مزید خبریں

پولیس نے چوری کے 3معاملات حل کئے ،6گرفتار | لاکھوں روپے کی چوری شدہ اشیاء و نقدی برآمد کر لی گئی 

راجوری //جموں وکشمیر پولیس نے راجوری ضلع میں چوری کے 3معاملات کو حل کرتے ہوئے اس سلسلہ میں ملوث 6چوروں کو بھی گرفتارکرلیا ہے ۔اس دورا ن پولیس نے لاکھوں روپے کی چوری شدہ اشیاء و نقدی بھی بر آمد کر لی ہے ۔پولیس کی جانب سے جاری کردہ ایک سرکاری بیان میں ایس ایس پی راجوری محمد اسلم نے بتایا کہ راجوری ضلع میں پولیس نے الگ الگ تین معاملات کو حل کرتے ہوئے چھ ملزمان کو بھی گرفتار کر لیا ہے ۔انہوں نے بتایا کہ راجوری پولیس سٹیشن میں درج کیس زیر ایف آئی آر نمبر 41/22،49/22اور 55/22 کو حال ہی میں درج کیا گیا جبکہ ایس ایچ او فرید احمد کی قیادت میں کی گئی تحقیقات کے دوران کئی مشکوک افراد کو حراست میں لے کر اس سے پوچھ تاچھ کی گئی جبکہ تحقیقات کے دوران ظہیر عباس ولد محمد لطیف ،شوکت علی ولد میر محمد سکنہ کھڑی کرماڑہ ،مظفر حسین ولد محمد رشید سکنہ ڈہنی دھار ،محمد اسلم ولد صابر حسین سکنہ نوشہرہ جبکہ ایک چور کانام قانونی وجوہات کی بنیاد پر شائع نہیں کیا جارہا ،نے اپنا جرم قبول کرلیا ۔انہوں نے بتایا کہ مذکورہ افراد چوری کی وارداتوں میں ملوث پائے گئے ہیں جبکہ ان کے قبضہ سے لاکھوں روپے کی چوری شدہ اشیاء بھی برآمد کرلی گئی ہیں ۔آفیسر موصوف نے بتایا کہ ان ملزمان کے قبضہ سے ایف آئی آر نمبر 41/22 اور 457/380میں لگ بھگ 90ہزار روپے کی نقدی ایف آئی آر نمبر 49/22میں 20موبائل فون ،ایف آئی آر نمبر 55/22میں چوری شدہ موٹر سائیکل زیر نمبر JK11A-9088اور ایف آئی آر نمبر 52/22 میں چوری شدہ نقدی کو بھی ضبط کرلیا گیا ہے ۔ایس ایس پی راجوری نے بتایا کہ ان معاملات کے سلسلہ میں اب مزید تحقیقات شرو ع کر دی گئی ہیں ۔انہوں نے عام لوگوں سے اپیل کرتے ہوئے کہاکہ وہ ساز و سامان کو بچانے کیلئے ہر طرح کی احتیاطی تدابیر اختیار کریں ۔
 
 
 
 

راجوری کے مختلف علاقوں میں گورو روی داس کی جینتی منائی گئی 

سمت بھارگو +رمیش کیسر 
راجوری //جموں صوبہ کے دیگر حصوں کی ہی طرح راجوری ضلع کے مختلف علاقوں میں گورو روی داس کی جینتی کے موقعہ پر تقریبات کا اہتمام کیا گیا ۔اس سلسلہ میں راجوری ٹاؤن، دھنوان، لام سمیت ،نوشہرہ سب ڈویژ ن کیساتھ ساتھ ضلع بھر کے گرو روی داس مندروں میں اس دن کو منانے کیلئے پروگرام منعقد کئے گئے۔ان پروگراموں میں ضلع بھر سے عقیدت مندوں کی بڑی تعداد موجود رہی جس کے دوران خصوصی پو جا کا اہتمام کیا گیا۔اس موقع پر مذہبی لیڈران نے گرو روی داس جی کی زندگی کی تاریخ پرروشنی ڈالتے ہوئے لوگوں سے کہا کہ وہ گرو روی داس جی کے دکھائے ہوئے انسانیت اور سچائی کے راستے پر چلیں۔نوشہرہ سب ڈویژن میں اس سلسلہ کی بڑی تقریب گورو روی داس مندر بریلی میں منعقد کی گئی تھی جس میں سینکڑوں عقیدت مندوں نے تقریب اور پوجا میں شرکت کی ۔اس دوران مذہبی لیڈران نے گورو روی داس کی زندگی پر خصوصی روشنی ڈالتے ہوئے لوگوں کو تلقین کی کہ وہ ان کے بتائے ہوئے راستے پر چلنے کی کوششیں کریں ۔ان پروگراموں میں مختلف سیاسی پارٹیوں سے وابستہ لیڈران نے بھی شرکت کی ۔
 
