لولاب میں شادمانی اورخوشی کاماحول

لولاب (کپوارہ)// وادی لولاب کی ایک یتیم بچی سمیت 4طلاب کووادی کے مختلف میڈیکل کالجوں میں داخلہ ملاہے، جس کے بعد پورے لولاب میں خوشی کی لہر دوڑ گئی اور لوگوں کے چہروں پر رونق لوٹ آئی ۔ اتوار کو نیٹامتحان میں کامیاب ہوئے امیدوارو ں کو جب وادی کے مختلف میڈیکل کالجو ںمیں داخلہ کی منظوری مل گئی تو ان کے گھروں میں ایک بار پھر خوشی لوٹ آئی۔آمنہ نامی ایک یتیم بچی جس کاایم  بی بی ایس میں داخلہ ہواہے،نے کہا کہ ابتدائی تعلیم میں نے لال پورہ کے النور پبلک سکول میںحاصل کی اور بعد میں سرکاری سکولوں میں بھی اپنی تعلیم حاصل کی ۔آمنہ کا کہنا ہے کہ مجھے  ڈاکٹر بننے کا شوق پہلے سے ہی تھا لیکن سوچتی تھی کہ ایسا کبھی ممکن بھی ہوجائے گا  یانہیں۔آمنہ نے کہاکہ آج جب میرا ایم بی بی ایس کا داخلہ گورنمنٹ میڈیکل کالج سرینگر میں ہوا تو میں اپنے رب کا شکر ادا کیا جس نے مجھے اس مقام پر پہنچایا ۔عاقب احمد بٹ جس کا والد عبد الاحد بٹ مزدور ی کر کے اپنا گھر چلاتا ہے، بھی نیٹ امتحان میں کامیاب ہوگیا اور ایم بی بی ایس کی ڈگری حاصل کرنے کی جگہ بنا لی ۔عاقب نے غربت کے باجود آٹھویں جماعت تک النور پبلک سکول لال پورہ میں تعلیم حاصل کی، اس کے بعد ہائر سکینڈری سکول لال پورہ میں داخلہ لیا اور ڈاکٹری کی ڈگری حاصل کرنے کے لئے سکمز میں جگہ بنا لی۔شاہد فاروق بٹ جو لال پورہ کے ایک متوسط گھرانے کا چشم و چراغ ہے، نے سخت محنت کے بعد قومی اہلیت داخلہ امتحان پاس کیا اور آج ایم بی بی ایس کی ڈگری حاصل کرنے کے لئے گورنمنٹ میڈیکل کالج سرینگر میں جگہ بنا لی ۔ندیم السلام شاہ جو لال پورہ سے ہی تعلق رکھتا ہے ،نے بھی امتحان میںکامیابی پا کر  ایم بی بی ایس میں جگہ بنا لی اور ان کا داخلہ جی ایم سی بارہ مولہ میں ہوا ۔تینو ں کامیاب امیدوارو ں کا کہنا ہے کہ ہر شخص کی خواہش ہوتی ہے کہ وہ مستقبل میں ایک کامیاب انسان بن جائے اور کامیابی و کامرانی اور سرفرازی اس کے مقدر بن جائے۔ اس کے لئے خود اعتمادی ضروری ہے اس لئے اگر ہم کامیابی چاہتے ہیں اور اپنی منزل پانا چاہتے ہیں اور اپنے ہدف کو حاصل کرنا چاہتے ہیں ،تو استقلال ،ثابت قدمی اور خود اعتمادی کو اپنے اندر پیدا کرنا ہے ۔