عید گاہ علاقے میں پولیس ڈرائیور فائرنگ میں جاں بحق | بیروہ میں حادثاتی گولی چلنے سے کانسٹیبل زخمی

بلال فرقانی +ارشاد احمد
سرینگر+بڈگام//سرینگر کے ڈاکٹر علی جان روڈ پر عید گاہ علاقے میں ہفتے کی صبح مشتبہ ملی ٹینٹوں نے ایک پولیس اہلکار پر گولیاں چلائیں جس کے نتیجے میں وہ شدید زخمی ہوگیا اور بعد میں شام دیر گئے اسپتال میں دم توڑ بیٹھا۔پولیس نے بتایا کہ ڈاکٹر علی جان روڈ پر آیوا برج کے نزدیک ہفتے کی صبح  تقریباً 8بجکر 40منٹ پرملی ٹینٹوں نے موٹر سائیکل پر سوار پولیس اہلکار پر گولیاںچلائیں جس کے نتیجے میں وہ شدید زخمی ہوگیا۔زخمی اہلکار غلام حسن ڈار ولد غلام رسول ڈار ساکن دنوار عید گاہ ، محکمے میں ڈرائیور کی حیثیت سے تعینات تھا، جو اُس وقت ٹریفک پولیس کنٹرول روم اپنی ڈیوٹی پر جارہا تھا۔ زخمی پولیس اہلکار کو علاج و معالجے کے لئے فوری طور پر میڈیکل سائنسز صورہ منتقل کیا گیا، جہاں وہ شام دیر گئے زخموں کی تاب نہ لاکر دم توڑ بیٹھا۔واقعہ کے فوراً بعدسیکورٹی فورسز نے علاقے کو محاصرے میں لے کر حملہ آوروں کی تلاش شروع کی ۔حملے کے وقت وہ عام کپڑوں میں ملبوس تھا۔ زخمی کانسٹیبل کے بھائی نے میڈیا کو بتایا کہ غلام حسن سال2002سے محکمہ پولیس میں کام کررہا ہے۔ انہوں نے مزید بتایا کہ وہ بطور ڈائیور ٹریفک پولیس میںتعینات ہے ۔غلام حسن پر حملے کیخلاف علاقے میں شدید غم و غصہ پایا جارہا ہے اور مقامی لوگوں نے حملے کو گھناونا فعل قرار دیا ہے۔اس واقعہ کے بعد وہاں خواتین جمع ہوئیں اور زاروقطار رو نے لگیں ۔ادھر کھاگ بیروہ میں کانسٹیبل مظفر احمد بیلٹ نمبر765/BD  اس وقت زخمی ہوا جب دوران ڈیوٹی اسکے بندوق سے اتفاقاً گولی نکلی اور اسکے بائیں پیر میں جالگی۔اسے فوری طور پر اسپتال منتقل کردیا گیا جہاں اسکی حالت مستحکم ہے۔