 

کوٹرنکہ میںبنتری راتھر منڈی سڑک کا افتتاح کیا گیا 

محمد بشارت 
کوٹرنکہ //کوٹرنکہ سب ڈویژن میں بنتری تا راتھر منڈی رابطہ سڑک کا افتتاح کیا گیا ۔مقامی لوگوں نے بتایا کہ مذکورہ سڑک کی تعمیر کے سلسلہ میں گزشتہ تین برسوں سے مانگ کی جارہی تھی تاہم اب کپیکس بجٹ کے زیر تحت مذکورہ رابطہ سڑک کی تعمیر کیلئے عملی اقدامات اٹھائے گئے ہیں ۔انہوں نے بتایا کہ مذکورہ سڑک کی تعمیر کے بعد ایک وسیع علاقہ کی عوام کو آمد ورفت کی سہولیت میسر ہو نگی ۔مقامی سرپنچ حفیظہ بیگم نے پروجیکٹ کا افتتاح کرتے ہوئے کہاکہ لوگوں کی مانگ کے بعد اس پروجیکٹ کو شروع کیا گیا ہے ۔انہوں نے بتایا کہ اس عمل سے مکینوں کو فائدہ پہنچے گا۔اس موقعہ پر محمد شیفع لون پنچ عبدل قیوم راتھر پنچ محمد کبیر لون منظور حسین ارشد اسلم جمشید اسلم محمد تنویر عبدل مجید و دیگر معزز شہری بھی موجود تھے۔ 
 
 
 

راجوری ایتی میں امن و اصلاح کانفرنس منعقد 

راجوری // راجوری کے جامعہ حنفیہ نظامیہ حنفی نگر ایتی میںمفتی عبد الرؤف رضوی نعیمی کی زیرِ صدارت ایک عظیم الشان صوبائی تحریکِ امن و اصلاح کانفرنس منعقد ہوئی  جس میں صوبہ جموں کے تمام اضلاع کے علماء ومعززین نے شرکت کی ۔اس موقع پر علماء و معززین نے مفتی عبد الرؤف نعیمی کی کارکردگی،ادارے کی تعمیر و ترقی اورتعلیمات و تصنیفات کو ملاحظہ کرکے باتفاقِ رائے صوبہ جموں کا صدر منتخب کیااور صوبائی سرپرستِ اعلیٰ کا منصب مفسر قران مفتی نذیر احمد قادری کو تفویض کیاجبکہ صوبائی نائب صدر کے لئے مولانا الحاج قاری محمد یونس اشفاقی کو منتخب کیا گیا۔اسی طرح دیگر اراکین میں مولانا محمد ظفر قادری رضوی ،مولانا حافظ منیر حسین ،مولانا قاری ظفر اقبال ،سید شاہ حسین ،مولانا قاری علی حسین ،مفتی محمد عارف قادری ،مفتی محمد اعظم ثقافی،مولانا حافظ تبریز نعیمی ،مولانا محمد اسلم ،مولانا محمد نعیم نعیمی ، مفتی گلفراز ص ،الحاج خادم حسین اور حافظ غلام یٰسین کو بھی منتخب کیا گیا ۔اسی موقع پر صوبہ جموں کے تمام اضلاع و تحصیلوں کی کمیٹیاں بھی تشکیل دی گئیں ۔
 
