ماہ رمضان کے پیش نظر بھدرواہ میں اشیائے خوردنی کی قیمتوں میں اُچھال

 
بھدرواہ //قصبہ میں ماہ رمضان کے ایام میں اشیائے ضروریہ کی قیمتوں میں کافی تیزی آئی ہے ۔مارکیٹ کی سروے سے یہ صاف دکھائی دے رہا ہے کہ ناقص قیمتوں کے کنٹرول سسٹم کی وجہ سے چکن، کھانڈ،لیموں ،کھیرا اور پھل وغیرہ میں کافی اضافہ ہوا ہے۔کھانڈ جس کی قیمت 35 روپے سے40روپے فی کلو ہوتا تھا اب 70 روپے فی کلو کے ریٹ سے فروخت کیا جا رہا ہے، اسی طرح سے پھلوں کی قیمتوں میں بھی 100 فی صدی اضافہ ہوا ہے۔کشمیر عظمیٰ سے بات کرتے ہوئے متعدد گاہکوں نے بتایا کہ انتظامیہ قیمتوں کو اعتدال میں رکھنے میں ناکام رہی ہے۔بھدرواہ کے ایک شہری شیخ مشتاق چونا نے کہا کہ دودھ سے لیکر تیل خوردنی ، پھل اور سبزیوں کی قیمتوں میں کافی اُچھال آیا ہے۔اس نے شکایت کی ہے کہ چکن اور گوشت ماہ رمضان کے دنوں میں دوگنے قیمتوں پرم فروخت کیا جا رہا ہے۔اُ نہوں نے کہا کہ ایسا لگ رہا ہے کہ انتظامیہ بے بس ہو کر رہ گئی ہے اور قصبہ میں قیمتوں کو کنٹرول میں رکھنے کے لئے کوئی میکنزم کام ہی نہیں کر رہا ہے۔عید گاہ علاقہ کے ایک مقامی شہری و سماجی کارکن عارف رانا نے کہا ہے کہ یہ بد قسمتی کی بات ہے کہ ماہ رمضان کا فائدہ اُٹھا کر لوگوں کو لوٹا جا رہا ہے اور ان کو روکنے والا کوئی نہیں ہے۔اُنہوں نے کہا کہ چکن ،گوشت نہ صرف مہنگے داموں پر بھیچا جا رہا ہے بلکہ غیر صحت مند طریقہ بھی استعمال کیا جا رہا ہے،جسکی وجہ سے علاقہ میں وبائی بیماری پھوٹنے کا خدشہ ہے۔سبزیاں اور پھل وغیرہ بعض دوکانوں پر صفائی و ستھرائی سے بھیچے  جا رہے ہیں لیکن بعض دوکاندار گندے اور غیر صحت مند طریقہ سے سبزیاں و غیرہ بھیچ رہے ہیں۔ بیوپار منڈل بھدرواہ کے صدر نے  بتایا کہ ’’ ہم نے ڈی سی کی نوٹس میں لایا ہے کہ کس طرح سے قصبہ میں گوشت غیر صحت مند طریقہ سے بغیر مہر کے بھیچا جا رہا ہے لیکن تا دم اس پر کوئی کاروائی عمل میں نہیں لائی گئی ہے‘‘۔