مذہب کے نام پر ووٹ لینے والے سماج کے دشمن :آزاد | بیروکریسی کے خاتمے و ترقی و خوشحالی کے لئے انتخابات کو لازمی قرار دیا

ڈوڈہ //ووٹ مذہب کے نام پر سماج کو تقسیم کر کے ووٹ حاصل کرنے والے کبھی عوام کے دوست نہیں ہو سکتے ہیں۔ مذہبی ہمدردی مسجد و مندر تک ہی محدود رکھی جانی چاہئے، ووٹ ترقی و سچائی کی بنیاد پر دئیے جائیں۔ ان باتوں کا اظہار سابق وزیر اعلیٰ و سینئر کانگریس لیڈر غلام نبی آزاد نے خطہ چناب کے دورے کے دوسرے روز گندوہ میں عوامی جلسہ سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔اس موقع پر سابق وزراء غلام محمد سروڑی ،عبدالمجید وانی، وقار رسول وانی ،سابق ایم ایل سی شام لال بھگت کے علاوہ ڈی ڈی سی و بی ڈی سی چیئرپرسن ،پنچائتی نمائندگان و بھاری اکثریت میں لوگوں نے شرکت کی. انہوں نے کہا کہ مذہب کی بنیاد پر ہندو مسلمان کو بانٹنے والے سماج کے سب سے بڑے دشمن ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ہم جموں و کشمیر کو تباہ و برباد ہونے نہیں دیں گے اور یہاں کے غریب و مزدور پیشہ افراد کے ساتھ ساتھ سماج کے ہر طبقہ و خطہ کی تعمیر و ترقی کے لئے انتخابات کا ہونا لازمی ہے تاکہ بیوروکریسی سے نجات مل سکے۔ آزاد نے زمینوں کی واپسی کے سرکاری فیصلہ کی مخالفت کرتے ہوئے کہا کہ کئی برسوں سے غریب لوگ ان زمینوں پر قابض تھے جہاں سے وہ کھیتی باڑی، گھاس چرائی و دیگر کاروبار کرتے تھے لیکن موجودہ حکومت نے زمینیں واپس لے کر انہیں بے دخل کر دیا۔ انہوں نے کہا کہ ان زمینوں کو محفوظ بنانے کے لئے ہم نے روشنی ایکٹ کے تحت مالکانہ حقوق فراہم کئے تھے لیکن آندھی و بہری سرکار نے وہ روشنی بھی چھین لی۔ آزاد نے جموں و کشمیر کو دو حصوں میں تقسیم کرنے کو ایک بڑا سانحہ قرار دیتے ہوئے کہا کہ ہم نے کبھی یہ سوچا بھی نہیں تھا کہ اس ریاست کے دو ٹکڑے ہوں گے اور یوٹی کا درجہ دیا جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ آج سے سات برس جو ہندوستان تھا وہ آج نہیں رہا اور جو جموں و کشمیر آج سے چار برس قبل تھا وہ بھی نہیں رہا۔ انہوں نے کہا کہ دو طرح کے بدلاؤ آتے ہیں ایک خوشحالی لانے، پسماندگی دور کرنے کا، تعمیر و ترقی و بے روزگاری ہٹانے کا ہوتا ہے اور دوسرا بدلاؤ غربت، بے چینی، بے روزگاری و جہالت کی طرف لیجاتا ہے۔ آزاد نے کہا کہ ہمارے وقت کا دور خوشحالی کا تھا جہاں سڑکوں، پلوں کالجوں، تعلیمی اداروں، ہسپتالوں و بڑے بڑے ترقیاتی منصوبوں کا جال بچھایا گیا تھا اور یہ تاریکی دور چل رہا ہے جس میں سماج کا کوئی بھی طبقہ خوش نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہمارے دور حکومت میں ہمیشہ سیاسی، مذہبی و علاقائی بنیادوں سے بالا تر ہو کر ہر طبقہ و خطہ کی یکساں ترقی ہوئی ہے لیکن موجودہ دور میں سب اس کے برعکس ہورہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہمارا مقصد اس ملک و ریاست کو جنت بنانا تھا لیکن کچھ لوگ اس کو جہنم بنا رہے ہیں۔ انہوں نے لوگوں سے آپسی بھائی چارے کو قائم و دائم رکھتے ہوئے فرقہ پرست عناصر کے عزائم کو ناکام بنانے کی اپیل کی۔اس موقع پر ڈی ڈی سی کونسلر چنگا ندیم شریف نیاز، ڈی ڈی سی کونسلر بھلیسہ چوہدری محمد اقبال کوہلی، ڈی ڈی سی کونسلر بونجواہ امینہ چوہدری، بی ڈی سی چیئرپرسن محمد عباس راتھر ،فاطمہ چوہدری، بلاک صدر اوم پرکاش پریہار، ضلع جنرل سیکرٹری مشتاق احمد ملک، گوجر لیڈر چوہدری عبدالطیف بانیاں، چوہدری شیر محمد، بال کرشن پٹھانی، سنجے منہاس و حاجی شاہ دین نیائک، عشرت علی  نے بھی اپنے خیالات کا اظہار کیا۔