تمام پروجیکٹوں پر جلد کام شروع کرکے وعدہ بند معیاد میں مکمل کروایا جائے تاکہ عوام کو مزید کسی قسم کی پریشانی کا سامنا نہ کرنا پڑے۔
 

راجوری پونچھ میں این ایس ایس ڈے منایاگیا

راجوری //راجوری پونچھ کے کالجوں میں این ایس ایس ڈے منایاگیا۔تھنہ منڈی میں این ایس ایس یونٹ کی طرف سے ایک پروگرام منعقد کیاگیا جس کی صدارت کالج کے پرنسپل پروفیسر شکیل احمد رینہ نے کی ۔این ایس ایس پروگرام افسر پروفیسر سلیم ایاز راتھر نے این ایس ایس یونٹ کی کارکردگی پر رپورٹ پیش کی ۔اسی طرح کا پروگرام پوسٹ گریجویٹ کالج راجوری میں بھی این ایس ایس یونٹ کی طرف سے منعقد کیاگیا جس میں این ایس ایس رضاکاروں کے علاوہ دیگر کئی لوگ بھی موجود تھے ۔اس دوران خطبہ استقبالیہ این ایس ایس پروگرام افسر ڈاکٹر نسیم احمد نے پیش کیا جبکہ صدارت کے فرائض کالج کے پرنسپل ڈاکٹر جے اے قاضی نے انجام دی ۔اس دوران متعدد کلچرل پروگرام پیش کئے گئے جو سوچھتا ہی سیوا کے موضوع پر تھے ۔کالج پرنسپل نے اپنے خطاب میں پروگرام کے انعقاد پر این ایس ایس رضاکاروں کی سراہنا کی ۔اسی طرح سے ڈگری کالج سرنکوٹ میں ایک پروگرام ہواجس میں سابق ایم ایل اے مشتاق بخاری مہمان خصوصی تھے۔راجوری پونچھ کے دیگر کالجوں میں بھی ایسے ہی پروگرام منعقد کئے گئے ۔
 
 

ائورلوڈنگ کرنے والے 11ڈرائیوروں کیخلاف کیس درج 

راجوری //راجوری پولیس نے ٹریفک قوانین کی خلاف ورزی کرکے مسافروں کی زندگی کو خطرے میں ڈالنے پر گیارہ ڈرائیوروں کے خلاف کیس درج کیاہے ۔یہ کیس پولیس تھانہ درہال ، تھنہ منڈی اور پولیس تھانہ نوشہرہ میں درج کئے گئے ہیں ۔ایس ایچ او درہال حبیب پٹھان کی قیادت میں پولیس ٹیم نے کارروائی کرتے ہوئے چار ائورلوڈ گاڑیوں کے ڈرائیوروں کے خلاف کیس درج کئے ۔ ان ڈرائیوروں میں محمد سلیم ولد وزیر محمد ساکن کھوڑی والی درہال، شیراز احمد ولد محمد مشتاق ساکن بدھ کناری ، امتیاز احمد ولد محمد رفیق ملک ساکن تھنہ منگ اور محمد سلیم ولد عبدالمجید ساکن تھنہ منگ شامل ہیں ۔اسی طرح سے تھنہ منڈی پولیس نے ایس ایچ او نذیر احمد ڈار کی قیادت میں چھ ائورلوڈ گاڑیوں کے ڈرائیوروں کے خلاف کیس درج کیاجن میں محمد یونس ولد عبدالخالق ساکن بہروٹ ، شکور سمیال ولد نعمت اللہ ساکن راجدھانی ، شوکت حسین ولد صید محمد ساکن کوٹ بہروٹ ،محمد اشفاق خان ولد محمد اعظم ساکن ہسیوٹ ، نصیر احمد بجاڑ ولد منیر حسین ،معروف خان ولد محمود خان ساکن روپ نگر جموں شامل ہیں ۔ پولیس نے یہ کارروائیاں ایس ڈی پی او تھنہ منڈی افتخار چوہدری کی سربراہی میںانجام دیں ۔اسی طرح سے ایس ایچ او نوشہرہ رومل سنگھ کی قیادت میں راکیش کمار ولد دیس راج ساکن کلال نوشہرہ کے خلاف کیس درج کیاگیاہے جو ائورلوڈ کررہاتھا ۔ایس ایس پی راجوری یوگل منہاس کی طرف سے پہلے سے ہی یہ ہدایات جاری کی گئی ہیںکہ ٹریفک قوانین کی خلاف ورزی خاص طور پر ائورلوڈنگ کرنے والے ڈرائیوروں کے خلاف کڑی کارروائی کی جائے ۔
 
 
 

راجوری یونیورسٹی کے طلباء گوا کے گورنر سے ملاقی

راجوری //بابا غلام شاہ بادشاہ یونیورسٹی کے پندرہ طلباء اور دو پروفیسروں پر مشتمل ایک گروپ نے گوا کے گورنر سے ملاقات کی ۔یہ طلباء فوج کے سدبھائوناپروگرام کے تحت ایک ہفتے کے کیپسٹی بلڈنگ دورے پرگئے ہوئے ہیں ۔اس موقعہ پر گواکے گورنر نے طلباء پر زور دیاکہ وہ خود بھی تعلیم پر توجہ مرکوز کریں اور واپسی پر دوسروں کو بھی یہی پیغام دیں تاکہ طلباء کل کو ذمہ دارشہری بن سکیں ۔انہوں نے طلبا کے مستقبل کے تئیں نیک خواہشات کا اظہار کرتے ہوئے کہاکہ اس دورے سے انہیں کافی کچھ سیکھنے کوملے گا۔