مزید خبریں

سلواہ میں محکمہ مال کا عوامی کیمپ 

جاوید اقبال 
مینڈھر //محکمہ مال کی جانب سے سب ڈویژن کے گور نمنٹ ہائر سکینڈری سکول سلواہ میں ایک روزہ عوامی کیمپ کا اہتمام کیا گیا ۔تحصیلدار مینڈھر گورو شرما کی قیادت میں منعقدہ کیمپ میں ملازمین کیساتھ ساتھ پنچایتی اراکین و عام لوگوں کی ایک بڑی تعداد نے شرکت کر کے ضروری لورزمات حاصل کیں ۔اس عوامی کیمپ کے دوران محکمہ کی جانب سے 400سے زائد سرٹیفکیٹ جاری کئے گئے جبکہ گزشتہ کچھ دنوں سے محکمہ کی جانب سے مختلف علاقوں میں لگائے گئے کیمپوں کے دوران چار ہزار سے زائد سرٹیفکیٹ جاری کئے گئے ہیں ۔مقامی لوگوں نے محکمہ کا شکریہ ادا کرتے ہوئے کہاکہ کیمپوں کے ذریعہ بنائے جارہے سرٹیفکیٹوں کی مدد سے عام لوگوں کو سہولیات میسر ہو رہی ہیں ۔
 
 
 
 
 

راجوری میں ایکتا کمیٹی کا اجلاس منعقد 

راجوری//آپسی ہم آہنگی کو مضبوط بنانے کیلئے فوج کی جانب راجوری میں ایکتا کمیٹی کا اجلاس منعقد کیا گیا ۔اس اجلاس میں نہ صرف مذہبی اور سرکردہ شخصیات بلکہ علاقے کے نوجوان بھی شامل تھے۔اجلاس میں ممبران نے سول انتظامیہ اور فوج کے فعال تعاون سے راجوری شہر میں امن اور فرقہ وارانہ ہم آہنگی کو برقرار رکھنے کا عہد لیا۔مقررین نے ضلع میں آپسی اتحاد کو بحال رکھنے اور یکجہتی کو قائم رکھنے کیلئے تلقین کرتے ہوئے کہاکہ سماج میں امن و امان کی صورتحال کو بحال رکھنے کیلئے ہر ایک شخص کو اپنا رول ادا کرنا پڑے گا ۔سیول سوسائٹی کے اراکین نے فوج کو یہ بھی یقین دلایا کہ علاقے کا ہر شہری تمام محاذوں سے بخوبی آگاہ ہے اور امن و ہم آہنگی کیلئے کردار ادا کرتے رہے گئے ۔
 
 
 
 
 

نوشہرہ میں نہرو یوا کیندر کا بیداری پروگرام 

 رمیش کیسر 
نوشہرہ //نہر و یوا کیندر راجوری نے گور نمنٹ ڈگری کالج نوشہرہ کے اشتراک سے ’خود کفیل بھارت و جل شکتی ابھیان ‘کے عنوان سے ایک بیداری پروگرام کا اہتمام کیا گیا جس کے دوران طلباء کو مرکزی حکومت کی جانب سے شروع کر دہ مختلف فلاحی سکیموں کے سلسلہ میں تفصیلی جانکاری فراہم کی گئی ۔مقررین نے کہاکہ مرکزی حکومت کی جانب سے کئی ایک ایسی سکیمیں شروع کی گئی ہیں جن سے عام لوگ فائدہ اٹھا سکتے ہیں جبکہ ان فلاحی سکیموں کے زمرے میں غریبوں کیساتھ ساتھ دیگران کو بھی لایا جاسکتا ہے ۔مقررین نے نوجوانوں کو تلقین کرتے ہوئے کہاکہ وہ کووڈ کے پھیلائو کو کم کرنے کیلئے اپنا رول ادا کریں جبکہ لوگوں کو مختلف فلاحی سکیموں کے سلسلہ میں بھی بیدار کریں تاکہ وہ مرکزی حکومت کی جانب سے چلائی گئی سکیموں کا زیادہ سے زیادہ فائدہ اٹھا سکیں ۔
 
 
 