 
 
 

سوکھی گھاس جل کر راکھ،مزدور زخمی  

جاوید اقبال
مینڈھر//مینڈھر قصبے کے متبادل پل مصطفیٰ نگر کے قریب علاقے میں ذخیرہ شدہ خشک گھاس کی پچاس سے زیادہ گانٹھیں بدھ کی شام کو مشکوک حالت میں لگی آگ کی وجہ سے جل کر راکھ ہو گئیں۔یہ واقعہ دوپہر 3 بجے کے قریب اس وقت پیش آیا۔مقامی لوگوں نے بتایا کہ آگ بھڑکنے کے فوراً بعد آگ بجھانے کا آپریشن شروع کیا گیا جو تقریباً ایک گھنٹے تک جاری رہا اور آگ پر قابو پانے کی کوشش کی گئی لیکن سوکھی گھاس کو نہیں بچایا جاسکا ۔گھاس کی مالک شریفہ بی کے اہل خانہ نے الزام عائد کیا کہ متبادل پل پرکام جاری تھا جبکہ پل پر کئے جارہے بلڈنگ کے کام کی وجہ سے مبینہ طورپر گھاس میں آگ لگی ۔اس دوران آگ پر قابو پانے کی کوشش کے دوران ایک مزدور زخمی ہو گیا جس کی شناخت راج کمار کے طورپر ہوئی ہے ۔مکینوں نے بتایا کہ مزدور پل پر کام کررہا تھا تاہم آگ پر قابو پانے کی کوشش کیلئے رجوع کرنے کے دوران وہ زخمی ہو گیا ۔زخمی کو مینڈھر ہسپتال میں علاج معالجہ کیلئے بھرتی کیا گیا ہے ۔اہل خانہ و مکینوں نے انتظامیہ سے مانگ کرتے ہوئے کہاکہ متاثرین کو معاوضہ دیا جائے ۔
 
 
 
 
 
 
 
 

عارضی ملازم کی موت کے 10 برس بعد بچے دربدر | بیٹا والد کی جگہ تعیناتی کیلئے ٹھوکریں کھانے پر مجبور 

جاوید اقبال 
مینڈھر //مینڈھر سب ڈویژن کے گلہوتہ علاقہ کا رہائشی ظفر اقبال ولد محمد صادق والد کی وفات کے بعد محکمہ بجلی میں ملازمت کیلئے دربدر کی ٹھوکریں کھانے پر مجبور ہو گیا ہے ۔مفلسی سے لاچار ظفر اقبال نے بتایا کہ اس کا والد محمد صادق محکمہ بجلی میں عارضی بنیادوں پر اپنی خدمات انجام دے رہاتھا تاہم 2012میں اس کی موت واقعہ ہوگئی  ۔انہوں نے بتایا کہ والد کی موت ایک ایسے وقت میں ہوئی جس کے دوران ان کی مستقلی کے امیدیں بھی روشن تھی جبکہ ان کی موت کے بعد بھی کئی دیگر ساتھیوں کو مستقل کیا گیا لیکن محمد صادق کی موت نے دیگر اہل خانہ کو مزید مصیبتوں میں مبتلا کر دیا ۔ظفر اقبال نے بتایا کہ والد کی مو ت کے بعدا ُس نے محکمہ میں والد کی جگہ نوکری لینے کی از حد کوششیں کی تاہم 10برسوں بعد بھی حکام کی جانب سے ان کو انصاف فراہم نہیں کیا گیا ۔لا چار ظفر اقبال اور اس کی والدہ نے بتایا کہ محمد صادق کی وفات کے بعد گھر کے مالی حالات انتہائی خستہ ہو گئے تھے لیکن انہوں نے اس مشکل کے باوجود بھی اپنی کوششیں جاری رکھی او ر محکمہ کے دفاتر کے چکر لگاتے رہے ۔انہوں نے بتایا کہ مقامی آفیسران کی جانب سے تحریری رپورٹ اعلیٰ حکام کو ارسال کرنے کے باوجود بھی ظفر اقبال کو والد کی جگہ تعینات نہیں کیا گیا ۔اہل خانہ نے بتایا کہ محمد صادق نے 14برسوں تک محکمہ میں عارضی بنیادوں پر کام کیا تھا لیکن اس کے باوجود بھی ان کیساتھ انصاف نہیں کیا جارہا ہے ۔اہل خانہ نے جموں وکشمیر انتظامیہ سے مانگ کرتے ہوئے کہاکہ گھر کے ایک فرد کو مرحوم والد کی جگہ تعینات کیا جائے ۔
 
