فئیر پرائس شاپس کی الاٹمنٹ ، ریگولیشن کی پالیسی پر تبادلہ خیال

جموں//لیفٹیننٹ گورنر کے مشیر فاروق خان نے  دیگر ریاستوں اور مرکز کے زیر انتظام علاقوں کے برابر فئیر پرائس شاپس ( ایف پی ایس ) کیلئے پالیسی بنانے کی ضرورت پر زور دیا تا کہ راشن الاٹمنٹ کے نظام میں مزید شفافیت لائی جا سکے ، اس کے علاوہ ایف پی ایس کی عملداری کو بہتر بنایا جا سکے ۔ مشیر نے یہ بات فوڈ ، سول سروسز اور کنزیومر افئیرز ( ایف سی ایس اینڈ سی اے ) ڈیپارٹمنٹ کی ایک میٹنگ کی صدارت کرتے ہوئے کہی جس میں نئی فئیر پرائس شاپس ( ایف پی ایس ) کھولنے اور اس کے بعد کے ضوابط کے سلسلے میں طریقہ کار پر تبادلہ خیال کیا گیا ۔ کمشنر سیکرٹری ایف سی ایس اینڈ سی اے زبیر احمد ، ڈائریکٹر ایف سی ایس اینڈ سی اے کشمیر ، ایف سی ایس اینڈ سی اے جموں کے سینئر افسران اور دیگر متعلقہ افراد نے ذاتی طور پر اور آن لائین موڈ کے ذریعے میٹنگ میں شرکت کی ۔ انہوں نے کہا کہ نئی پالیسی ٹارگٹڈ پبلک ڈسٹری بیوشن سسٹم ( کنٹرول ) آرڈر 2015 حکومت ہندکے اصولوں کو مدِ نظر رکھتے ہوئے جموں و کشمیر میں پی ڈی ایس کو ریگولیٹ کرنے اور مضبوط کرنے کیلئے ایک مضبوط قانونی طریقہ کار بھی فراہم کرے گی ۔ نئی پالیسی میں تصور کردہ راشن ڈیپو کی الاٹمنٹ کے حوالے سے مسائل پر بات چیت ہوئی ۔ یہ میٹنگ اسٹیک ہولڈرز ، خاص طور پر راشن ڈیلرز سے مختلف معلومات اور تجاویز حاصل کرنے کے پس منظر میں منعقد کی گئی تھی اور اس میں راشن کارڈ ہولڈرز کو موجودہ کیپ سے نئے ایف پی ایس کیلئے نظر ثانی شدہ حد تک بڑھانے پر تبادلہ خیال کیا گیا تھا ۔ مشیر نے اس مسئلے پر تبصرہ کرتے ہوئے تجویز پیش کی کہ ان علاقوں کیلئے خصوصی دفعات کو شامل کیا جا سکتا ہے جہاں کوئی پرائیویٹ شخص علاقے میں ایف پی ایس کھولنے کیلئے نہیں آ سکتا ۔ انہوں نے متعلقہ لوگوں سے کہا کہ وہ ان علاقوں کیلئے کچھ اصولوں میں لچک کا جائیزہ لیں جہاں پہاڑی علاقوں ، ندیوں وغیرہ جیسے طبعی رکاوٹیں ہیں ۔ انہوں نے کہا کہ نئی پالیسی پرانے راشن کی تقسیم کو بدل دے گی جس میں حکومت کے زیر انتظام راشن ڈیپو پر بہت کم انحصار ہے ۔ میٹنگ میں پالیسی کی دفعات جیسے لائسنسوں کا اجراء یا تجدید ، ضیاع اور اس سے نمٹنے کیلئے رہنما خطوط ، راشن ڈیلرز کو پیشگی کمیشن وغیرہ پر بھی تبادلہ خیال کیا گیا ۔