غزلیات

اپنی نظروں میں بے نقاب ہوئے
ہم اسی واسطے خراب ہوئے
کیا اندھیرا ہی رات ہوتا ہے
نیند آئی نہ کوئی خواب ہوئے
ہم انہیں یوں سجائے رہتے ہیں
زخم جیسے کھلے گلاب ہوئے
زندگی کیسے جرم کی ہے سزا
کن سوالوں کا ہم جواب ہوئے
مہربانی بھی کچھ رہی اس کی
ظلم بھی ہم پہ بے حساب ہوئے
آج کل رات بھی ہے دن جیسی
اب ستارے بھی آفتاب ہوئے
ہر کسی سے تعلقات ترے
ہر کسی کے لیے عذاب ہوئے
ایک دن لا پتہ ہوا بلراجؔ
ایک دن لوگ کامیاب ہوئے
 
بلراجؔ بخشی
۱۳/۳، عید گاہ روڈ ، آدرش کالونی، اُدہم پور- ۱۸۲۱۰۱(جموں کشمیر) Mob: 09419339303
 
 
جب کسی مْفلس کو کھنڈر میں خزانہ مل گیا 
اقرباء سے دُور ہونے کا بہانہ مل گیا
پوری بستی میں فقط کچا تھا میرا ہی مکاں 
جس کی چھت میں اک پرندے کو ٹھکانہ مل گیا
میرے بچوں نے کباڑی کو جو دینا چاہی تھی 
مجھ کو اْس ردی میں تیرا خط پْرانا مل گیا
کھیلتے مٹی سے  پوتا دیکھ کر دادا کو بھی 
ایک ہی لمحے میں بچپن کا زمانہ مل گیا
عزم سے نکلا جو اپنے گھونسلے کو چھوڑ کر 
بس اْسی پنچھی کو اس دھرتی پہ دانہ مل گیا
تشنگی سے مار ہی دیتا مجھے ظالم سراب 
شْکر ہے صحرا میں اک کوّا سیانا مل گیا
آنکھ والے ڈھونڈھ پائے تھے نہ جس کو عمر بھر
زندگی کا کور چشموں کو نشانہ مل گیا
لفظ کا احسان کیا لیتی زباں اچھا ہوا 
اک لبِ خاموش میں سارا فسانہ مل گیا
لذتِ رزقِ خْدا اْس پر ہوئی تب آشکار 
ایک بھوکے شخص کو جس وقت کھانا مل گیا
 
پرویز مانوسؔ
نٹی پورہ سرینگر ،9419463487
 
 
 
جب سے مرے رقیب کا رستہ بدل گیا 
تب سے مرے نصیب کا نقشہ بدل گیا
شریں تھا کتنا اس کا  وہ اندازِ گفتگو 
دو چار سکے آئے تو  لہجہ بدل گیا 
کس کی زباں کھلے، ہو کس سے خبر مجھے
کیوں کر مرے حریف کا چہرہ بدل گیا
شرم و حیا بھی اپنی یہ  نیلام کر گیا
انسان اس زمانے کا کتنا بدل گیا
اْن کے بدلنے کا کوئی دکھ ہی نہیں مجھے
افسوس میرا اپنا ہی سایہ بدل گیا
جب سے بڑوں کی گھر سے حکومت چلی گئی
جنت  نما مکان کا   نقشہ بدل گیا
راہوں کی خاک چھانی بہت اس مقام تک 
"رہبر بدل گیا کبھی رستہ بدل گیا"
کہتا ہے اس کے جانے سے کچھ بھی نہیں ہوا
مہتابؔ تیرے دل کی جو دنیا بدل گیا
 
بشیر مہتابؔ
رابطہ؛رام بن ،9596955023
 
کسی بچپن کے خواب کا سا ہے
  روپ تیرا گْلاب کا سا ہے
عْمر گزری ہے تیرے کوچے میں
 بس نتیجہ سراب کا سا ہے
زندگی کی خموش راہوں میں
حالِ دل انقلاب کا سا ہے
میرا تیرا وجود محفل میں
بر زمیں آفتاب کا سا ہے
گر تْجھے جھوٹ سے کروں حاصل
 وہ گناہ بھی ثواب کا سا ہے
ذکر تیرا بہار کی آمد
شور ہر سو خطاب کا سا ہے
جام کی اب کِسے ضرورت ہے
آج موسم شراب کا سا ہے
موجؔتیرے اْداس چہرے پر
کوئی قِصّہ کتاب کا سا ہے
 
پردیپ سنگھ موجؔ 
ڈوڑہ، لیکچرر اردوگورنمنٹ ہائیر سکنڈری سکول گواڑی
موبائل نمبر؛9697910823
 
دل سوختہ تھا اپنا یہی حسب حال تھا
جیتے جی خوش کہاں تھے کہ جینا محال تھا
 
ـــــــــــکرنے گئے تھے ان سے تغافل کا ہم گلہ
لیکن انہیں بھی ہم سے عجب سا ملال تھا 
 
ہر اک ادا تھی پیاری کہ جاں سے عزیزتھی
پر جو ستم کیا تھا وہ جاںپروبال تھا
 
تقدیر اپنی بدلی نہ ان پر اثر ہوا 
ہم نے سناہے لوگو ں سے اچھا یہ سال تھا
 
وہ کیا سے کیا ہوئے ہیں مگر یاد آتے ہیں 
وہ دن کہ جب انہیں بھی میرا خیال تھا 
 
یہ سب شفق کا فیض ہے راشکؔ کہ مجھ میں یوں
پہلے کبھی نہ ایسا یہ مجھ میں کمال تھا 
 
راشکؔ اعظمی 
طالب علم شعبہ اردو کشمیر یونیورسٹی 
فون  نمبر ـ 796377969
 
 
جب کہیں ذکرِ یار ہوتا ہے
میرا دل بے قرار ہوتا ہے
تیری اُس برہمی پہ ہر لمحہ
خاکِ پا حال زار ہوتا ہے
ہم بھی مٹ جائینگے کسی پل میں
کون یاں پائیدار ہوتا ہے
آ دمی یوں اجل سے نالاں ہے
زندگی کا شکار ہوتا ہے
حسن کے ایک ہم نہیں مائل
حسن رشکِ بہار ہوتا ہے
مُجھ سے حق گوئی کا نہ وعدہ لے
یہ گُزر سوئے دار ہوتا ہیں
یہ جنوں جس قدر چھُپاتا ہوں
اُس قدر آشکار ہوتا ہے
ہم کبھی منتظر نہیں ہوتے
خود پہ کب اختیار ہوتا ہے
وہ نہ آئے ، نہ آسکے، پھر بھی
ہر گھڑی انتظار ہوتا ہے
دورِ ہجراں ہے کب تلک واجدؔ
اب بسر نا گوار ہوتا ہے 
 
واجدؔ عباس
نوگام  سوناواری،7006566516