قومی جمہوری اتحادچنائو ہارنے کیلئے تیار:راہل

یواین آئی

پٹنہ// کانگریس کے سابق قومی صدر راہل گاندھی نے دعویٰ کیا کہ لوک سبھا انتخابات کے بعد نریندر مودی دوبارہ وزیر اعظم (پی ایم) نہیں بننے والے ہیں اور تب انفورسمنٹ ڈائریکٹوریٹ (ای ڈی) ان سے اڈا نی کے ساتھ لین دین پر پوچھ گچھ کرے گا ۔پیر کو پٹنہ صاحب لوک سبھا حلقہ کے بختیار پور میں انڈیا الائنس کے امیدوار کی حمایت میں ایک جلسہ عام سے خطاب کرتے ہوئے گاندھی نے دعویٰ کیا کہ مودی دوبارہ وزیر اعظم نہیں بنیں گے کیونکہ بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) کی قیادت والی قومی جمہوری اتحاد (این ڈی اے) لوک سبھا الیکشن ہارنے کے لیے پوری طرح تیار ہے۔ انہوں نے کہا کہ لوک سبھا انتخابات کے بعد ای ڈی مودی سے اڈانی کے ساتھ ان کے معاملات کے بارے میں پوچھ گچھ کرے گا۔کانگریس لیڈر نے کہا، ’’حالیہ انٹرویوز کی ایک سیریز میں مودی نے دعویٰ کیا تھا کہ وہ کوئی حیاتیاتی ہستی نہیں ہیں بلکہ بھگوان کے دوت ہیں اور تمام فیصلے وہ بھگوان کے الہام سے کر رہے ہیں۔‘‘ لوک سبھا انتخابات کے بعد اڈانی کے ساتھ ان کے معاملات کے بارے میں ای ڈی کی پوچھ گچھ سے بچنے کے لئے مودی کہہ رہے ہیں، “مجھے نہیں پتہ کیونکہ فیصلہ بھگوان کی مرضی کے مطابق کیا گیا تھا، نہ کہ میری خواہش کے مطابق۔” گاندھی نے کہا کہ اگر انڈیا الائنس اقتدار میں آتا ہے تو مرکزی حکومت کے مختلف محکموں میں 30 لاکھ خالی آسامیاں پْر کی جائیں گی۔ اسی طرح ایک سال میں ہر غریب کنبہ کی ایک خاتون رکن کے بینک اکاؤنٹ میں ایک لاکھ روپے جمع کرائے جائیں گے۔ انہوں نے مزید کہا کہ گریجویٹ نوجوانوں اور تکنیکی تعلیم مکمل کرنے والوں کو ایک سال کے لیے ایک لاکھ روپے دیے جائیں گے۔ نوجوانوں کے لیے یہ اسکیم ’’پہلی نوکری پکی‘‘ کے نام سے جانی جائے گی۔کانگریس کے لیڈر نے کہا کہ مہاتما گاندھی نیشنل رورل ایمپلائمنٹ گارنٹی (منریگا) کے تحت کام کرنے والوں کی اجرت کو بڑھا کر 400 روپے یومیہ کیا جائے گا۔ انہوں نے وعدہ کیا کہ کسانوں کو ان کی زرعی پیداوار کی خریداری پر قانونی گارنٹی دی جائے گی۔ گاندھی نے کہا کہ انڈیا اتحاد کے حق میں ایک مضبوط لہر بہار اور اتر پردیش میں نظر آرہی ہے۔ انہوں نے دعویٰ کیا کہ انڈیا اتحاد بہار کی تمام 40 لوک سبھا سیٹوں پر کامیابی حاصل کرے گا۔