BGSBU میں شجر کاری مہم چلائی گئی 

راجوری //بہتر ماحول اور صحت مند زندگی کیلئے ماحولیاتی توازن کی اہمیت کے بارے میں لوگوں میں بڑے پیمانے پر بیداری پیدا کرنے کیلئے بابا غلام شاہ بادشاہ یونیورسٹی راجوری کے وائس چانسلر پروفیسر اکبر مسعود نے یونیورسٹی کیمپس راجوری میں شجر کاری مہم کا آغاز کیا۔اس موقع پر خطاب کرتے ہوئے وائس چانسلر نے ماحولیات کے تحفظ کے ساتھ ساتھ موسمیاتی تبدیلیوں کو کم کرنے کیلئے زیادہ سے زیادہ درخت لگانے کی اہمیت پر زور دیا۔پروفیسر اکبر نے ایک پودا لگایا اور حیاتیاتی تنوع اور حیاتیاتی وسائل کے تحفظ کیلئے شجرکاری کی اہمیت پر روشنی ڈالی۔پروفیسر اکبر نے کہا کہ اس شجرکاری مہم کا مقصد ہر ایک کو ماحولیات کی بحالی کیلئے کام کرنے کی ترغیب دینا ہے۔ پروفیسر اکبر نے کہا کہ شجرکاری مہم کے دوران مختلف اقسام کے پودے لگائے جائیں گے جن میں چنار اور دیگر پھل دار درخت بھی شامل ہیں۔اس موقع پر یونیورسٹی کے رجسٹرار محمد اسحاق، ڈین سکول آف انجینئرنگ اینڈ ٹیکنالوجی پروفیسر آصف حسین، ڈین سکول آف ایجوکیشن پروفیسر جی ایم ملک ودیگران بھی موجود تھے ۔
 
 
 

بی ایس این ایل کی سروس ٹھپ 

صارفین کو بدستور مشکلات کا سامنا 

حسین محتشم
پونچھ//بی ایس این ایل کا مواصلاتی نظام سرحدی ضلع پونچھ میں بدستور درہم برہم ہے جس کی وجہ سے عوام متعلقہ محکمہ سے برہم نظر آرہی ہے۔مواصلاتی نظام کو لیکر عوام پونچھ نے اپنی سخت برہمی ظاہر کرتے ہوئے بی ایس این ایل کے افسروں اور ملازمین کو تنقید کا نشانہ بنایا ۔انہوں نے بتایا کہ پچھلے کئی ماہ سے انکی سروس عدم دستیابی کا شکار ہے جس کی وجہ سے عوام کئی طرح کی پریشانیوں کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔خصوصی طور پر ان دکانداروں کو جن کا کاروبار انٹرنیٹ پر منحصر ہے، کاروبار سخت متاثر ہو رہا ہے۔شہریوں کا کہناہے مواصلاتی نظام درست نہ ہونے کی وجہ سے دفتری کام کاج بھی شدید متاثر ہورہا ہے۔انہوں نے کہا کہ پونچھ میں جان بوجھ کر اس نظام کو خستہ کیا جاتا ہے۔ انہوں نے مواصلاتی کمپنی بی ایس ایل کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ وہ لوگ جان بوجھ کر نیٹ ورک کو خراب کر دیتے ہیں۔ مقامی لوگوں نے ضلع ترقیاتی کمشنر پونچھ سے اپیل کی کہ وہ اس سلسلہ میں مداخلت کرکے مواصلاتی نظام کو درست کریں انہوں نے کہا کہ آج کے دور میں جب سارا کام انٹرنیٹ پر ہی ہوتا ہے اگر مواصلاتی نظام اس طرح خستہ حالی کا شکار رہے گا تو لوگ کس طرح ترقی کریں گے۔ رابطہ کرنے پرمتعلقہ محکمہ کے  ایس ڈی او نے بتایا کہ تھنہ منڈی میں فور لاین سڑک کی تعمیرات کا کام چل رہا ہے جسکی وجہ سے کیبل کو شدید نقصان پہونچا ہے۔ انہوں نے کہا کہ اس سلسلہ میں ملازمین کام پر لگے ہوئے ہیں۔ پوری کوشش کی جارہی ہے کہ جلد سے جلد اس لائن کو درست کیا جائے تاکہ روز روز کی پریشانی سے عوام کو راحت مل سکے۔
 