 

امام بارگاہ پونچھ میں مجلس کا انعقاد

حسین محتشم
پونچھ// امام باگاہ عالیہ پونچھ میں شریکتہ الحسین بی بی زینب سلام اللہ علیہا کا شب شہادت عقیدت و احترام سے منایا گیا۔امام بارگاہ پونچھ میں یوم شہادت شریکتہ الحسین بی بی زینب بنت امام علی کے موقع پر مجلس عزا کا اہتمام کیا گیا جس میں کثیر تعداد میں عزاداروں نے شرکت کی۔ مجلس عزاحسب دستور تلاوت کلام پاک سے شروع ہوئی جس کے بعد نعت، منقبت، سلام و نوحہ پیش کئے گئے۔اس موقع پر مولانا سید کرار حسین جعفری نے بی بی زینب سلام اللہ علیہا کی سیرت، کردار اور اسلام کیلئے عظیم قربانی پر تفصیل سے روشنی ڈالی اور کہا کہ بی بی زینب سلام اللہ علیہا کا کردار صبر و استقلال اور پاک کردار خواتین کیلئے مشعل راہ ہے۔ مجلس عزا کے اختتام پر عالم انسانیت کے لئے دعائیں طلب کی گئیں۔
 
 

ہائی سکول کلائی میں شجر کاری مہم چلائی گئی 

حسین محتشم
پونچھ//محکمہ سوشل فارسٹری ڈویژن پونچھ نے گورنمنٹ ہائی اسکول کلائی کے احاطے میں ’ہرگائوں ہریالی‘کے تحت شجرکاری اور آگاہی مہم کا انعقاد کیا۔ اس دوران پودے لگا کرباضابطہ طور پر شجرکاری مہم شروع کی گئی۔ اس اس موقع پر سکول کے ہیڈ ماسٹر کے علاوہ اساتذہ اور طلباء موجود تھے۔مقررین نے خطاب کرتے ہوئے جنگلات کی کٹائی کی رو کتھام اور زیادہ سے زیادہ پیڑ پودے لگانے پر زور دیا گیا تاکہ ضلع کو ہرا بھرا بنایا جائے۔انہوں نے کہا کہ پونچھ میں ہر گھر ہریالی کی مہم شروع ہوئی ہے۔ ایسے میں ضلع کے مختلف گائوں میں شجرکاری کی جائے گی۔ اس موقع پر متعلقہ محکمے کے آفسران بھی موجود تھے۔
 
 

پونچھ ضلع میں غیر قانونی کان کنی کا معاملہ | ڈی سی پونچھ نے اٹھائے گئے اقدامات کا جائزہ لیا 

