قبائلی آبادی کی فلاح بہبود

سری نگر// حکومت نے جاری سروے کی بنیاد پر بنیادی ڈھانچے کی ترقی ، صحت نگہداشت ، مویشیوں کی بہتری،آمدنی میں اِضافے اورسکل ڈیولپمنٹ پر توجہ دینے کے ساتھ قبائلی نقل مکانی کرنے والے آبادی کو سہولیات کی فراہمی کے لئے ایک عمل شروع کیا ہے بالخصوص گائوں کی سطح پر مجموعی طور پر قبائلی ترقی کے لئے انٹگریٹیڈ وِلیج ڈیولپمنٹ سکیم کے تحت منصوبہ بندی کا آغاز پہلے کیا جاچکا ہے۔سیکریٹری قبائلی اَمور ڈاکٹر شاہد اِقبال چودھری نے  ، محکمہ پشو و بھیڑ پالن کے چیف ڈائریکٹران سے ملاقات کی اور انہوں نے ان سے کہاکہ آمدنی پیدا کرنے والی یونٹ ،ملک وِلیج ، بھیڑمع قبائلی بہبود کے دیگر اقدامات کے علاوہ روزگار کے پروگرام ، نقل و حمل سہولیات کا قیام ، ویٹرنری ہیلتھ کیئر کو مضبوط بنانا ، موبائل کلینک / ہسپتال منصوبے کو حتمی شکل دی جائے ۔سیکرٹری قبائلی امور ڈاکٹر شاہد اِقبال چودھری نے محکموں سے کہا کہ وہ نقل مکانی کے راستوں پر رہائش کی تعمیر کے لئے ضروری مقامات کو حتمی شکل دینے ، آمدنی پیدا کرنے والے یونٹ کے لئے مستحقین کے اِنتخاب کا نوٹیفکیشن اور تخمینے کو حتمی شکل دینے کے لئے کوآرڈی نیشن قائم کریں۔ اُنہوں نے امسال فلیگ شپ سکیموں ، ہیلتھ کیئر انفراسٹرکچر کی تعمیر ، موبائل ویٹرنری ہسپتالوں اور محکمہ امور قبائیل کے ذریعے جاری دیگر اِقدامات کے بارے میں بھی تبادلہ خیال کیا۔ انہوں نے لائیو سٹاک پروڈکٹ مینجمنٹ کے علاوہ زائد 20,00 آمدنی پیدا کرنے والے یونٹ تشکیل دینے کی تجویز پر زور دیا۔ڈائریکٹر اینمل ہسبنڈری محکمہ کشمیر پورنما متل نے مِلک وِلیج کے لئے ایک مشترکہ ڈی پی آر ، موبائل ویٹرنری وین کی ضرورت، مِلک وِلیج سکیم میں پولٹری فارموں کو شامل کرنے کے علاوہ قبائلی علاقوں میں مشینری اور سازو سامان کو مستحکم بنانے میںمدد کی تجویز پیش کی۔ڈائریکٹر شیپ ہسبنڈری محکمہ کشمیر بشیر احمد خان نے ٹرانس ہیومنٹ وِلیج ، موبائل ویٹرنری کلینک میں خیموںکی فراہمی ، شیپ وِلیج ،معیار اور ویلیو ایڈید مصنوعات میں قبائلی نوجوانوں کے لئے معاونت سمیت منصوبوں کی تلاش کرنے تجویز پیش کی۔ڈائریکٹر اینمل ہسبنڈری محکمہ جموںویوک شرما نے آئی جی یوز کے لئے 50 فیصد استفادہ کرنے والے حصے کو محکمہ کے تعاون سے حاصل کرنے کے لئے مطالبہ کیا جس میں دیگر منصوبوں کے علاوہ قبائلی علاقوں میں ویٹرنری ہیلتھ کیئر انفراسٹرکچر کے اخراجات ، مرمت او ران کی اَپ گریڈیشن پر بھی توجہ دی جارہی ہے ۔اُنہوں نے ملک وِلیج اور ماڈل وِلیج میں ہونے والی مختلف سرگرمیوں کے بارے میں بھی تبادلہ خیال کیا۔ڈائریکٹر شیپ محکمہ جموں کرشن لال نے منتقلی کے 1500 قبائلی خاندانوں کی رہائش ، بجلی اور نقل و حمل کے لئے بیک اَپ سپورٹ فراہم کرنے کے لئے نوجوانوں کی تربیت ویٹرنری ڈسپنسریوں کی تعمیر ، موبائل کلینک کی فراہمی او رآمدنی پیدا کرنے کی سرگرمیوں میں کوریج کی تجویز پیش کی۔محکمہ قبائلی امورکے ڈائریکٹر مشیر مرزا نے نقل مکانی آبادی کے لئے مویشیوں کی ترقی اور انفراسٹرکچر سپورٹ پر خصوصی توجہ دینے کے ساتھ کنورجنس پلاننگ کے راستوں پر زور دیا۔ میٹنگ میں سیکرٹری ایڈوائزری بورڈ مختار چودھری ، محکموں کے جوائنٹ ڈائریکٹران ، منصوبہ بندی کے اَفسران اور دیگر شرکأ موجود تھے۔