 
 
 
 
 

پونچھ میں سکولی بچوں نے پودے لگائے 

حسین محتشم
پونچھ//ماحولیات کو تحفظ فراہم کرنے کے سلسلہ میں جہاں سرکاری ادارے شجرکاری مہم چلا رہے ہیں وہی کئی غیر سرکاری تنظیمیں شجرکاری مہم چلا کر مختلف مقامات پر پودے لگا رہے ہیں۔سرحدی ضلع پونچھ کی ایک غیر سرکاری تنظیم سماج سیوا سوسائٹی نے چھوٹے بچوں کو اپنے ساتھ رکھ کر کئی پودے لگائے اور بچوں میں درخت لگانے کی اہمیت اور ماحول کیلئے ان کے فوائد کے بارے میں بیداری پھیلائی۔ تنظیم کے صدر جگل کشور نے کہا کہ درخت ہمیں پھل دیتے ہیں، سایہ دیتے ہیں اور آکسیجن خارج کرتے ہیں جس سے ماحول کو صاف کرنے میں مدد ملتی ہے۔انہوں نے مزید کہا کہ ہمیں زیادہ سے زیادہ درخت لگانے چاہئیں، ہمیں اپنے اردگرد تمام درختوں کی دیکھ بھال کرنی چاہیے اور انہیں باقاعدگی سے پانی دینا چاہیے۔ ہر شخص کو اس موسم میں کم سے کم ایک درخت لگا کر ماحول کی بہتری میں اپنا حصہ ڈالنا چاہیے۔
 
 
 

ساوجیاںسکول میں جراثیم کش ادویات کا چھڑکاؤ 

حسین محتشم+عشرت حسین بٹ 

پونچھ//لیفٹیننٹ گورنر جموں کشمیر کی انتظامیہ کی ہدایت پر 21 فروری سے تمام تعلیمی اداروں کو کھولنے کا حکم صادر کئے جانے کے بعد تمام اسکولوں کیلئے یہ بھی لازمی قرار دیا گیا ہے کہ اسکولوں میں تمام کلاس رومز کی سینیٹائزیشن کی جائے۔ اس سلسلے میں ماڈل ہائر سیکنڈری سکول ساوجیاں پونچھ نے طلباء کی صحت اور حفاظت کو مدنظر رکھتے ہوئے فوج کی مقامی 40 آر آر یونٹ کے تعاون سے پورے سکول کمپلیکس میں صفائی مہم چلا کر وہاں صفائی کی۔ اسکول کی فیومیگیشن اور سینیٹائزیشن کے دوران اسکول کے آؤٹ ڈور کمپلیکس کے ساتھ تمام کلاس رومز، لیبارٹریز، آئی سی ٹی لیبارٹری، لائبریری، ایڈمنسٹریٹو بلاک اور واش روم کمپلیکس کو صاف کیا گیا۔ پرنسپل ماڈل ہائر سیکنڈری سکول ساوجیاں انور خان نے بتایا کہ کمانڈنگ آفیسر 40 آر آر نے ان کی درخواست پر اپنی ٹیم اور سینیٹائزیشن ماہرین کو تعینات کیا جنہوں نے پورے سکول کمپلیکس کو سینیٹائز کیا۔ پرنسپل نے بھارتی فوج سے اظہار تشکر کیا جو عوامی مفاد کے مسائل کے حل کیلئے ہمہ وقت تیار رہتی ہے۔ انہوں نے یہ بھی کہا کہ یہ سینیٹائزیشن نہ صرف طلباء اور عملے کی زندگی اور صحت کی حفاظت کرے گی بلکہ کوویڈ 19 کے پھیلاؤ کو بھی روکے گی۔
 
 
 

