غزہ میں امداد بڑھانے کیلئے روزانہ فوجی وقفہ: اسرائیل

 یو این آئی

یروشلم//اسرائیلی فوج جنوبی غزہ کی ایک سڑک پر روزانہ ‘فوجی سرگرمیوں پر اسٹریٹجک وقفہ’ نافذ کرے گی تاکہ مزید انسانی امداد پہنچ سکے۔ آئی ڈی ایف نے ‘ایکس’ پر ایک پوسٹ میں واضح کیا کہ جنوبی غزہ کی پٹی میں کوئی جنگ بندی نہیں ہے اور رفح میں لڑائی جاری رہے گی۔مبینہ طور پر ہفتے کو شروع ہوا یہ وقفہ اگلے اطلاع تک مقامی وقت کے مطابق صبح 8 بجے سے شام 7 بجے تک رہے گا۔ اسرائیل ڈیفنس فورسز (آئی ڈی ایف) نے کہا کہ اتوار کا اعلان ‘اقوام متحدہ اور بین الاقوامی تنظیموں کے ساتھ اضافی متعلقہ بات چیت’ کے بعد سامنے آیا ہے۔وہ صرف اس راستے کو متاثر کریں گے جو غزہ کی کلیدی کیریم شالوم کراسنگ سے شمال کی طرف جاتا ہے۔اسرائیل غزہ میں انسانی بحران کو مزید بگڑنے سے روکنے کے لیے امریکہ سمیت اپنے اتحادیوں کی جانب سے مسلسل دباؤ میں ہے۔ بی بی سی نے بتایا کہ انسانی بنیادوں پر وقفے کا راستہ غزہ کے جنوب میں کیریم شالوم کراسنگ سے صلاح الدین روڈ تک جاتا ہے جو ایک مرکزی شاہراہ ہے اور پھر شمال میں خان یونس کے قصبے کے قریب یورپی ہسپتال تک جاتا ہے۔ایک ماہ سے بھی زیادہ عرصہ قبل اسرائیلی فوجیوں کے رفح میں داخل ہونے کے بعد سے مصر کے ساتھ رفح کراسنگ کے غزان کی طرف کنٹرول حاصل کرنے اور بہت سے لوگوں کو وہاں سے نکل جانے کا حکم دیٔے جانے کے بعد سینکڑوں ہزاروں لوگ رفح سے فرار ہو چکے ہیں رپورٹس کے مطابق جو کبھی امداد کے لیے داخلے کا مرکزی نقطہ تھا – تب سے بند کر دیا گیا ہے ۔اسرائیل کا کہنا ہے کہ رفح میں اس کی کارروائی حماس کو اس جگہ سے باہر کرنے کے ضروری ہے جسے وہ گروپ کا’آخری بڑا گڑھ’ کہتا ہے۔یہ جنگ 7 اکتوبر کو حماس کے اسرائیل پر حملے کے بعد شروع ہوئی، جس میں تقریباً 1200 افراد ہلاک اور 251 دیگر کو یرغمال بنا کر غزہ واپس لے گئے۔ اس ہفتے کے شروع میں حماس نے امریکی حمایت یافتہ منصوبے کو قبول کرنے سے انکار کر دیا تھا جس سے غزہ کیلئے انسانی امداد میں بہتری آسکتی ہے۔