لاپتہ طالبعلم احتشام جنگجوبن گیا؟

 سرینگر +اننت ناگ// شاردھا یونیورسٹی گریٹر نوئیڈا سے لاپتہ ہونے والے خانیارکے طالب علم نے مبینہ طور پر ہتھیار اٹھائے ہیں۔جبکہ آرونی بجبہاڑہ سے بھی ایک طالب علم جنگجوئوں کی صف میں شامل ہوگیا ہے۔اس دوران پولیس نے ہندوارہ میں پلوامہ کے ایک لاپتہ نوجوان، جس نے ہتھیار اٹھائے تھے، کو گرفتار کیا ہے۔اُترپردیش کے شہرگریٹرنوئیڈامیں واقع شاردھایونیورسٹی میںMedical  amagning  Technology  شعبہ میں فسٹ ائر طالب علم خانیارعلاقہ سے تعلق رکھنے والے طالبعلم احتشام بلال کی بندوق ہاتھ میں لئے ایک تصویر اور اسکا آڈیو بیان سوشل میڈیا پر وائرل ہوئے ہیں ۔4،اکتوبرکو شاردھایونیورسٹی واقع گریٹرنوئیڈامیںبھارتی اور افغانی طلباء کے درمیان جھگڑا ہوا تھا جس کے بعد احتشام پر طلباء کے ایک گروپ نے حملہ کر کے اسے زخمی کیا تھا، اور اسے اسپتال میں بھی داخل کرنا پڑا تھا۔مقامی پولیس نے اس واقعے کے حوالے سے کیس درج کرکے ابھی تحقیقات ہی شروع کی تھی کہ زخمی کشمیری طالبعلم احتشام بلال پُراسرارطورپرلاپتہ ہوگیا۔احتشام کے والدین نے گزشتہ روز پریس کالونی میں بازیابی کیلئے احتجاج بھی کیا تھا ۔پولیس ابھی احتشام کی مبینہ طور پر جنگجوئوں کے ساتھ شامل ہونے کی تحقیقات کررہی ہے۔ادھر اننت ناگ سے تعلق رکھنے والے ایک طالب علم نے بھی مبینہ طور پر جنگجوئوں کی صفوں میں شمولیت اختیار کی ہے ۔نصیر گلزار چاڈو ولد گلزار احمد چاڈو ساکن آرونی بجہباڑہ کی تصویر سماجی رابطہ گاہوں پر وائرل ہوگئی ہے ،جس میں اسے اے کے47 رائفل ہاتھوں میں تھامے دیکھا جاسکتا ہے ۔مذکورہ نوجوان تین روز قبل گھر سے نماز کے لئے نکلا اور جمعہ کو اسکی تصویر وائرل ہوگئی ۔نوجوان 12ویں جماعت میں زیر تعلیم رہا اور اس نے مبینہ طور عسکری تنظیم لشکر طیبہ میں شمولیت اختیار کی ہے ۔قابل ذکر ہے کہ آرونی میں پچھلے ہفتہ ایک معرکہ آرائی میں تین جنگجو جاں بحق ہوئے تھے جن میں آرونی کا بھی ایک جنگجو تھا۔اس دوران رہمو پلوامہ  میں 3ستمبر سے لاپتہ ہوئے نوجوان، جس نے عسکریت کا راستہ اپنایا تھا، کو گرفتار کیا گیا۔فورسز نے چھوٹی پورہ ہندوارہ کراسنگ کے نزدیک  گاڑیوں کی تلاشی کارروائی کے دوران سجاد احمد ڈار ولد عبدالحمید ڈار کوپستول اور دو گرینیڈ وں سمیت گرفتار کیا۔ پولیس ترجمان نے بتایا کہ سجاد احمد ڈار 3ستمبر 2018کو گھر سے لاپتہ ہوگیاتھا اور اس سلسلے میں پولیس اسٹیشن راجپورہ میں گمشدگی کی رپورٹ بھی درج کی جاچکی ہے۔پولیس ترجمان نے بتایا کہ سجاد احمد حال ہی میں البدر نامی دہشت گرد تنظیم میں شامل ہوا تھا۔ اس سلسلے میں پولیس اسٹیشن ہندواڑہ میں کیس درج کرکے مزید تحقیقات شروع کی گئی ہے۔