قومی شاہراہ بھاری گاڑیو ں کے یکطرفہ ٹریفک کیلئے بحال

رام بن// جموں سری نگر قومی شاہراہ کو رام بن کے قریب مہاڑ میں چند دنوں تک بند رہنے کے بعد وادی کشمیر کے لئے بھاری گاڑیوں کی آمدورفت (ٹرکوں) کے لئے یک طرفہ طور پر بحال کر دیا گیا ہے۔ٹریفک حکام نے بتایا کہ سینکڑوں تیل، گیس، پیٹرول ڈیزل اور لوڈ کیرئیر (ٹرک) جو ضروری سامان لے کر جارہے تھے، بشمول مسافر لائٹ موٹر گاڑیاں ہفتے کے روز کشمیر کی طرف مہاڑلینڈ سلائیڈز کو عبور کر گئیں۔اس علاقے میں برف باری اور موسلا دھار بارش کی وجہ سے ہائی وے کو بھاری موٹر گاڑیوں کے لیے بند کر دیا گیا تھا جس کے بعد چندر کوٹ – رامسو سیکٹر کے درمیان مختلف مقامات پر لینڈ سلائیڈنگ شروع ہو گئی تھی جس میں رام بن کے قریب مہاڑکے مقام پر ایک بہت بڑا مٹی کا تودہ گرآیاتھا۔NHAI کی ٹھیکیدار کمپنیوں نے مہاڑ میں بار بار لینڈ سلائیڈنگ اور پتھراو¿ کے باوجود ہائی وے کو صاف کرنے کے لیے اپنے آدمیوں اور مشینری کو کام میں لگا دیا تھا اوربالآخر مہاڑ میں ہائی وے کو یک طرفہ بھاری گاڑیوں کی آمدورفت کے لیے بحال کر دیا گیا۔ٹریفک کنٹرول یونٹ نیشنل ہائی وے ادھم پور کے ایک اہلکار نے دعویٰ کیا کہ، ہم نے جموں سری نگر قومی شاہراہ پر کشمیر کی طرف (بھاری موٹر گاڑیوں) کی ٹریفک کو یک طرفہ نقل و حرکت کی اجازت دی ہے جو مہاڑمیں لینڈ سلائیڈنگ اور پتھرگرآنے کی وجہ سے بند کر دی گئی تھی۔دریں اثنا، محکمہ ٹریفک پولیس نے ایک ایڈوائزری جاری کی جس میں کہا گیا ہے کہ بہتر موسمی حالات اور سڑک کی بہتر حالات کے پیش نظر مسافر گاڑیوںکو اتوار کو جموں سری نگر نیشنل ہائی وے پر قاضی گنڈ بانہال سرنگ سے جموں کی طرف جانے کی اجازت ہوگی۔مسافرگاڑیوں کیلئے زیگ قاضی گنڈ سے صبح 11 بجے سے دوپہر 3 بجے تک کٹ آف کا وقت مقرر کیا گیا ہے۔کٹ آف ٹائم سے پہلے یا بعد میں کسی بھی گاڑی کو چلنے کی اجازت نہیں ہوگی۔ٹریفک کنٹرول یونٹ سری نگر زیگ قاضی گنڈ سے ٹریفک کو جاری کرنے سے پہلے TCU رام بن کے ساتھ رابطہ کرے گا۔
 
 

بونجواہ سڑک گاڑیوں کی آمدورفت کےلئے بحال 

 عاصف بٹ 
کشتواڑ//حالیہ دنوں ہوئی بھاری برف باری کے بعد دوندی بونجواہ سڑک کو سنیچر کو مکمل طور پر بحال کردیا گیا ہے اور بدھر کیتھر تک گاڑیوں کی آمدورفت بحال ہوسکی ۔تفصیلات کے مطابق کشتواڑ ضلع کا30000کے قریب آبادی پر مشتمل دورافتادہ علاقہ بونجواہ دیگر علاقوں سے مکمل طور پر کٹ گیا تھا اور جمی ہوئی سطح اور بھاری برف باری کی وجہ سے برف کو صاف کرنے میں سات روز سے زائد عرصہ لگ گیا۔ جبکہ اس علاقہ کو جوڑنے والی سڑک میں صرف 15 کلومیٹر بلیک ٹاپ ہے اور باقی پوری سطح پر بہت گڑھے اور کیچڑ ہے جسے اسکی بحالی میں کئی دن کا مزید وقت لگا۔علاقہ بونجواہ کے ایک مقامی شخص نے بتایا کہ متعلقہ محکمے نے اس کام کو مقررہ مدت میں انجام دیا ہے اور بونجواہ سڑک پر گاڑیوں کو چلانے کے لیے ہر ممکن سہولت فراہم کی ہے جبکہ یہ علاقہ اونچائی پر واقع ہے جہاں درجہ حررات منفی سے بھی نیچے چلاجاتا ہے جسکی وجہ سے سڑک کی سطح مکمل طور پر منجمد ہو جاتی ہے لیکن محکمہ نے عام لوگوں کے مفاد میں کام کیا۔ پتنازی کیتھر سڑک پر بھی برف ہٹائی گئی جبکہ 250 میٹر سڑک جہاں بدترین سطح کی وجہ سے مشین کے لیے برف صاف کرنا ناممکن تھا۔مقامی لوگوں نے پی ایم جی ایس وائی محکمہ و ٹھیکیدارکے کردار کو سراہا۔