۔24فروری سے احتجاج شروع کرنے کا انتباہ 

حسین محتشم
پونچھ//پبلک ہیلتھ انجینئرنگ (جل شکتی ڈپارٹمنٹ) میں کام کرنے والے تمام ڈیلی ویجر اور نیڈ بیس ورکرز نے 24 فروری 2022 سے اپنی ہڑتال شروع کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔پونچھ میں منعقدہ پریس کانفرنس کے دوان یونین کے ضلع صدر نے کہا کہ ڈیلی ویجر اور نیڈ بیس ورکرز نے پورے UT میں 72 گھنٹے کیلئے اپنی ہڑتال شروع کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ وہ پچیس سال سے زائد عرصے سے ڈیلی ویجر کے طور پر کام کر رہے ہیں لیکن پھر بھی ان کی ریگولرائزیشن کا انتظار ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ انہوں نے اپنے مطالبات پورے ہونے تک پرامن ہڑتال کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ انہوں نے جموں و کشمیر کے عوام سے اپیل کی ہے کہ وہ ان کی حمایت کریں کیونکہ انہیں ہر محاذ پر نظر انداز کیا جاتا ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ ہڑتال کو 72 گھنٹے سے بڑھایا بھی جا سکتا ہے۔
 
 
 
 
 

پونچھ میں جن اوشدھی ادویات سے عوام محروم

عرصہ دراز سے بند پڑی دکان کو دوبارہ کھولنے کا کیا مطالبہ

حسین محتشم
پونچھ//حکومت کی جانب سے مریضوں کو ضروری ادویات جائز نرخوں پر فراہم کرنے کے لئے جن اوشدھی اسکیم کے تحت ہسپتالوں کے قریب دکانیں کھولی گئی ہیں تاکہ مریضوں کو آسانی سے جائز قیمتوں پر یہ ادویات فراہم ہو لیکن سرحدی ضلع پونچھ کے راجہ سکھ دیسی ضلع ہسپتال میں قائم جن اوشدھی ادویات کی دکان عرصہ دراز سے بند ہے جس کی وجہ سے سرکار کی کوشش بے اثر ہو کر رہ گئی ہے۔ سرکاری سٹور بند ہونے سے ضلع ہسپتال پونچھ میں داخل مریضوں کو پریشانی کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔اس حوالے سے کشمیر عظمی سے بات کرتے ہوئے سماجی کارکن روضیہ کاظمی نے کہا  ایسا لگتا ہے کہ ضلع انتظامیہ پونچھ مرکزی حکومت کی فلیگ شپ اسکیم پردھان منتری بھارتیہ جن او شدھی پریوجنا (PMBJP) کو شکست دینے پر تلی ہوئی ہے، جس کا مقصد لوگوں کو مناسب قیمتوں پر دوائیں فراہم کرنا ہے۔انہوں نے کہااس اسکیم کے تحت کھولی گئی ایک دکان کو انتظامیہ نے معمولی بنیاد پر بند کر دیا تھا۔انہوں نے بتایا کہ دکان کو بند ہوئے چار سال ہوچکے ہیں اور دکان کے مالک کی جانب سے عدالتی حکم امتناعی کے باوجود اسے کھولنے کی اجازت نہیں دی جارہی۔ مقامی لوگوں نے الزام لگایا کہ پی ایم بی جے پی کے تحت ان کے اسٹور کو انتظامیہ نے ڈرگ مافیا کے زیر اثر بند کر دیا تھا۔ اسی دوران 55 سالہ منیر حسین نے بتایا کہ انہیں اپنے بیٹے کے لیے دوا لینے کیلئے ہسپتال سے باہر جانا پڑا جو وہاں داخل تھا۔ ’’میں بوڑھا ہو چکا ہوں اور ہر بار باہر جانا مشکل لگتا ہے۔ ایک مزدور یعقوب حسین نے بتایا کہ اس کی ماہانہ آمدنی 3500 روپے ہے، اسے باہر سے دوائیں خریدنا مشکل ہے۔ان تمام لوگوں نے انتظامیہ سے ایک بار پھر اپیل کی ہے کہ ضلع ہسپتال پونچھ میں قائم جن اوشدھی کی ادویات کی دکان کو دوبارہ کھول دیا جائے تاکہ وہاں داخل مریضوں کو آسانی سے جائز نرخوں پر ادویات حاصل ہوں۔