 حسین محتشم
پونچھ// ضلع انتظامیہ پونچھ نے سرکاری اراضی پر ہورہے ناجائز تجاوزات اور مقررہ اصولوں کی خلاف ورزی کرنے والے غیر قانونی کان کنی اور سٹون کرشرز کے خلاف ایک بڑا کریک ڈاؤن شروع کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ ضلع ترقیاتی کمشنر اندر جیت نے متعلقہ آفیسر کو ہدایت دی ہے کہ وہ معمولی معدنیات کی غیر قانونی نکالنے میں ملوث پائے جانے والے افراد کے خلاف ایف آئی آر درج کریں اور معمولی معدنیات کی قیمتوں کو مطلع کرنے کیلئے نمایاں جگہوں پر بورڈ نصب کریں۔ اپنے دفتر چیمبر میں ملٹی ڈیپارٹمنٹل ڈسٹرکٹ لیول ٹاسک فورس کی میٹنگ کی صدارت کرتے ہوئے انہوں نے ریاستی اراضی پر بنائے گئے سٹون کرشروں کو بے دخل کرنے کی ہدایت دی اور کہا کہ جی ایس ٹی بل کے بغیر چلنے والوں کو سیل کیا جائے۔ میٹنگ میں مائنر منرل کے نوٹیفائیڈ ریٹ کے نفاذ اور ضلع میں مائنر منرل بلاکس کی ای نیلامی پر بھی تبادلہ خیال کیا گیا۔ ڈپٹی کمشنر نے ٹاسک فورس پر زور دیا کہ وہ ضلع میں غیر قانونی کان کنی کی روک تھام کے لیے قریبی رابطہ کاری اور رابطہ کے ساتھ کام کریں۔ انہوں نے ایس ایس پی پونچھ سے کہا کہ وہ چیکنگ اسکواڈز کو ہر ممکن تعاون فراہم کریں تاکہ مجرموں کے گرد گھیرا تنگ کرنے کے لیے ایک مضبوط طریقہ کار وضع کیا جا سکے۔ محکمہ آبپاشی کو یہ بھی کہا گیا کہ وہ ندی کے کنارے سے غیر قانونی کان کنی پر کڑی نظر رکھے اور ایسی کسی بھی سرگرمی کو دیکھنے پر فوری طور پر انفورسمنٹ ایجنسیوں کو معاملے کی اطلاع دیں۔ میٹنگ میں سینئر سپرنٹنڈنٹ آف پولیس روہت باسکوترا، ایڈیشنل ڈپٹی کمشنر ڈاکٹر بشارت حسین ، اسسٹنٹ کمشنر ریونیو ظہیر احمد کیفی،ڈی ایف او (ٹی)سریش منڈا،ڈسٹرکٹ مائننگ آفیسر جاوید اقبال کے علاوہ دیگر افسران بھی موجود تھے۔
 

ہائی سکول لام کا درجہ بڑھانے کا مطالبہ 

رمیش کیسر 
نوشہرہ // سب ڈویژن نوشہرہ کے لام علاقہ کے مقامی لوگوں اور پنچایتی اراکین نے جموں وکشمیر انتظامیہ سے مانگ کرتے ہوئے کہاکہ ہائی سکول لام کا درجہ بڑھایا جائے تاکہ ملحقہ علاقہ کے طلباء بالخصوص لڑکیاں اپنے علاقہ میں ہی 12ویں تک تعلیم حاصل کر سکیں ۔مکینوں نے بتایا کہ گور نمنٹ ہائی سکول لام کو 1982میں ہائی سکول کا درجہ دیا گیا تھا لیکن اس کے بعد عوامی مانگ کے باوجود بھی سکول کو ہائر سکینڈری سکول کا درجہ دیا جارہا ہے ۔انہوں نے بتایا کہ 1982کے مقابلے میں اس وقت مذکورہ علاقہ میں آبادی کی شرح میں بھی نمایاں اضافہ ہو گیا ہے لیکن اس کے باوجود بھی ان کے بچے مزید تعلیم کیلئے گورنمنٹ ہائر سکینڈری سکول قلعہ درہال جا کر تعلیم حاصل کرنے پر مجبور ہیں ۔انہوں نے بتایا کہ مذکورہ ہائر سکینڈری سکول میں جانے کیلئے طلباء کو کئی کلو میٹر کی مسافت طے کرنا پڑتی ہے ۔مقامی لوگوں بالخصوص والدین نے جموں وکشمیر انتظامیہ سے مانگ کرتے ہوئے کہاکہ ہائی سکول کا درجہ بڑھا یا جائے تاکہ ان کے بچے علاقہ میں ہی بہترتعلیم حاصل کر سکیں ۔