قدرتی حسن سے مالا مال بدھل کے سیاحتی مقامات انتظامیہ کی نظروں سے اوجھل  | رابطہ سڑکیں و دیگر بنیادی ڈھانچے تعمیر کر کے سیاحوں کی آمد کو یقینی بنانے کا مطالبہ

سید زاہد
بدھل // جموں وکشمیر کے دیگر سیاحتی مقامات کی ہی طرح راجوری کے بدھل علاقہ میں بھی کئی ایسے دلفریب اور قدرتی حسن سے مالا مال علاقے موجود ہیں جہاں کی خوبصورتی کو دیکھنے کیلئے مقامی سطح پر سیاحوں کی ایک بڑی تعداد رجوع کرتی ہے لیکن ہر طرح کی بنیادی سہولیات کے فقدان کی وجہ سے مذکورہ مقامات کو سیاحتی نقشے پر نہیں لایا جاسکا ۔کوٹرنکہ سب ڈویژن کے بدھل کی خوبصورت وادیوں دلفریب منظر صبح کے وقت کے پہاڑیوں اور جھاڑیوں میں چڑیوں کا چہکنا آسمان پر صبح کے وقت کی بکھرہوئی سورج کی کرنوں کی لالی اور چاروں طرف سے پہاڑوں پر لالے کے پھولوں کے کھل کھلانا مستوں کی طرح بادل کے ٹکڑوں کا پہاڑوں سے ادھر ادھر جاناوغیرہ جہاں مقامی سطح پر انتہائی کوخوبصورت منظر پیش کرتا ہے وہائیں کئی ایک ایسے میدان اور پہاڑی سلسلے موجود ہیں جو قدرتی خوبصورتی کی وجہ سے اپنی مثال آپ ہیں ۔ لوگوں نے محکمہ سیاحت اور مقامی انتظامیہ کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہاکہ خطہ پیر پنچال کے مقامی خوبصورت علاقوں کو سیاحتی نقشے پر لانے کیلئے ابھی تک بڑے پیمانے پر کوئی عملی قدم نہیں اٹھایا گیا جس کی وجہ سے جہاں مذکورہ مقامات کو سیاحتی نقشے پر معقول جگہ دستیاب نہیں ہے وہائیں مقامی نوجوانوں کو روز گار کے موقعے بھی دستیاب نہیں ہیں ۔مقامی لوگوں نے بتایا کہ بدھل کے خوبصورت مقامات بالخصوص پہاڑی علاقوں میں وسیع میدان اور قدرتی جھیلیں موجود ہیں تاہم مذکورہ خوبصورت ترین مقامات کو ابھی تک سیاحتی مقامات کی طرز پر بنانے کیلئے کوئی قدم نہیں اٹھایا گیا ہے ۔انہوں نے بتایا کہ مقامی نوجوانوں کی ایک بڑی تعداد سیر و تفریح کیلئے ان مقامات کا رخ کرتی ہے ۔انہوں نے کہاکہ ان مقامات پر نہ تو سڑکیں پہنچ سکی ہیں اور نہ ہی رات گزارنے کیلئے کوئی ڈھانچہ تعمیر کیا جاسکا ہے ۔غور طلب ہے کہ بدھل کے پہاڑی علاقوں میں کئی ایک ایسے قدرتی مقامات موجود ہیں جن کی اگر تعمیر وترقی کا عمل شروع کیا جائے تو وہ وادی کے سیاحتی مقامات جیسی شکل بھی اختیار کر سکتے ہیں ۔مقامی لوگوں نے مانگ کرتے ہوئے کہاکہ بدھل اور کوٹرنکہ سب ڈویژن کے قدرتی حسن سے مالا مال علاقوں کو جلدازجلد سیاحتی نقشے پر لانے کیلئے سڑکیں ودیگر بنیادی سہولیات فراہم کی جائیں تاکہ مقامی نوجوانوں کو روز گار مل سکے ۔