قطعات

ہر پل فنا ہو جانا تقدیر مری
پوری ہوتی نہیں یوں تعمیر مری
کیا جانیے کیا حق میں ہے میرے بھی
کچھ بھی نہ چلی عشق میں تدبیر مری

اتنی نہ پلا کہ پارسا ہو جائے
نا آشنا دل بس آشنا ہو جائے
چھا جانے دے نشہ مدھم مدھم
یوں ابتدا ہی نہ انتہا ہو جائے

کل کیا ہونا ہے کسے معلوم اے دل
مت رکھ خود کو آج سے محروم اے دل
وہ ہے تو رکھ توّکل اس پہ ناداں
اِس ہستیٔ موہوم سے مغموم اے دل

توصیف شہریار
اسلام آباد، کشمیر

۔۔۔۔۔۔

دنیا کا ہر اک درد اُٹھایا تری خاطر
خونِ جگر بھی ہم نے جلایا تری خاطر
چھلنی ہوا ہے سینہ نشتر سے تمہارے
پرچم وفا کا دل میں سجایا تری خاطر

ہم رسمِ وفا کو سدا نبھاتے رہینگے
وہ جوروستم جو کریں، اُٹھاتے رہینگے
گر دل بھی ہمارا کبھی آئیگا تہہِ سنگ
ہر آہ کو پُھرتی سے پھر دباتے رہینگے

غلام نبی نیئر
کولگام، کشمیر،موبائل نمبر؛9596047612