محکمہ سکولی تعلیم میں 80ہزاربچوں کا نیا اندراج

سرینگر//صوبائی کمشنر کشمیر بصیر احمد خان نے ایک اعلیٰ سطحی میٹنگ میں ڈائریکٹوریٹ آف سکولی تعلیم کے کام کاج کاجائزہ لیا۔میٹنگ میں بتایا گیا کہ محکمہ سکولی تعلیم کی سب سے بڑی حصولیابی یہ ہے کہ گھر گھر مہم کے دوران وادی بھر میں 80000کانیا اندراج یقینی بنایا گیا جبکہ 10ویں جماعت کے کامیاب نتائج کی شرح میں 17فیصد کااضافہ ہوا ہے۔اس کے علاوہ سرکاری سکولوںمیں 12ویںجماعت کے امتحانات میں 48طلاب نے امتیازی پوزیشن حاصل کی۔میٹنگ کے دوران سکولی ایجوکیشن کی دیگر حصولیابیوں کو بھی اجاگر کیا گیا ۔میٹنگ میں یہ جانکاری دی گئی کہ محکمہ سکولی تعلیم نے 428622پرائمری اورمڈل سٹینڈارڈ بچوں میں مفت یونیفارم اورنصابی کتابیں تقسیم کیں۔صوبائی کمشنر نے سرکاری سکولوں کے طلبأ کو کھیلو انڈیا سکیم کے تحت کھیل سرگرمیوں اورغیر نصابی سرگرمیوں کی طرف راغب کرنے کی ضرورت پر زوردیا۔صوبائی کمشنر نے تبادلہ خیال پروگرام کے تحت زیادہ سے زیادہ بچوں کو بیرونی ریاستوں کے دوروں پر روانہ کرنے پر زوردیا تاکہ وہ اپنی معلومات میں اضافہ کے لئے اہم مقامات کی سیر کرسکیں۔بصیر احمدخان نے میٹنگ کے دوران محکمہ جنگلات کے تعائون سے شجر کاری مہم شروع کرنے پرزوردیا جس میںایسے سکولی بچوں کو شامل کیا جانا چاہیے۔جہاں شجرکاری کے لئے اراضی دستیاب ہو۔اس دوران صوبائی کمشنر نے بارہمولہ،کپوارہ ،بانڈی پورہ اورلیہہ اورکرگل اضلاع کے ترقیاتی کمشنروں کو اپنے متعلقہ اضلاع میں 50کنال سٹیٹ لینڈ کی نشاندہی کرنے کی ہدایت دی تاکہ اس اراضی پر جے این وی کے طرز پر ریذیڈنشل سکولوںکا قیام عمل میںلایاجاسکے۔میٹنگ میںناظم تعلیم جی این ایتو،پرنسپل پی سیکریٹری جی این کھانڈے اورتمام جوائنٹ ڈائریکٹروں کے علاوہ دیگر متعلقہ آفیسران بھی موجود تھے۔