محکمہ جنگلات کے ملازمین کا احتجاج تیسرے دن بھی جاری

جموں //محکمہ جنگلات کے ملازمین کا ریاست گیر احتجاج تیسرے روز بھی جاری رہا ۔پی سی سی ایف دفتر کے سامنے آل جموں وکشمیر نان گزیٹیڈ فارسٹ آفیشل ایسوسی ایشن کے بینر تلے محکمہ جنگلات کے سینکڑوں کی تعداد میں ملازمین نے ریاستی انتظامیہ کیخلاف نعرے بازی کی ۔اس موقعہ پر ملازمین نے ریاستی انتظامیہ پر الزام عائد کرتے ہوئے کہاکہ ان کے مطالبات کے سلسلہ میں چیف کنزرویٹر محکمہ جنگلات اور ایسوسی ایشن کے لیڈران کے درمیان ایک معاہدہ طے پایا تھا جس کے تحت ملازمین کے مطالبات کو 20دنوں کے اندر حل کرنے کی یقین دہانی کروائی گئی تھی لیکن اس معاہدے کو 3ماہ سے زائدہ کا عرصہ گزر چکا ہے مگر ملازمین کے مطالبات کی جانب کوئی توجہ نہیں دی گئی ۔ایسوسی ایشن کے ریاستی صدر نذیر احمد میر نے کہا کہ جنگلات کی حفاظت کے سلسلہ میں 100سے زائد ملازمین اپنی جانیں ضائع کر چکے ہیں لیکن ان قربانیوں کے باوجود بھی ریاستی انتظامیہ محکمہ میں تعینات ملازمین کو درپیش مسائل کو حل کر نے کی جانب کوئی توجہ نہیں دی جارہی۔تنظیم کے صوبائی صدر کشمیر غلام نبی کلم اور صوبائی صدر جموں روی کمار نے ریاستی انتظامیہ کو تنقید کا نشانہ بنا تے ہوئے کہاکہ ملازمین کیساتھ ناانصافی کاسلسلہ بند کیا جائے اور ان کی مانگوں کو جلداز جلد پورا کیا جائے ۔ملازمین نے مانگ کر تے ہوئے کہاکہ ان کو ڈھائی دن کی زائد تنخواہ دینے کے علا قہ ،تنخواہ میں آرہی مشکلات ،عارضی ملازمین کی مستقلی ان کی تنخواہ کو وقت پر وگزار کر نا ودیگر مطالبات کو جلداز جلد حل کیا جائے ۔ملازمین نے کہاکہ اگر ان کے مطالبات کو جلداز جلد پور ا نہیں کیا گیا تو اس سلسلہ میں ریاست کے تینوں خطوں میں احتجاج شروع کیا جائے گا ۔انہوں نے ریاستی گور نر اور محکمہ کے اعلیٰ آفیسران کو ہدایات جاری کرتے ہوئے کہاکہ ملازمین کے مطالبات کو جلداز جلد پورا کیا جائے ۔