مرکزی بجٹ پر جموں کے تاجروں کا تیکھا ردعمل

جموں//جموں چیمبر اینڈ کامرس کے صدر ارون کمارگپتانے سالانہ بجٹ پر ملا جلا ردعمل ظاہر کیا۔انہوں نے کہا کہ یونین بجٹ میں ملک کے دیہی علاقوں کے لئے خطیر رقم مختص رکھی ہے جو اچھا اقدام ہے لیکن جموں وکشمیر یونین ٹریٹری کے تاجروں کو راحت دینے کی خاطر کچھ بھی نہیں کہا گیا ہے۔انہوں نے بتایا کہ جموں وکشمیر کے تاجروں کو درپیش مسائل پر مرکزی حکومت نے کوئی توجہ نہیں دی۔اْن کے مطابق چونکہ سال 2019 سے لے کر ابتک جموں وکشمیر کے تاجر وں کو مشکلات کا سامنا کرناپڑرہا ہے ہمیں اْمید تھی کہ جموں وکشمیر کے تاجروں کے لئے پیکیج کا اعلان ہوگا لیکن ایسا نہیں ہوا اور اس طرح سے ہماری اْمیدوں پر پانی پھیر گیا۔انہوں نے کہا کہ جموں وکشمیر کے تاجروں کو درپیش معاشی مسائل پر کوئی توجہ ہی نہیں دی گئی ہے۔اْن کا مزید کہنا ہے کہ پچھلے دو سال کا جووقت گذرا اْس سے یہاں کے تاجر سب سے زیادہ متاثر ہوئے ہیں۔جموں ویر ہاوس ٹریڈریس ایسو سی ایشن کے صدر دیپک گھپتا نے سالانہ بجٹ پر اپنا ردعمل ظاہر کرتے ہوئے بتایا کہ ہمیں کوئی راحت نہیں ملی ہے۔اْن کے مطابق ہمیں اْمید تھی کہ جموں وکشمیر کے لئے خصوصی ٹریڈ پالیسی کا اعلان ہوگا لیکن ایسا کچھ نہیں ہوا۔ٹیکسی سٹینڈ جموں کے صدر آنند کھجوریہ نے دوٹوک الفاظ میں کہاکہ اس بجٹ سے جموں والوں کوبھی کچھ نہیں ملا اور میں یہ ڈنکے کی چوٹ پر کہتا ہوں کہ اس بجٹ سے جموں کے لوگ بھی کافی ناراض ہو گئے ہیں۔