ماہانہ مشاہرہ میں کٹوتی ناقابل قبول

سری نگر+جموں// جموں و کشمیر بینک اینڈ اے ٹی ایم گارڈس ایسوسی ایشن نے پیر کے روز یہاںپریس کالونی سرینگر اورزونل دفتر جموں کے باہر  میں جمع ہوکر اپنے مطالبات کو لے کر احتجاج درج کیا۔احتجاجی ’ہمارے ساتھ انصاف کرو انصاف کرو‘ وغیرہ جیسے نعرے لگا رہے تھے۔اس موقع پر ایک احتجاجی نے میڈیا کے ساتھ بات کرتے ہوئے کہا کہ ہم نے کورونا لاک ڈاؤن کے دوران بھی اپنی جانوں کو خطرے میں ڈال کر اپنی ڈیوٹی انجام دی۔انہوں نے کہا،’ ’ہمارے ساتھ نا انصافی ہو رہی ہے ہمیں پندرہ ہزار روپیے بعض کو تیس ہزار روہیے بطور رجشٹریشن جمع کرنے کو کہا جا رہا ہے‘‘۔موصوف احتجاجی نے کہا کہ ہماری تنخواہ بڑھانے کے بجائے کم کر دی جا رہی ہے۔انہوں نے کہا کہ ہماری تنخواہ پہلے ہی بہت کم ہے اور اب اس کو مزید کم کیا جا رہا ہے جس سے ہمارے مشکلات مزید بڑھ گئے ہیں۔احتجاجیوں نے ان کی تنخواہوں کو کم نہ کرنے کا مطالبہ کیا۔ادھرجموں میں پرائیویٹ کمپنی کیلئے ایک بینک کی حفاظت پرمامور سینکڑوں سیکورٹی گارڈوں اور سابق فوجیوں نے ان کی تنخواہوں میں بغیر پیشگی نوٹس دیئے کٹوتی کرنے کے خلاف احتجاج کیا۔بینک کے ATMمشینوں،نقدی سے لدی گاڑیوں اور بینک شاخوں کی حفاظت کررہے سیکورٹی اہلکار جموں کشمیر بینک کے زونل دفترکے سامنے جمع ہوئے اور احتجاج کرتے ہوئے لیفٹینٹ گورنر سے مطالبہ کیا کہ وہ مداخلت کرکے بینک منیجمنٹ کی طرف سے انہیں معقول مشاہیرہ دینے کو یقینی بنائیں۔احتجاج پر بیٹھیایک سیکورٹی گارڈ بلبیر سنگھ نے کہا کہ 2000سے2500روپے تک کی تنخواہوں میں کٹوتی ان کیلئے ناقابل قبول ہے۔