قانون کی لاٹھی کا استعمال الگ الگ کیوں؟

جموں//پیپلز کانفرنس چیئرمین سجاد غنی لون نے کہاہے کہ اگر سنگبازی کشمیر میں غلط ہے تو یہ جموں میں بھی غلط ہے اوراس کیخلاف یکساں قانونی اور انتظامی رد عمل ہوناچاہئے ۔ پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے سجاد لون نے کہا’’کشمیر میں جو غلط ہے اسے جموں میں برداشت نہیں کیاجاسکتا ، امن و قانون ریاستی انتظامیہ سے جڑاہے اور اسے اس بات کو یقینی بنانے کی ضرورت ہے کہ جموں میں ہجومی تشدد کیخلاف عدم برداشت کی پالیسی اپنائی جائے اور جو بھی اس میں ملوث ہیں ، انہیں فوری طور پر حراست میں لیکر سزادی جائے ‘‘۔ان کا مزید کہناتھا’’2016میں ،میں نے کھلے عام کشمیر میں سنگبازی کے خلاف بولا اور اب اسی چیز پر جموں میں اس کے خلاف بول رہاہوں ، میں کسی بھی قیمت پر اسے برداشت نہیں کرسکتا ، حکومت کو ہر جگہ ایک ہی لاٹھی کا استعمال کرنے کی ضرورت ہے‘‘۔جموں اور ملک کے دیگر حصوں میں کشمیریوں کے خلاف ہجومی تشدد کے واقعات کی مذمت کرتے ہوئے سجاد لون نے کہاکہ یہ واقعات کشمیریوں کے دکھ و آلام میں اضافہ کاسبب ہیں جو پہلے سے ہی پچھلی تین دہائیوں سے مشکلات کاشکار ہیں ۔ان کاکہناتھاکہ پہلے سے ہی پریشانیوں کاشکار کشمیریوں کو ہراساں کرنا شرمناک ہے اور جو بھی ایساکررہے ہیں یا اس کی پشت پناہی کررہے ہیں ، کے خلاف سختی سے نمٹاجاناچاہئے۔ جموں میں ملک دشمن نعرے بازی کے سوال کے جواب پر لون نے کہا’’ایسے لوگ تعداد میں دس سے بھی زائد نہیںہوسکتے جنہوں نے اشتعال انگیز نعرے بازی کی ہولیکن یہ کیسے فراموش کیاجاسکتاہے کہ 2500سے زائد جموں و کشمیر پولیس اہلکاروں، ان گنت سیاسی ورکروں اور فوجی اہلکار اورنگزیب نے ملک کی خاطر اپنی جان قربان کردی ،یہ تمام اسی ریاست کا حصہ تھے ،کوئی بھی شخص پورے طبقہ کو ایک ہی رنگ سے نہیں رنگ سکتاہے ،ہر ایک طبقہ میں شرارتی عناصر ہوتے ہیں لیکن طبقہ کے اچھے لوگوں کی قربانیوںکو فراموش نہیں کردیاجاناچاہئے ‘‘۔دیگر ریاستوں میں کشمیریوں کو تحفظ فراہم کرنے پر زور دیتے ہوئے لون نے کہا’’تمام ریاستی حکومتوں کی یہ ذمہ داری ہے کہ وہ کشمیری طلباء ، پروفیشنل اور متعلقہ ریاستوں میں رہ رہے خاندانوں کے تحفظ اور سلامتی کو یقینی بنائیں ،میں نے کئی ریاستوں کے حکام اور پولیس سے بات کی ہے اور کشمیری طلباء اور خاندانوں کو فول پروف سیکورٹی فراہم کرنے پر زور دیاہے‘‘۔سیکریٹریٹ ملازمین کی تشویش پر سجاد لون نے کہاکہ حکومت کو تمام شہریوں بشمول سرکاری ملازمین کی سلامتی کو یقینی بناناچاہئے اور ملازمین کو انتظامیہ کی طرف سے سیکورٹی فراہم کرناچاہئے اور اس قدر اقدامات کئے جائیں تاکہ کوئی بھی یہاں غیر محفوظ محسو س نہ کرے ۔اس دوران سجاد لون نے جموں میں کشمیری افراد سے ملاقات کی اورانہیں ہر ممکن مدد فراہم کرنے کا یقین دلایا۔