قبائلی آبادی کی خاطر سمارٹ کارڈ کیلئے طریقوں کو حتمی شکل

 جموں//قبائلی اَمور محکمہ نے جموںوکشمیر پولیس ، محکمہ جنگلات اور سنسس آپریشن محکمے کے ساتھ مل کر نقل مکانی اور مختلف خدمات تک رَسائی کے دوران بغیر کسی پریشانی کے نقل وحمل کے لئے ٹرانس ہیومنٹ قبائلی کنبوں کو فراہم کئے جانے والے سمارٹ کارڈ کے طریقوں کو حتمی شکل دی۔سیکرٹری قبائلی اَمور ڈاکٹر شاہد اقبال چودھری نے سمارٹ کارڈوں کے ڈیزائن اور مواد کو حتمی شکل دینے کے لئے ایک میٹنگ کی صدارت کی۔نقلی مکانی کرنے والی آبادی کے سروے اور مختلف شعبوں میں منصوبہ بند اقدام کے بارے میں تفصیلی پرزنٹیشن دی گئی۔میٹنگ میں ڈائریکٹر سنسس آپریشنز جی پرسنا راما سوامی ، چیف کنزرویٹر فارسٹ سمیوئیل چنکیجا ، ڈائریکٹر قبائلی امور مشیر احمد مرزا، سیکرٹری ایڈوائزری بورڈ مختار احمد ، سپراِنٹنڈنٹ پولیس حفیظ اللہ ، جے ٹی ڈائریکٹر پلاننت شمع ان احمد اور دیگر سینئر اَفسران اور ممبران موجود تھے۔یوٹی سطح کمیٹی نے میٹنگ میں شرکت کی۔سمارٹ کارڈوں کا منصوبہ متعدد اِجازتوں کے نظام کو تبدیل کرنے ، تمام آرگنائزیشنوں اور ایجنسیوں کو دو سالہ عمودی منتقلی کے دوران ٹرانس ہیومنٹ کنبوں کی احسن اور بغیر پریشانی نقل و حمل کے لئے ایک متحد مرکزی ڈیٹا بیس پیش کرنے کا ہے۔ڈیموگرافک تفصیلات ، ٹرانزٹ روٹس ، شروع کرنے والی جگہ ، منزل اور دیگر اہم اعداد و شمار پر مشتمل چپ کے ساتھ ایمبیڈ ڈیہ سمارٹ کارڈز متعدد اجازتوں کے عمل کو ختم کریں گے۔ یہ کارڈز نقل مکانی کرنے والی آبادی کی مختلف سرکاری خدمات کے لئے بھی استعمال کئے جائیں گے اورمحکمہ کی جانب سے گذشتہ برس کئے گئے سروے کی بنیاد پر جاری کئے جائیں گے۔چیف کنزرویٹر فارسٹ سیموئیل چانکیجا نے اِس بات پر تبادلہ خیال کیا کہ اگر شیڈ ولڈ ٹرائب اور اوٹی ایف ڈی ایکٹ کے نفاذ کے پیش نظر محکمہ جنگلات بغیر پریشانی کے عمل کے لئے کوشش کر رہا ہے اور کارڈ جاری کرنے کے متعدد نکات تجویز کئے ہیں۔عمل کی نگرانی اورر ینج لینڈوں کے اِنتظام سے متعلق سروے کے لئے محکمہ جنگلات تک رَسائی بھی فراہم کی جائے گی۔محکمہ پولیس کی جانب سے متعلقہ تھانوں کی نقشہ سازی کے لئے دی گئی تجویز بھی اس عمل میں شامل تھی۔ تمام پولیس سٹیشنوں تک رسائی بھی فراہم کی جائے گی جس سے کنبوں کی ضرورت پڑنے پرڈیموگرافک تفصیلات کی رئیل ٹائم اپڈیٹ ہوسکے گی۔ کنبوں کی آسانی سے نقل و حمل کے لئے پولیس اور محکمہ جنگلات دونوں کے تمام ناکوں اور پوسٹوں کو اینڈرائیڈ ڈیوائسز اور کارڈ ریڈرز فراہم کئے جائیں گے۔ڈائرکٹرسنسس آپریشنز جے اینڈ کے نے محکمہ قبائلی امور کے ساتھ رابطہ کاری پر تبادلہ خیال کیا تاکہ مردم شماری میں تمام ڈھوکوں (اونچی زمینی چراگاہوں) کی کوریج کی جائے تاکہ کسی کنبہ یا ممبر کو لاپتہ ہونے سے بچایا جا سکے۔قبائلی امور محکمے میں ایک خودمختار ادارے کے طور پر قائم قبائلی تحقیقاتی ادارہ اس سلسلے میں مختلف منصوبوں کی تیاری کے لئے ہم آہنگی کرے گا۔ 10,000 سمارٹ کارڈوں کا ایک پائلٹ پروجیکٹ مارچ میں شروع کیا جائے گا جس کے بعد تقریباً ایک لاکھ نقل مکانی کرنے والے کنبوں کی کوریج کے لئے اقدامات کئے جائیں گے۔ مختلف سکیموں کے فوائد کے لئے آدھارلنکیج کو بھی فعال کیا جا رہا ہے۔