غزلیات

جب بھی میں گمرہی سے ملتا ہوں
ایک تشنہ لبی سے ملتا ہوں
 
عین اسی وقت اندھیرا ہوتا ہے
جب بھی میں روشنی سے ملتا ہوں
 
لوگ شک کی نظر سے دیکھتے ہیں
جب بڑی سادگی سے ملتا ہوں 
 
مجھ سے ملنا اسے نہیں منظور 
اور میں روز اسی سے ملتا ہوں 
 
دشمنی خود سے کوئی خاص نہیں
بس یونہی بے رخی سے ملتا ہوں 
 
کتنے حیلوں حوالوں سے بلراجؔ
ایک نیلم پری سے ملتا ہوں 
 
بلراج ؔبخشی
 
۱۳/۳، عید گاہ روڈ ، آدرش کالونی، 
اُدہم پور- ۱۸۲۱۰۱(جموں کشمیر) 
موبائل نمبر؛09419339303
 
 
حق کی خاطر خدا کی خوشی کے لئے 
جینا مرنا ہمارا اُسی کے لئے
دل کسی کے لئے سر کسی کے لئے
بدنما داغ ہے زندگی کے لئے
دل تو مائل ہیں وابستگی کے لئے 
ہاتھ بڑھتے نہیں دوستی کے لئے
مر کے بھی لوگ رہتے ہیں زندہ مگر
یہ سعادت نہیں ہر کسی کے لئے
میرا قاتل مرا اپنا کردار ہے
کس کو الزام دوں خودکشی کے لئے
بال وپر کیلئے ہر بُلندی نشیب
ہر زمین آسماں بے پری کے لئے
 گُمرہی کیلئے کم ہزاروں برس
ایک پل بھی بہت آگہی کے لئے 
یہ اندھیرے نہ ہونگے چراغوں سے کم
دل جلائو یہاں روشنی کے لئے
مے کشو ! آئو آئو ہے درِ مے کدہ
شرط کوئی نہیں مے کشی کے لئے
شعر کہنا وحیدؔ اپنے بس کا نہیں
صرف لفظوں کی بازی گرمی کے لئے
 
وحید مسافر
رابطہ؛ باغات کنی پورہ،
موبائل نمبر؛9419064259
 
 
ننھے ننھے پودوں کے غم خوار ہوئے تھے
ہم ہی تھے جو شہرمیں سنگسار ہوئے تھے
 
تعبیر اپنے خواب کی کس کوملی یہاں
سب لوگ اپنے آپ میں فنکار ہوئے تھے
 
 اُلفت کی صورت سے خبردارکہاں تھے 
یوںہی توترے نام سب افکار ہوئے تھے
 
 ملتی جُلتی ہے دونوںکی خواہشیںپھر سے
برباد پچھلی بار کئی گھر بار ہوئے تھے
 
تھی ٹھیک ساری باتیں فکرو فہم کے ساتھ
پھر کیوں مرے اشعار سے بیزار ہوئے تھے
 
 واقف نہیںتھے کیاضیاءؔ کے مزاج سے  
تم بے سبب ہی اُسکے طرف دار ہوئے تھے
 
عذرابنت گلزار ضیاءؔ
طالبہ شعبہ اُردو کشمیر یونیورسٹی،سرینگر